ہوم » نیوز » جنوبی ہندوستان

تلنگانہ میونسپل الیکشن کیلئے ڈالے گئے ووٹ ، 25 کو نتائج ، حیدرآباد کو ملیں گے سات نئے میئرس

نتائج ک اعلان کئے جانے کے بعد گریٹر حیدرآباد میونسپل کار پورشن کے پہلے سے موجود مئیر کے علاوہ شہر کے اطراف و مضافات میں نو تشکیل شدہ سات میونسپل کارپوریشنزس پر منتخب مئیرس حکمرانی کرتے نظر آئیں گے ۔

  • Share this:
تلنگانہ میونسپل الیکشن کیلئے ڈالے گئے ووٹ ، 25 کو نتائج ، حیدرآباد کو ملیں گے سات نئے میئرس
علامتی تصویر

تلنگانہ حکومت نے گذشتہ سال تیزی سے بڑھتے ہوئے گنجان شہر حیدرآباد کے مضافات کی بے ہنگم ترقی کو نئی سمت دینے کے لیے سات نئے کا رپوریشنز کا قیام عمل میں لایا ۔ 25 جنوری کو میونسپل انتخابات کے نتائج کے اعلان کے ساتھ ہی شہر میں مئیرس کی تعداد ایک سے بڑھ 8 ہو جائے گی ۔  تلنگانہ میں ریاست بھر میں میونسپل کے انتخابات منعقد ہوئے ، جن میں شہر حیدرآباد کے مضافات میں موجود اضلاع رنگا ریڈی اور ملکا جگری میں نئے تشکیل شدہ سات کارپوریشن بھی شامل ہیں ۔ 25 جنوری کو میونسپل الیکشن کے نتایج کا اعلان ہوگا ۔


اس طرح کہا جا سکتا ہے کہ  گریٹر حیدرآباد میونسپل کار پورشن کے پہلے سے موجود مئیر کے علاوہ شہر کے اطراف و مضافات میں نو تشکیل شدہ سات میونسپل کارپوریشنزس پر منتخب مئیرس حکمرانی کرتے نظر آئیں گے ۔ ریاستی حکومت کا ماننا ہے کہ بہتر نظم و نسق کے مقصد سے جس طرح دس اضلا ع پرمشتمل ریاست تلنگانہ کو تیتیس اضلا ع میں تقسیم کیا گیا ہے ، اسی طرح پنچایتوں اور عام میونسپلٹیز کے زیر انتظام شہر کے مضافاتی علاقوں کو اب کارپوریشنس میں تبدیل کیا گیا ہے ۔


ریاست بھر میں آج منعقدہ ایک سو بیس میونسپلٹیز کے ساتھ ہی ساتھ آٹھ میونسپل کارپوریشنز کے لیے الکشنس منعقد کیے گیے ، جن میں شہر حیدرآباد کے مضافات میں واقع نئے میونسپل کارپوریشنز بھی شامل ہیں ۔ حیدرآباد کے مضافاتی علاقوں میں تشکیل شدہ سات نئے کارپوریشنز میں شامل زیادہ تر علاقے اس سے پہلے پنچایتوں کے زیر نگرانی تھے ۔ شہرکے مضافاتی علاقوں میں واقع راجندر نگر کے ایم ایل اے پرکاش گوڈ نے نیے میونسپل کارپوریشنز کے قیام کو چیف منسٹر کی دور اندیشی قرار دیتے ہوئے کہا کہ ان علاقوں کو پہلے سے ذیادہ فنڈز حاصل ہوں گے ، جس سے یہاں بہتر سہولتیں دستیاب ہوں گی ۔


حیدرآباد کے مضافات میں تیزی سے بڑھتی ہوئی آبادی اور اس کی وجہ سے یہاں بسی ہوئی آبادیوں کو شدید بنیادی سہولتوں کی کمی کا سامنا ہے ۔ یہاں سے مقابلہ کرنے والے امیدوار بھی عوام کو یہی یقین دلا رہے ہیں کہ پنچا یت سے تبدیل شدہ کارپورشنز ان مضافاتی علاقوں کیلئے ترقی کی نوید لے کر آئیں گے۔ حالانکہ شہر حیدرآباد کے مضافات میں رہنے والے عوام پنچایتوں کے میونسپلز میں تبدیلی کو لے کر   سیاستدانوں کی طرح پرجوش نھیں ہیں ، لیکن انہیں کچھ نہ کچھ فرق کی توقع ضرور ہے ۔

تلنگانہ میں میونسپل انتخابات کے نتائج آنے کے بعد شہر حیدرآباد میں گریٹر حیدرآباد میونسپل کارپوریشن کے پہلے سے موجود مئیر کے علاوہ بندلہ گوڈہ جاگیر ، میر پیٹ ، بدںگ پیٹ ، بوڈ اوپل ،  پیر زادی گوڈا ، جواہر نگر اور نظام پیٹ کارپوریشنز کے نئے منتخبہ میئرس بھی اپنی ذمہ داری سنبھال لیں گے ۔ عوام چاہتے ہیں کہ نئے کارپوریٹرس اور مئیرس روایتی انداز اپناتے ہوئے اپنی ذاتی تشہیر کی بجائے اپنے اپنے علاقوں میں بنیادی سہولیات کی فراہمی پر زیادہ توجہ دیں ۔
First published: Jan 22, 2020 11:17 PM IST