کملیش تیواری قتل کیس: 74 سی سی ٹی وی فوٹیج کامشاہدہ کے ذریعہ 24 گھنٹوں میں یوپی پولیس کوملی یہ کامیابی

لکھنؤ پولیس نے اتوار کے روز شہر ناکہ کے علاقے میں واقع ایک ہوٹل سے ملزمین کے خون میں ملا ہوئے بھگوا رنگ کے کپڑے برآمد کرلئے۔

Oct 20, 2019 03:07 PM IST | Updated on: Oct 20, 2019 03:07 PM IST
کملیش تیواری قتل کیس: 74 سی سی ٹی وی فوٹیج کامشاہدہ کے ذریعہ 24 گھنٹوں میں یوپی پولیس کوملی یہ کامیابی

ملزمین سی سی ٹی وی فوٹیج میں بھگوا کرتا زیب تن کئے نظر آرہے ہیں۔

لکھنؤپولیس، ہندو سماج پارٹی کے سابق صدر کملیش تیواری قتل کیس کو حل کرنے کی کوشش کررہی ہے۔ لکھنؤ پولیس نے اتوار کے روز شہر ناکہ کے علاقے میں واقع ایک ہوٹل سے ملزمین کے خون میں ملا ہوئے بھگوا رنگ کے کپڑے برآمد کرلئے۔ فارنسنگ ماہرین نے یوپی پولیس ٹیم کی جانب سے برآمد خون میں داغدار لباس کی تفتیش شروع کردی ہے۔ فارنسنگ ماہرین اپنے طورپرجائے وقوع پرپہنچ چکے ہیں اورفنگرپرنٹس سمیت دیگر شواہد جمع کررہے ہیں۔ یوپی پولیس کے ایک سینئرعہدیدار کے مطابق ، خون میں بھیگے ہوئے کپڑوں کو ضرورت پڑنے پرسنٹرل فارنسنگ سائنس لیبارٹری ، دہلی بھیجا جاسکتا ہے۔

کملیش تیواری قتل کیس: 74 سی سی ٹی وی فوٹیج کامشاہدہ اور24 گھنٹے، پولیس کوملی یہ کامیابی۔(تصویر:نیوز18)۔ کملیش تیواری قتل کیس: 74 سی سی ٹی وی فوٹیج کامشاہدہ اور24 گھنٹے، پولیس کوملی یہ کامیابی۔(تصویر:نیوز18)۔

Loading...

یوپی پولیس کے آئی پی ایس افسر کے مطابق ، اس قتل کیس میں ملوث تقریباً تمام ملزمین کی شناخت ہوچکی ہے۔اس قتل کیس میں مزید لوگ ملوث ہیں۔ یوپی پولیس قتل میں ملوث دیگر ملزمین کی تلاش میں متعدد مقامات پر چھاپے ماررہی ہے۔ پچھلے 24 گھنٹوں سے یہ چھاپہ مسلسل جاری ہے۔ یوپی پولیس کے ایک درجن کے قریب آئی پی ایس آفیسران اورانسپکٹر لیول کے 100 سے زیادہ ہائی پروفائل افسران اس کام میں مصروف ہیں۔ اتر پردیش کے ڈی جی پی او پی سنگھ خود دن رات اس کیس کی نگرانی کررہے ہیں۔

 

تمام ملزمین کی شناخت مکمل : اترپردیش پولیس ذرائع

کملیش تیواری قتل کیس کے حل کرنے کے لیے یوپی پولیس نے لکھنؤ میں ہی 74 سے زیادہ سی سی ٹی وی کیمروں کے فوٹیج کی جانچ کی ہے۔کملیش تیواری کے قتل میں ملوث ملزمین 31 فوٹیج میں ریکارڈ ہوئے ہیں۔یوپی پولیس نے 24 گھنٹوں کے دوران 160 کے قریب فون کالز کی بھی تفتیش کی ہے جس کے ذریعہ جب ملزمین کے درمیان ہوئے رابطوں کی پردہ فاش ہوگیاہے۔اس معاملے میں ، یوپی پولیس ، مہاراشٹر پولیس اور گجرات پولیس مل کر کام کررہی ہیں۔پولیس نے اب تک 300 سے زائد افراد سے پوچھ تاتھ کی ہے

سی سی ٹی وی فوٹیج سے ملی کامیابی

ہم آپ کو بتادیں کہ یوپی پولیس مستقبل میں کسی قسم کے تضاد سے بچنے کے لئے ٹھوس ثبوت اکٹھا کرنے میں مصروف ہے۔ فارنسنگ ٹیم کے پاس متعدد سینئر سائنس دانوں کی ٹیم ہے ، جنہوں نے جائے وقوع سے شواہد اکٹھا کرنے کے بعد اسے تفتیش کے لئے فارنسنگ سائنس لیبارٹری بھجوایا۔ اگر ضرورت پڑی توان نمونوں کو دہلی اور حیدرآباد میں فارنسنگ لیبوں میں بھی بھیجا جاسکتا ہے۔ فارنسنگ ٹیم ڈی این اے نمونہ جمع کرنے والی کٹ، فنگر پرنٹ ڈویلپمنٹ لفٹنگ کٹ ، کرائم سیشن پروفیشنل کٹ کے ذریعہ شواہد اکٹھا کررہی ہے۔

یو پی پولیس فائل تصویر

ہم آپ کو بتادیں کہ 18 اکتوبر کودن ہندو سماج پارٹی کے صدر کملیش تیواری کو قتل کیا گیا تھا۔ اس قتل کیس میں گجرات سے تین اور یوپی کے دو افراد کو گرفتار کیا گیا ہے۔ لکھنؤ پولیس کے ذریعہ یوپی میں بجنور کے دو مولانا کے کردار کی تفتیش جاری ہے۔ سال 2015 میں،ان دونوں مولانا نے کملیش تیواری کا سر قلم کرنے والوں کے لئے 1.5 کروڑ روپئے کا انعام دینے کا اعلان کیا تھا۔

Loading...