کشمیرمیں دہشت گردوں نے پھر لگائے پوسٹرس، حکومت کی مدد کرنے والوں کو بتایا غدار

آرٹیکل 370 کے بیشترالتزام ہٹائے جانے اورریاست کومرکز کے زیرانتظام دو خطوں میں تقسیم کرنے کے مودی حکومت کے فیصلے کے بعد بھی جموں وکشمیرمیں امن وامان کا ماحول جیش محمد اورلشکرطیبہ جیسی تنظیموں کو راس نہیں آرہا ہے۔

Sep 06, 2019 12:07 AM IST | Updated on: Sep 06, 2019 12:11 AM IST
کشمیرمیں دہشت گردوں نے پھر لگائے پوسٹرس، حکومت کی مدد کرنے والوں کو بتایا غدار

کشمیرمیں دہشت گردوں نے پھر لگائے پوسٹرس

آرٹیکل 370 کے بیشترالتزام ہٹائے جانے اورریاست کومرکز کے زیرانتظام دو خطوں میں تقسیم کرنے کے مودی حکومت کے فیصلے کے بعد بھی جموں وکشمیرمیں امن وامان کا ماحول جیش محمد اورلشکرطیبہ جیسی تنظیموں کو راس نہیں آرہا ہے۔  لشکرطیبہ نے ایک بارپھر وادی میں دہشت اورتشدد پھیلانے کے مقصد سے پوسٹرس لگائے ہیں۔ ان پوسٹرس میں کہا گیا ہے کہ جوبھی کشمیری مودی حکومت کی حمایت کررہے ہیں وہ سبھی غدارہیں۔ لشکرطیبہ نے ایسا کرنے والوں کے لئے وارننگ بھی جاری کی ہے۔

دہشت گردتنظیم لشکرطیبہ نے پوسٹروں میں لکھا ہے کہ لوگ اپنے اپنے گھروں سے باہرنہ نکلیں، نہ ہی سڑک پرگاڑیاں دکھائی دیں۔ ایسا کہا گیا ہے کہ ایسا کرنے سے میڈیا میں غلط پیغام جارہا ہے کہ وادی میں سب کچھ معمول پرہے۔ لشکرطیبہ نے وارننگ دی ہے کہ جو بھی ایسا کرے گا، اس کے خلاف کارروائی بھی کی جائے گی۔ اس پوسٹرس کے ذریعہ کشمیری نوجوانوں کو ہندوستان کے کلاف بھڑکانے کی بھی کوشش کی گئی ہے۔

Loading...

کشمیرکے مختلف علاقوں سے ہٹائی جارہی ہیں پابندیاں کشمیرکے مختلف علاقوں سے ہٹائی جارہی ہیں پابندیاں

پاکستان کی حمایت میں لشکرطیبہ

پوسٹرمیں لشکرطیبہ پاکستان کے اقدامات کی حمایت کررہا ہے۔ اس پوسٹرمیں کہا گیا ہے کہ کشمیرمعاملہ اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل میں گیا ہے اوروہاں بھی اسے متنازعہ ہی بتایا گیا ہے۔ لشکرنے سرکاری ملازمین، ٹرانسپورٹروں، ریہڑی پٹری والوں سے کام کاج بند رکھنے کی اپیل کی ہے۔ پوسٹرمیں  کہا گیا ہے کہ سبھی لوگ احتجاج میں شامل ہوں اوربائیک، اسکوٹراورپرائیویٹ ٹرانسپورٹ کی گاڑیاں سڑکوں پرنہ نکلیں۔ ورنہ کارروائی ہوگی۔ لشکرنے واضح طورپر کہا ہے کہ جو بھی سڑک پرنکلے اس کی سیکورٹی کی ذمہ داری خود اس کی ہوگی۔

 

Loading...