لکھنو میں کملیش تیواری کے قتل کے بعد ہنگامہ ، سڑکوں پر اترے حامی ، بند کرائی دکانیں

ہندو مہا سبھا کے سابق صدر اور ہندو سماج پارٹی کے بانی کملیش تیواری کا لکھنو میں واقع اس کے گھرمیں قتل کردیا گیا ، جس کے بعد اس کے حامیوں اور دیگر مشتعل لوگوں نے احتجاج کیا ۔

Oct 18, 2019 09:59 PM IST | Updated on: Oct 18, 2019 09:59 PM IST
لکھنو میں کملیش تیواری کے قتل کے بعد ہنگامہ ، سڑکوں پر اترے حامی ، بند کرائی دکانیں

لکھنو میں کملیش تیواری کے قتل کے بعد ہنگامہ ، سڑکوں پر اترے حامی ، بند کرائی دکانیں

ہندو مہا سبھا کے سابق صدر اور ہندو سماج پارٹی کے بانی کملیش تیواری کا لکھنو میں واقع اس کے گھرمیں قتل کردیا گیا ، جس کے بعد اس کے حامیوں اور دیگر مشتعل لوگوں نے احتجاج کیا ۔ مشتعل لوگوں نے قتل کی مخالفت میں سڑک پر نکل کر احتجاج کیا اور اس دوران انہوں نے زبردستی دکانیں بھی بند کروائیں ۔ جائے واقعہ پر بھاری تعداد میں پولیس اہلکاروں کو تعینات کردیا گیا ہے ۔

بتادیں کہ کملیش تیواری کو پہلے گولی مارے جانے کی خبر سامنے آئی تھی ، لیکن ڈاکٹروں کا کہنا ہے کہ کملیش کو کسی دھاردار ہتھیار سے گلا ریت پر مارا گیا ہے ۔ ادھر پولیس نے جائے واقعہ سے ایک ریوالور بھی برآمد کی ہے ۔ پولیس کا کہنا ہے کہ اس قتل کو کملیش تیواری کے ہی کسی شناسا نے انجام دیا ہے ۔ واردات کو انجام دے کر ملزم فرار ہوگیا ۔ پولیس ملزم کی تلاش میں مصروف ہوگئی ہے ۔

Loading...

اطلاعات کے مطابق کملیش تیواری پر خورشید باغ میں واقع گھر پر ہی حملہ کیا گیا ۔ جائے واردات سے ریوالور برآمد ہونے کے بعد مانا جارہا تھا کہ کملیش کو قریب سے گولی ماری گئی ہے ۔ حالانکہ بعد میں ڈاکٹروں نے تصدیق کی کہ کسی دھاردار اسلحہ سے کملیش کا گلا ریت کر قتل کیا گیا ہے ۔ ابھی تک کی معلومات کے مطابق کملیش تیواری سے دو لوگ ملنے کیلئے آئے تھے ، جس میں ایک نے بھگوا کپڑا پہن رکھا تھا ۔

بتادیں کہ ہندو مہا سبھا کے صدر رہ چکے کملیش تیواری کو پیغمبر اسلام کے خلاف نازیبا تبصرہ کرنے کے معاملہ میں این ایس اے کے تحت گرفتار کرکے جیل بھیجا گیا تھا ۔ اس کے بعد 2017 اسمبلی انتخابات سے پہلے اس نے ہندو سماج پارٹی کی تشکیل کی تھی ۔

Loading...