ہوم » نیوز » مشرقی ہندوستان

Cyclonic Yaas: چندگھنٹوں میں ساحل ٹکرائیگا یاس طوفان، مغربی بنگال میں 2ہلاک،لاکھوں لوگوں کی منتقلی

بنگال میں طوفان سے ہونے والی تباہی کے دوارن دو افراد بجلی کی زد میں آکر ہلاک ہوگئے اور 80 کے قریب مکانات تباہ ہوگئے ہیں۔ ہندوستان کے محکمہ موسمیات (Meteorological Department) نے بتایا ہے کہ بدھ کے روز دوپہر تک اوڈیشہ کے چاندبلی دھامرا (Chandbali-Dhamra) بندرگاہ کے قریب ہی یاس طوفان ٹکرانے کا امکان ہے۔

  • Share this:
Cyclonic Yaas: چندگھنٹوں میں ساحل ٹکرائیگا یاس طوفان، مغربی بنگال میں 2ہلاک،لاکھوں لوگوں کی منتقلی
مغربی بنگال اور اڈیشہ میں یاس طوفان کا خطرہ

طوفان یاس (Cyclonic Yaas) نے منگل کی شام ’’انتہائی شدید طوفان‘‘ کی شدت اختیار کرلی اور ہندوستان کے مشرقی ساحل کی طرف زبردست تباہی مچائی۔ یہ طوفان اوڈیشہ اور مغربی بنگال میں ساحل سمندر سے ٹکرانے کے قریب ہے۔طوفان یاس (Cyclonic Yaas) سے ہونے والی تباہی و بربادی کے پیش نظر تقریبا 1.1 ملین نشیبی علاقوں سے نکال کر طوفان سے بچنے والے پناہ گاہوں (storm shelters) میں منتقل کردیا۔


  • ساحل سمندر کو ٹکرانے کا خطرہ:


بنگال میں طوفان سے ہونے والی تباہی کے دوارن دو افراد بجلی کی زد میں آکر ہلاک ہوگئے اور 80 کے قریب مکانات تباہ ہوگئے ہیں۔ ہندوستان کے محکمہ موسمیات (Meteorological Department) نے بتایا ہے کہ بدھ کے روز دوپہر تک اوڈیشہ کے چاندبلی دھامرا (Chandbali-Dhamra) بندرگاہ کے قریب ہی یاس طوفان ٹکرانے کا امکان ہے۔



آئی ایم ڈی کے ڈائریکٹر جنرل مروینجے موہپترا (Mrutyunjay Mohapatra) نے کہا ہے کہ ’’ساحل سمندر سے ٹکرانے (landfall ) کے دوران اس کی ہوا کی رفتار 155 کلومیٹر فی گھنٹہ فی ہے۔ جو کہ 185 کلومیٹر فی گھنٹہ کی رفتار سے ہو گی۔ اس کا اثر چاندبالی میں ساحل سے ٹکرانے سے پہلے اور اس کے بعد چھ گھنٹے تک ہوگا۔ بڑے درخت اور بجلی کے کھمبے اکھڑ سکتے ہیں۔ ممکنہ طور پر چاندبالی کو طوفان کی وجہ سے زیادہ سے زیادہ نقصان اٹھانا پڑ سکتا ہے‘‘۔

انہوں نے کہا کہ ’’حکام نے اوڈیشہ کے چار اضلاع جیگت سنگھ پور ، کیندرپارہ ، بھدرک اور بالاسور کو ترجیح دی ہے - امکان ہے کہ یہ یاس کے سب سے زیادہ اثر کا شکار رہیں گے۔ ساحل سے ٹکرانے کے بعد بھی یاس طوفان کی شدت کو اپنے تخمینے سے قبل تقریبا 12 سے 18 گھنٹوں تک برقرار رکھے گا‘‘۔

  • ساحلی اضلاع شدید متاثر:


اوڈیشہ کو نو بڑے دنوں میں ملک میں آنے والے دوسرے بڑے طوفان کا زیادہ سے زیادہ نقصان اٹھانا متوقع ہے۔ طوفان توک تائی(Cyclone Tauktae) نے گذشتہ ہفتے ہندوستان کے مغربی ساحل پر دھاوا بولا تھا - اس کا کچھ اثر مغربی بنگال پر پڑا ہے، بنیادی طور پر طوفان اور بارش سے ساحلی اضلاع شدید متاثر ہیں۔

اوڈیشہ کے وزیر اعلی نوین پٹنائک (Naveen Patnaik) نے کہا ہے کہ ’’ہر زندگی قیمتی ہے، اس طرح زندگی کی حفاظت کے لئے ہر ممکن اقدامات اٹھائے جائیں۔ طوفانی موسم اور گرج ہواؤں سے جہاز رانی جہازوں اور ماہی گیری کے کاموں کو متاثر ہونے کا امکان ہے۔

  • طوفان سے متعلق پناہ گاہوں میں متاثرین کی منتقلی:


اوڈیشہ کے خصوصی ریلیف کمشنر پردیپ جینا (Pradip Jena ) نے بتایا کہ 15 اضلاع میں 210,621 افراد کو طوفان سے متعلق پناہ گاہوں میں منتقل کیا گیا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ 6,900 طوفان مراکز استعمال کے لیے تیار ہیں جہاں 7.50 لاکھ افراد کو رہائش فراہم کی جاسکتی ہے۔

جینا نے بتایا کہ 710 ڈیزل جنریٹر، 813 ٹینکر اور 10000 سرکاری ملازمین کو ساحلی اضلاع میں روانہ کیا گیا ہے۔ توقع ہے کہ منگل کی رات تک مزید 2 ہزار کارکنان اپنے مقامات پر پہنچ جائیں گے۔ کم از کم 4000 امدادی اہلکار تعینات کردیئے گئے ہیں۔

مغربی بنگال کی وزیر اعلی ممتا بنرجی (Mamata Banerjee ) نے بتایا کہ بنگال میں ہوگلی اور شمالی 24 پرگنا اضلاع میں طوفانی کے دوران دو افراد بجلی کا نشانہ بن گئے اور 80 مکانات کو نقصان پہنچا۔

انھوں نے کہا کہ ’’یہ غیر متوقع تھا۔ طوفان نے چنسورہ میں تباہی مچا دی، جس سے جزوی طور پر 40 مکانات کو نقصان پہنچا۔ دو افراد کو موت کے گھاٹ اتار دیا گیا۔ شمالی 24 پرگنا ضلع کے ہلیسہار میں طوفان ایک منٹ سے تھوڑا دیر تک جاری رہا، جس سے 40 مکانات متاثر ہوئے اور پانچ افراد زخمی ہوئے۔ ریاست نے تقریبا 900,000 افراد محفوظ مقامات پر پہنچادیا ہے۔

  • تیل اور گیس کی تنصیبات پر خطرات کے بادل:


تیل اور گیس کی تنصیبات پر طوفان کے اثرات کو کم کرنے کے لئے ہنگامی صورتحال کا ایک بڑا منصوبہ تیار کیا گیا۔ اوڈیشہ کے ساحل پر دھامرا اور پیراڈیپ میں دو بڑی بندرگاہیں اور پیراڈیپ میں ایک آئل ریفائنری ہے۔ مغربی بنگال میں ہلدیہ میں ایک اہم بندرگاہ ہے۔

  • امدادی اور بچاؤ کاموں کی تیز رفتاری:


نیشنل ڈیزاسٹر ریسپانس فورس (National Disaster Response Force) فورس نے امدادی اور بچاؤ کاموں کے لئے اپنی ٹیموں کی سب سے زیادہ تعداد 113 رکھی ہے۔ این ڈی آر ایف کے ترجمان نے بتایا کہ پچیس ٹیمیں اوڈیشہ کے لئے اور 45 کو مغربی بنگال کے لئے روانہ کیا گیا ہے۔ وہیں آندھرا پردیش ، تمل ناڈو ، جھارکھنڈ اور جزائر انڈمان اور نیکوبار کے لئے ٹیمیں روانہ کی گئی ہے۔

بہار کے وزیر اعلی نتیش کمار نے ایک جائزہ اجلاس منعقد کیا اور عہدیداروں کو تمام انتظامات پہلے سے کرنے کی ہدایت کی۔ انہوں نے عہدیداروں کو ہدایت کی کہ بجلی کی بندش کی صورت میں اسپتالوں ، سرکاری کے ساتھ ساتھ نجی میں بھی متبادل انتظامات کریں۔

  • آندھرا پردیش تک طوفان کی آہٹ:


انتظامات کا جائزہ لینے کے لئے آندھرا پردیش کے چیف سکریٹری آدتیہ ناتھ داس نے سریکولم ضلع کا دورہ کیا۔آزاد ماہرین نے خبردار کیا ہے کہ بحیرہ عرب اور خلیج بنگال دونوں اس سال غیر معمولی طور پر گرم ہیں ، جس سے وہ طاقتور طوفانوں کی ترقی کے لئے سازگار ہیں۔
Published by: Mohammad Rahman Pasha
First published: May 26, 2021 09:20 AM IST