ماب لنچنگ پر لگام لگانے کیلئے قوانین میں ہوگی تبدیلی ، ریاستوں سے طلب کئے گئے مشورے

وزیر داخلہ امت شاہ نے بتایا کہ حال ہی میں وزرائے اعلی اور گورنروں کو خط لکھا گیا ہے اور متعلقہ قوانین میں تبدیلی کرنے کےمشورے طلب کئے گئے ہیں ۔

Dec 04, 2019 10:17 PM IST | Updated on: Dec 04, 2019 10:17 PM IST
ماب لنچنگ پر لگام لگانے کیلئے قوانین میں ہوگی تبدیلی ، ریاستوں سے طلب کئے گئے مشورے

راجیہ سبھا میں وزیرداخلہ امت شاہ ۔ فائل فوٹو

مرکزی حکومت نے آج راجیہ سبھا میں کہا کہ ہجوم کے ذریعہ قتل (ماب لنچنگ) کے واقعات کو روکنے کے لئے تعزیرات ہند (آئی پی سی) اور مجرمانہ پینل کوڈ (سی آر پی سی ) سے متعلق دفعات میں تبدیلی کے لئے غور و خوض کیا جارہا ہے ۔ وزیر داخلہ امت شاہ نے ایوان میں وقفہ سوالات کے دوران ایک ضمنی سوال کے جواب میں بتایا کہ اس معاملے میں حال ہی میں وزرائے اعلی اور گورنروں کو خط لکھا گیا ہے اور متعلقہ قوانین میں تبدیلی کرنے کےمشورے طلب کئے گئے ہیں ۔ خط میں کہا گیا ہے کہ ماب لنچنگ کو روکنے کے لئے تجربہ کار افسران اور ماہرین سے صلاح ومشورہ کیا جانا چاہیے۔

انہوں نے بتایا کہ اس معاملے میں غو ر و خوض کرنے اور سفارشات دینے کے لئے حکومت نے وزیروں کا ایک گروپ تشکیل دیا ہے اور اس کی میٹنگ منعقد ہوچکی ہے۔ ماب لنچنگ سے متعلق معاملات میں آئی پی سی کی دفعہ 300 اور 302 کے تحت کارروائی کی جاتی ہے۔ اس کے تحت سزائے موت یاعمر قید کی کا التزام ہے ۔ وزیر داخلہ نےکہا کہ تشدد کی جھوٹی خبروں اور افواہوں پر نظر رکھی جاتی ہے اور ان سے نپٹنے کے کارگر طریقے استعمال کئے جاتے ہیں۔

Loading...

مودی کابینہ نے شہری ترمیمی بل کو دی منظوری

مرکزی حکومت نے شہری ترمیمی بل 2019 سمیت چھ اہم بلوں کو آج منظوری دے دی۔ وزیراعظم کی صدارت میں کابینہ کی میٹنگ میں یہ فیصلہ کیا گیا۔ وزیر اطلاعات پرکاش جاوڑیکر نے نامہ نگاروں کو بتایا کہ میٹنگ میں شہری ترمیمی بل اور درج ذیل ذات وقبائل کے ریزرویشن کو دس سال بڑھانے سے متعلق بل کو منظوری دے دی گئی ہے۔ یہ سوال کئے جانے پر کہ شہری ترمیمی بل میں کیا نئے التزام اور ترمیم شامل کئے گئے ہیں، جاوڑیکر نے کہاکہ بل کو پارلیمنٹ میں پیش کرنے کے بعد ہی اس کے بارے میں کچھ بتایا جاسکتا ہے۔ انہوں نےکہا کہ اس بل میں سبھی شہریوں کے مفادات کا خیال رکھا گیا ہے ، ایسے التزامات کئے گئے ہیں جن کا سبھی لوگ خیر مقدم کریں گے۔

یہ پوچھے جانے پر اس بل کو پارلیمنٹ میں کب پیش کیا جائے گا ، وزیر اطلاعات نے کہا کہ بل کو ایوان میں جمعرات یا جمعہ کو پیش کیا جاسکتا ہے ۔ لیکن اس کا فیصلہ پارلیمنٹ کرے گی ۔ یہ کہے جانے پر کہ اس بل کی آسام میں مخالفت شروع ہوگئی ہے ، جاوڑیکر نے کہا کہ بل کو پارلیمنٹ میں آنے دیجئے۔ لوگ اس کے التزامات جان کر اس کا خیر مقدم کریں گے۔

Loading...