உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    آزادی کے 75 سال کے موقع پر خلا میں بھی لہرائے گا ترنگا، ISRO کی جانب سے ہوگی پیش رفت

    خلا میں پرچم لہرانے کے وعدے کو پورا کرنے کی خاطر اس منصوبے کو کیا جائے گا پورا

    خلا میں پرچم لہرانے کے وعدے کو پورا کرنے کی خاطر اس منصوبے کو کیا جائے گا پورا

    ایس ایس ایل وی کا وزن تقریباً 120 ٹن ہے اور یہ 34 میٹر کی اونچائی پر کھڑے ہوکر خلا میں 500 کلوگرام تک لے جا سکتا ہے، لانچر کو اسرو کے اسٹیبل کے بہترین اور کم لاگت والے ورک ہارس میں سے ایک سمجھا جاتا ہے۔

    • Share this:
      15 اگست 2018 کو وزیر اعظم نریندر مودی (Narendra Modi) نے اعلان کیا تھا کہ ہندوستان کی آزادی کے 75 ویں سال کے دوران خلا میں ترنگا لہرایا جائے گا۔ خلا میں پرچم لہرانے کے وعدے کو پورا کرنے کی خاطر انڈین اسپیس ریسرچ آرگنائزیشن (ISRO) اپنا سب سے چھوٹا تجارتی راکٹ سمال سیٹلائٹ لانچ وہیکل (SSLV) 7 اگست کو لانچ کرے گا، جو قومی پرچم کو بھی خلا میں لے جائے گا۔

      وزیر اعظم مودی کا وعدہ تھا کہ قومی پرچم لے کر گگنیان (Gaganyaan) پر ایک انسان بردار خلائی مشن شروع کریں گے۔ تاہم اسرو کا ایس ایس ایل وی منصوبہ اپنے طور پر ایک کارنامہ ہے کیونکہ اسے 500 کلوگرام سے کم وزنی سیٹلائٹس اور پے لوڈز کو زمین کے نچلے مدار میں رکھنے کے لیے تیار کیا گیا تھا۔ سرکاری لانچ سری ہری کوٹا میں ستیش دھون خلائی مرکز (Satish Dhawan Space Centre) سے 7 اگست کی صبح 9:18 بجے شروع کیا جائے گا۔

      ہندوستان کی آزادی کے 75 ویں سال مکمل ہونے پر ’آزادی کا امرت مہوتسو‘ (Azaadi Ka Amrit Mahotsav) کا ملک بھر میں اہتمام کیا جارہا ہے۔ ایس ایس ایل وی کے پاس ’آزادی سیٹ‘ (AzaadiSAT) نامی ایک شریک مسافر سیٹلائٹ ہوگا جس میں 75 پے لوڈز ہوں گے جو ہندوستان بھر کے 75 دیہی سرکاری اسکولوں کی 750 نوجوان لڑکیوں کے ذریعہ بنائے گئے ہیں۔ اس پروجیکٹ کو خاص طور پر 75ویں یوم آزادی کی تقریبات کے لیے ڈیزائن کیا گیا ہے۔ تاکہ سائنسی مزاج کی حوصلہ افزائی کی جا سکے اور نوجوان لڑکیوں کے لیے خلائی تحقیق کو اپنے کیریئر کے طور پر منتخب کرنے کے مواقع پیدا ہوں۔

      یہ بھی پڑھیں:

      چیف جسٹس آف انڈیا این وی رمنا کے بعد اگلے CJI کون؟ جسٹس ادے امیش للت کی سفارش

      ایس ایس ایل وی کا وزن تقریباً 120 ٹن ہے اور یہ 34 میٹر کی اونچائی پر کھڑے ہوکر خلا میں 500 کلوگرام تک لے جا سکتا ہے، لانچر کو اسرو کے اسٹیبل کے بہترین اور کم لاگت والے ورک ہارس میں سے ایک سمجھا جاتا ہے۔

      یہ بھی پڑھیں:

      Covid-19: کورونا نے پھر بڑھائی تشویش، کیا آنے والی ہے نئی لہر؟ ماہرین نے کہی یہ بات

      اسرو کے چیئرمین ایس سوما ناتھ نے نئے سیٹلائٹ کو ایک گیم چینجرقرار دیا ہے جو منافع بخش اور چھوٹے سیٹلائٹ لانچ مارکیٹ میں ترقی کرنے کے ہندوستان کے خوابوں کو پورا کرے گا۔ یہ کم خرچ راکٹ، جسے طلب کے مطابق لانچ کیا جا سکتا ہے، بڑے پیمانے پر پیداوار کے لیے ڈیزائن کیا گیا ہے۔

      انھوں نے کہا کہ اپنے کامیاب لانچ کے ساتھ SSLV خلائی شعبے اور دیگر نجی ہندوستانی کمپنیوں کے درمیان خاص طور پر چھوٹے سیٹلائٹس کے لیے عالمی مارکیٹ میں مزید تعاون پیدا کرنے میں مدد کرے گا۔
      Published by:Mohammad Rahman Pasha
      First published: