உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Hajj GST: حج وعمرہ ٹور آپریٹرزکو جی ایس ٹی سے استثنیٰ قراردینے سے سپریم کورٹ کاانکار

    Youtube Video

    Supreme Court on Hajj GST:ٹور آپریٹرز حج پر جی ایس ٹی عائد کرنے کو چیلنج کر رہے ہیں، جو رجسٹرڈ پرائیویٹ ٹور آپریٹرز کی طرف سے فراہم کردہ خدمات اس بنیاد پر حاصل کرتے ہیں کہ آئین کے آرٹیکل 245 کے مطابق ملک کے باہر ہونے والی سرگرمیوں پر ٹیکس لگانے کا کوئی اختیار نہیں ہے ۔

    • Share this:
      Hajj GST:سپریم کورٹ نے جمعرات کو مختلف پرائیویٹ ٹور آپریٹروں کی جانب سے دائر درخواستوں (Petitions)کو خارج کر دیا جس میں کہا گیا تھا کہ وہ سعودی عرب جانے والے عازمین کو حج اور عمرہ گڈز اینڈ سروسز ٹیکس (جی ایس ٹی) سے استثنیٰ  قراردیاجائے۔ جسٹس اے ایم کھانولکر، جسٹس اے ایس اوکا اور جسٹس سی ٹی روی کمار( Justices A. M. Khanwilkar, A. S. Oka and C. T. Ravikumar)کی بنچ نے یہ فیصلہ سنایا۔ جسٹس اوکا نے کہا ۔’’ ہم نے استثنیٰ اور امتیازی سلوک دونوں کی بنیاد پر درخواستوں کو مسترد کر دیا ہے۔‘‘

      یہ بھی پڑھیں

      جسٹس اوکا نے کہا کہ ہندوستان سے باہر فراہم کی جانے والی خدمات کے لئے جی ایس ٹی کے نفاذ کےسلسلے میں درخواست گزاروں کی طرف سے اٹھائی گئی دلیل کا خیا ل رکھا گیا ہے کیونکہ یہ کسی اور بنچ کے سامنے زیرسماعت ہے۔ٹور آپریٹرز حج پر جی ایس ٹی عائد کرنے کو چیلنج کر رہے ہیں، جو رجسٹرڈ پرائیویٹ ٹور آپریٹرز کی طرف سے فراہم کردہ خدمات اس بنیاد پر حاصل کرتے ہیں کہ آئین کے آرٹیکل 245 کے مطابق ملک کے باہر ہونے والی سرگرمیوں پر ٹیکس لگانے کا کوئی اختیار نہیں ہے ۔ ان کی دلیل ہے کہ ہندوستان سے باہر استعمال ہونے والی اشیاء پر جی ایس ٹی نہیں لگایا جاسکتا۔

      ٹور آپریٹرز دلیل دی تھی کہ جس طرح عازمین حج کو حج کمیٹی کے ذریعے کوئی سروس ٹیکس ادا نہیں کرنا پڑتا، اسی طرح پرائیویٹ آپریٹر کے ذریعے حج کرنے والوں کو بھی جی ایس ٹی سے مستثنیٰ ہونا چاہیے۔عرضداشت گذار کے وکیل نے کورٹ کو بتا یا کہ حاجیوں کو مذہبی سرگرمیوں جیسے پرواز کے سفر، رہائش وغیرہ کے لیے فراہم کی جانےوالی خدمات پر جی ایس ٹی نہیں نافذ ہونا چاہیے ۔
      Published by:Mirzaghani Baig
      First published: