ہوم » نیوز » مغربی ہندوستان

ادھوے ٹھاکرے کے ہاتھ سے اقتدار جانےکا خدشہ ختم، وزیراعلیٰ سمیت 8 اراکین ہوئے بلامقابلہ ایم ایل سی منتخب

ادھو ٹھاکرے جنھوں نے 28 نومبر کو وزیر اعلیٰ کی حیثیت سے حلف لیا تھا وہ کسی بھی ایوان کے رکن نہیں تھے۔ اب وہ مہاراشٹر قانون ساز کونسل کے رکن منتخب ہوگئے ہیں۔

  • Share this:
ادھوے ٹھاکرے کے ہاتھ سے اقتدار جانےکا خدشہ ختم، وزیراعلیٰ سمیت 8 اراکین ہوئے بلامقابلہ ایم ایل سی منتخب
ادھو ٹھاکرے جنھوں نے 28 نومبر کو مہاراشٹر کے وزیر اعلیٰ کی حیثیت سے حلف لیا تھا۔ وہ مہا وکاس اگھاڑی کے لیڈر ہیں۔ 

ممبئی: شیو سینا (Shivsena) ادھو ٹھاکرے (Uddhav Thackeray) جنھوں نے 28 نومبر کو وزیر اعلیٰ کی حیثیت سے حلف لیا تھا وہ کسی بھی ایوان کے رکن نہیں تھے۔اور اقتدار پر باقی رہنے کے لئے انھیں 27 مئی تک انھیں مجلس قانون ساز کا رکن ہونا ضروری تھا۔ واضح رہے ریاست کے ایوان بالا میں 9 خالی نشستیں، قانون ساز اسمبلی کے 288 ممبران پر مشتمل انتخابی کالج کے ذریعے رائے شماری سے پُر کی جاتی ہیں۔ مہاراشٹر کے 59 سالہ وزیر اعلیٰ ادھو ٹھاکرے پہلی بار قانون ساز کونسل کے رکن بنے ہیں۔ وہ شیو سینا کے سربراہ بھی ہیں۔ انہوں نے گزشتہ سال 28 نومبر کو وزیراعلیٰ عہدے کی حلف لیا تھا۔


ادھو ٹھاکرے بلا مقابلہ منتخب ہوں گے یہ بات اسی وقت واضح ہو گئی تھی جب مہاراشٹر قانون ساز کونسل کی 9 نشستوں کے لئے 21 اپریل کو ہونے والے انتخاب کے لئے انھوں نے اپنی اہلیہ، فرزند کابینی وزیر آدتیہ ٹھاکرے اور مہا وکاس آگھاڑی کے قائدین جن میں راشٹر وادی کانگریس پارٹی کے نائب وزیر اعلیٰ اجیت پوار، ریاستی کانگریس کے صدر اور محصول وزیر بالاصاحب تھوراٹ اور شیوسینا کے سینئر رہنماوں کے ہمراہ اپنے کاغذات نامزدگی جمع کروائےتھے۔


ادھو ٹھاکرے جنھوں نے 28 نومبر کو مہاراشٹر کے وزیر اعلیٰ کی حیثیت سے حلف لیا تھا۔ وہ مہا وکاس اگھاڑی کے لیڈر ہیں۔
ادھو ٹھاکرے جنھوں نے 28 نومبر کو مہاراشٹر کے وزیر اعلیٰ کی حیثیت سے حلف لیا تھا۔ وہ مہا وکاس اگھاڑی کے لیڈر ہیں۔


اس موقع پر کہ شیو سینا کے رکن پارلیمنٹ سنجے راوت نے پرچہ نامزدگی داخل ہونے کے بعد کہا تھا کہ "ایم ایل سی کی 9 نشستوں پر انتخابات بلا مقابلہ ہوں گے۔ ہم نے کانگریس کی قیادت کے ساتھ تبادلہ خیال کیا کہ یہ وقت انتخابات کا نہیں بلکہ کووڈ- 19 کے وبائی امراض کا مقابلہ کرنے کا ہے۔ انہوں نے ہماری درخواست کا احترام کیا اور خوش اسلوبی سے اپنے دوسرے امیدوار کو واپس لے لیا’۔ نیز کانگریس نے اپنے دوسرے امیدوار راج کشور عرف پاپا مودی کو فارم واپس لینے پر رضامند کرلیا تھا۔
First published: May 14, 2020 09:56 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading