உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

     ادے پور کنہیا لال قتل سانحہ: NIA کو ملی جانچ، یو اے پی اے کے تحت درج ہوا معاملہ، ملزمین کی گرفتاری کرنے والے پولیس اہلکاروں کو اشوک گہلوت کا تحفہ

    قومی تفتیشی ایجنسی (این آئی اے) نے ادے پور میں ایک ٹیلر کے وحشیانہ قتل معاملے میں یو اے پی اے کے تحت پھر سے معاملہ درج کیا ہے۔ یہ جانکاری این آئی اے کے ترجمان نے دی ہے۔

    قومی تفتیشی ایجنسی (این آئی اے) نے ادے پور میں ایک ٹیلر کے وحشیانہ قتل معاملے میں یو اے پی اے کے تحت پھر سے معاملہ درج کیا ہے۔ یہ جانکاری این آئی اے کے ترجمان نے دی ہے۔

    قومی تفتیشی ایجنسی (این آئی اے) نے ادے پور میں ایک ٹیلر کے وحشیانہ قتل معاملے میں یو اے پی اے کے تحت پھر سے معاملہ درج کیا ہے۔ یہ جانکاری این آئی اے کے ترجمان نے دی ہے۔

    • Share this:
      نئی دہلی: قومی تفتیشی ایجنسی این آئی اے (National Investigation Agency) نے ادے پور میں ایک درجی کے وحشیانہ قتل معاملے میں انسداد دہشت گردی ایکٹ (یو اے پی اے) کے تحت پھر سے معاملہ درج کیا ہے۔ یہ جانکاری این آئی اے کے ترجمان نے دی ہے۔ انہوں نے کہا کہ این آئی اے نے راجستھان کے ادے پور میں کنہیا لال تیلی کے قتل کے حادثہ سے متعلق معاملہ درج کرلیا ہے۔

      این آئی اے کی ٹیمیں ادے پور میں پہنچ چکی ہیں اور معاملے کی فوری جانچ کے لئے ضروری کارروائی شروع کردی گئی ہے۔ ادے پور میں ٹیلر کنہیا لال کا بے رحمی سے ہوئے قتل کے بعد پورے راجستھان میں کشیدگی کا ماحول ہے۔ کئی علاقوں میں کرفیو لگا دیا گیا ہے۔

      ادے پور میں بھاری تعداد میں پولیس فورس کو تعینات کیا گیا ہے۔ ادے پور میں اپنی ہی دوکان میں وحشیانہ قتل کا شکار ہوئے کنہیا لال کی بیوی یشودا نے ملزمین کو پھانسی دینے کا مطالبہ کیا ہے۔ یشودا کا کہنا ہے کہ 15 روز سے ان کو جان سے مارنے کی دھمکی مل رہی تھی۔ وہیں کنہیا لال کی بھانجی نے بھی انصاف کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ ملزمین نے اس کے ماما کو تڑپا تڑپا کر مارا ہے۔

      وہیں دوسری جانب، راجستھان کے وزیر اعلیٰ اشوک گہلوت نے بڑا اعلان کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ادے پور حادثہ میں شامل ملزمین کی فوری گرفتاری کرنے والے پانچ پولیس اہلکاروں تیج پال، نریندر، شوکت، وکاس اور گوتم کو آف ٹرم پرموشن دینے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔

      اس سے قبل انہوں نے سوشل میڈیا پر لکھا، ادے پور حادثہ پر آج اعلیٰ سطحی جائزہ میٹنگ ہوئی۔ پولیس افسران نے بتایا کہ ابتدائی جانچ میں سامنے آیا کہ حادثہ پہلی نظر میں دہشت پھیلانے کے مقصد سے کی گئی ہے۔ دونوں ملزمین کا دوسرے ممالک سے میں بھی رابطہ ہونے کی بات سامنے آئی ہے۔ اس حادثہ میں مقدمہ یو اے پی اے (UAPA) کے تحت درج کیا گیا ہے، اس لئے اب آگے کی جانچ این آئی اے کے ذریعہ کی جائے گی، جس میں راجستھان اے ٹی ایس مکمل تعاون کرے گی۔ پولیس اور انتظامیہ پورے ریاست میں لا اینڈ آرڈر کی صورتحال کو یقینی بنائے اور دہشت اور بدامنی پھیلانے کی کوشش کرنے والوں پر سختی سے کارروائی کرے۔ موجودہ حالات کو دیکھتے ہوئے ایک بار پھر اپیل کرتا ہوں کہ سبھی فریق امن وامان بنائے رکھیں۔
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: