ہوم » نیوز » وطن نامہ

سینٹرل ریلوے کے آرپی ایف نے141 بچوں کو ان کے والدین سے ملوایا، گلیمر کی دنیا میں اپنے خواب کو پورا کرنے والےکئی بچے شامل

سینٹرل ریلوے کے آر پی ایف نے141 بچوں کو ان کے والدین سے ملوایا۔ گلیمرکی دنیا میں اپنے خواب کو پورا کرنے والے کئی بچے شامل ہوئے۔

  • Share this:
سینٹرل ریلوے کے آرپی ایف نے141 بچوں کو ان کے والدین سے ملوایا، گلیمر کی دنیا میں اپنے خواب کو پورا کرنے والےکئی بچے شامل
سینٹرل ریلوے کے آرپی ایف نے141 بچوں کو ان کے والدین سے ملوایا

ممبئی: کورونا بیماری کے سبب پچھلے ایک سال میں ریلوے اسٹیشن پر مسافروں کی بھیڑ برائے نام رہ گئی ہے۔ کورونا کے سبب بہت کچھ بدل گیا ہے، لیکن بچوں کا گھر والوں سے ناراض ہوکر بڑے شہروں میں بھاگ جانا بدستور جاری ہے۔ سینٹرل ریلوے کے آر پی ایف نے پچھلے ایک سال میں 141 بچوں کو ریلوے اسٹیشنوں سے برآمد کرکے ان کے والدین کو سپرد کیا ہے۔

ان بچوں کو پکڑنے والے کچھ آر پی ایف جوانوں سے بات کرنے پر پتہ چلا کہ زیادہ تر بچے گھریلو تنازعہ کے سبب بھاگ جاتے ہیں۔ کچھ بچوں کو گلیمرکی دنیا میں کام کرنا ہے۔ اس لئے گھر چھوڑ کر بھاگ جاتے ہیں۔ سینٹرل ریلوے کے چیف پی آر او آفیسر شیواجی ستار نے بتایا کہ برآمد کئے 141 بچوں میں سے زیادہ تر اپنےگھر والوں سے بغیرکسی لڑائی جھگڑے کے یا پھرگھریلو تنازع کے سبب یا بہتر زندگی نیز گلیمر کی تلاش میں یہاں آئے تھے۔

  ڈانٹ کھا کر نابالغ گھر سے بھاگ گئی

ایک واقعہ میں 14 سال کی ایک نابالغ لڑکی ناگپاڑہ میں اپنے گھر سے والدین کے ڈاٹنے پر گھر چھوڑ کر چلی گئی۔ جب  وہ ڈری اور سہمی سائن ریلوے اسٹیشن کے پلیٹ فارم پر آدھی رات کے تقریباً بارہ بج کر 30 منٹ پرگھوم رہی تھی، تب آرپی ایف کانسٹبل ایس این شندے نے آر پی ایف انسپکٹر سندر سنگھ پرجا پتی کے ساتھ اس کو بچایا۔ اس کی کاونسلنگ کی گئی۔ بعد میں آر پی ایف افسروں کے پولیس کے ساتھ تال میل سے اس کے والدین تک پہنچایا گیا۔

 کاؤنسلنگ ہوتی ہے

پلیٹ فارم یا اسٹیشن کے حدود میں گھومتے ان بچوں کو آر پی ایف کے خصوصی ٹرینر ملازمین بچاتے ہیں۔ ان سے مل جل کر ان کے جذبات اور ان کے مسائل کو سمجھتے ہیں۔ ان کی کاؤنسلنگ کرتے ہیں۔ اس کے بعد ان کے گھر والوں سے رابطہ قائم کرایا جاتا ہے۔
Published by: Nisar Ahmad
First published: Apr 07, 2021 03:01 AM IST