ہوم » نیوز » جنوبی ہندوستان

معذوروں کے چہروں پر مسکراہٹ لانے کی کوشش، منتخب افراد میں موٹر سائیکلیں تقسیم

سابق مرکزی وزیر کے رحمن خان کی کوشش سے شہر کے 19 معذور افراد کو موٹر سائیکل کا تحفہ ملا ہے۔ اس سہولت کے ملنے کے بعد معذور افراد کے چہرے خوش سے کھل اٹھے۔ کیونکہ دو سال کے طویل انتظار کے بعد حکومت کی جانب سے انہیں یہ مدد حاصل ہوئی ہے۔

  • Share this:
معذوروں کے چہروں پر مسکراہٹ لانے کی کوشش، منتخب افراد میں موٹر سائیکلیں تقسیم
معذوروں کے چہروں پر مسکراہٹ لانے کی کوشش، منتخب افراد میں موٹر سائیکلیں تقسیم

بنگلورو: سابق مرکزی وزیر کے رحمن خان کی کوشش سے شہر کے 19 معذور افراد کو موٹر سائیکل کا تحفہ ملا ہے۔ اس سہولت کے ملنے کے بعد معذور افراد کے چہرے خوش سے کھل اٹھے۔ کیونکہ دو سال کے طویل انتظار کے بعد حکومت کی جانب سے انہیں یہ مدد حاصل ہوئی ہے۔ سال 2018 میں راجیہ سبھا کے رکن رہے کے رحمن خان نے اپنے ایم پی لیاڈ فنڈز میں جسمانی طور پر معذور افراد کی مدد کیلئے موٹر سائیکل فراہم کرنے کی پہل کی تھی۔ کے رحمن خان نے کہا کہ تکنیکی مسئلہ کی وجہ سے یہ کام اس وقت پورا نہیں ہو پایا۔ لیکن اب تاخیر سے ہی صحیح معذوروں کو انکا حق ملا ہے۔ کے رحمن خان نے کہا کہ ہر ایم پی اور ایم ایل اے کو حکومت کی جانب سے ترقیاتی فنڈز دئے جاتے ہیں۔ ترقیاتی فنڈز کا کئی مد میں استعمال ہوتا ہے۔ اس کے ذریعہ جسمانی طور پر معذور افراد کی مدد کی بھی گنجائش موجود ہے۔ انہوں نے کہا حکومت کی جانب سے معذور افراد کو سہولیات، مراعات فراہم کرنے کا کام ترجیحی بنیاد پر ہونا چاہئے۔


سابق مرکزی وزیر کے رحمن خان کی کوشش سے شہر کے 19 معذور افراد کو موٹر سائیکل کا تحفہ ملا ہے۔ اس سہولت کے ملنے کے بعد معذور افراد کے چہرے خوش سے کھل اٹھے۔
سابق مرکزی وزیر کے رحمن خان کی کوشش سے شہر کے 19 معذور افراد کو موٹر سائیکل کا تحفہ ملا ہے۔ اس سہولت کے ملنے کے بعد معذور افراد کے چہرے خوش سے کھل اٹھے۔


سابق مرکزی وزیر برائے اقلیتی امور کے رحمن خان نے کہا کہ سماج میں آنکھوں، ہاتھوں، پیروں سے محروم افراد ہوں یا پھر قوت سماعت یا ذہنی طور پر کمزور افراد، ان کی مدد کرنا سماج اور حکومت کی ایک بڑی  ذمہ داری ہے۔ اگر ان مجبوروں کو تمام تر سہولیات مل جائیں تو یہ افراد بھی ملک اور سماج کیلئے اثاثہ بن سکتے ہیں۔ ان افراد کی زندگیوں میں خوشحالی، چین و سکون آسکتا ہے۔  کے رحمن خان نے کہا کہ ہر عوامی نمائندے کو چاہئے کہ وہ اپنے اپنے حلقہ کے معذور افراد کا خیال رکھیں۔ حکومت کی تمام سہولیات ان افراد تک پہنچائیں۔   بنگلورو کی ماں این جی او نے مستحق معذور افراد کی نشاندہی کرتے ہوئے سابق مرکزی وزیر کے رحمن خان کو فہرست پیش کی تھی۔


سابق مرکزی وزیر برائے اقلیتی امور کے رحمن خان نے کہا کہ سماج میں آنکھوں، ہاتھوں، پیروں سے محروم افراد ہوں یا پھر قوت سماعت یا ذہنی طور پر کمزور افراد، ان کی مدد کرنا سماج اور حکومت کی ایک بڑی ذمہ داری ہے۔
سابق مرکزی وزیر برائے اقلیتی امور کے رحمن خان نے کہا کہ سماج میں آنکھوں، ہاتھوں، پیروں سے محروم افراد ہوں یا پھر قوت سماعت یا ذہنی طور پر کمزور افراد، ان کی مدد کرنا سماج اور حکومت کی ایک بڑی ذمہ داری ہے۔


حکومت کے گائڈ لائنس کے مطابق 19 معذور افراد میں موٹر سائیکل کی  تقسیم کا کام عمل میں آیا ہے۔ معذور افراد کو اس سہولت کے ملنے پر ماں این جی او کے صدر چاند پاشاہ نے خوشی کا اظہار کیا۔ انہوں نے کہا کہ مرکزی اور ریاستی حکومتوں کے تحت جسمانی اور ذہنی طور پر معذور افراد کیلئے کئی اسکیمیں موجود ہیں۔ سماجی تنظیموں کو چاہئے کہ وہ ان اسکیموں کو معذور افراد تک پہنچائیں۔ چاند پاشاہ نے کہا کہ بھاگ دوڑ کی زندگی میں عام طور لوگ معذوروں کا خیال نہیں رکھ پاتے، یا پھر انہیں نظر انداز کر دیتے ہیں لیکن این جی اوز اور  سماجی تنظیموں کو چاہئے کہ وہ اپنے اپنے علاقوں میں موجود معذور افراد کی نشاندہی کریں، انہیں اپنے طور پر مدد کریں اور ان تک حکومت کی مراعات اور سہولیات پہنچائیں۔ سماجی کارکن محمد منصور خان نے کہا کہ ضرورت مند اور معذور افراد کی مدد انسانیت کی ایک بڑی خدمت ہے۔ صحت مند سماج اور معاشرہ کی پہچان یہی ہے کہ وہ مجبوروں، معذوروں، یتیموں کے کام آئے۔
Published by: Nisar Ahmad
First published: Nov 25, 2020 12:11 AM IST