உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    یوکرین-روس تنازع کا سیدھا اثر آپ کی جیب پر بھی پڑے گا، Crude Oil آٹھ سال کی اونچی سطح پر پہنچا، گھریلو گیس اور CNG بھی ہوں گی مہنگی

    یوکرین-روس تنازع کا آپ کی جیب پر بھی ہوگا سیدھا اثر۔ بڑھیں گی پٹرول،ڈیزل اور قدرتی گیس کی قیمتیں۔

    یوکرین-روس تنازع کا آپ کی جیب پر بھی ہوگا سیدھا اثر۔ بڑھیں گی پٹرول،ڈیزل اور قدرتی گیس کی قیمتیں۔

    یوکرین روس جنگ کی وجہ سے سب سے بڑا خطرہ قدرتی گیس کی سپلائی چین کو پہنچنے والا نقصان ہے۔ دنیا کی قدرتی گیس کی مجموعی پیداوار میں روس کا حصہ 17 فیصد ہے۔ ایسے میں یوکرین روس تنازعہ کی وجہ سے اس کی سپلائی متاثر ہو رہی ہے۔

    • Share this:
      نئی دہلی: یوکرین روس تنازعہ کے باعث آنے والے دنوں میں مہنگائی مزید بڑھ سکتی ہے۔ اس تنازع کی وجہ سے بین الاقوامی مارکیٹ میں خام تیل کی قیمت 95 ڈالر فی بیرل سے تجاوز کر گئی ہے۔ یہ تقریباً 8 سال کی ریکارڈ اونچی قیمت ہے۔ خام تیل کی قیمت بڑھنے کی وجہ سے آنے والے دنوں میں پیٹرول اور ڈیزل کی قیمتوں میں اضافے کا امکان ہے۔

      اس کے ساتھ ہی عالمی منڈی میں قدرتی گیس کی قیمت بھی بڑھ رہی ہے۔ جس کے باعث ملک کے اندر ایل پی جی اور سی این جی کی قیمتوں میں اضافے کا قوی امکان ہے۔ یوکرین اور روس کے تنازع سے بھی سونے کی قیمتوں کو سپورٹ مل رہا ہے۔ اس کے نتیجے میں یہ 50,500 روپے کی سطح کو عبور کر گیا ہے۔ ان دونوں ممالک کے درمیان تنازع کی وجہ سے تانبے اور ایلومینیم کی قیمتوں میں بھی اضافہ دیکھا جا سکتا ہے۔

      الیکشن کے بعد بڑھ سکتے ہیں پیٹرول اور ڈیزل کی قیمتیں
      اترپردیش اور پنجاب سمیت 5 ریاستوں میں جاری اسمبلی انتخابات کے بعد عام آدمی کو مہنگائی کے محاذ پر بڑا جھٹکا لگ سکتا ہے۔ اسمبلی انتخابات کے نتائج 10 مارچ کو آنے والے ہیں۔ اس کے بعد پیٹرول اور ڈیزل مہنگا ہوسکتا ہے، کیونکہ خام تیل کی قیمت 8 سال کی بلند ترین سطح پر پہنچ گئی ہے۔ ماہرین کا اندازہ ہے کہ پیٹرول اور ڈیزل کی قیمتوں میں 15 سے 20 روپے تک اضافہ ہوسکتا ہے۔

      IIFLسیکیورٹیز کے نائب صدر (کموڈٹی اینڈ کرنسی) انوج گپتا کا کہنا ہے کہ تیل کمپنیوں نے 3 نومبر سے پیٹرول کی قیمتوں میں کوئی تبدیلی نہیں کی ہے، جب کہ اس کے بعد سے خام تیل 15 ڈالر فی بیرل سے زیادہ مہنگا ہو گیا ہے۔ مستقبل میں بھی اس میں تیزی آ سکتی ہے۔ آنے والے وقت میں بین الاقوامی مارکیٹ میں خام تیل کی قیمت 100 ڈالر فی بیرل تک جا سکتی ہے۔ ایسے میں پٹرول اور ڈیزل کی قیمتوں میں جلد ہی 15 سے 20 روپے فی لیٹر کا اضافہ ہو سکتا ہے۔ جب عالمی منڈی میں خام تیل 1 ڈالر فی بیرل مہنگا ہوتا ہے تو پیٹرول اور ڈیزل کی قیمت 50-60 پیسے فی لیٹر بڑھ جاتی ہے۔

      ایلومینیم اور تانبے کی قیمتوں میں بھی اضافہ
      روس دنیا کی مجموعی ایلومینیم کی پیداوار کا 6فیصد حصہ بناتا ہے۔ ایسے میں یوکرین اور روس کے تنازع سے اس کی سپلائی بھی متاثر ہو رہی ہے۔ فروری میں ہی اب تک اس کی قیمت میں 15 فیصد اضافہ ہوا ہے۔ اس کے علاوہ تانبے کی مجموعی پیداوار میں روس کا بھی 3.5 فیصد حصہ ہے۔ ایسے میں اب اس کی قیمتیں بھی بڑھنے لگی ہیں۔ یہ دونوں دھاتیں برتنوں اور آٹو انڈسٹری کے علاوہ بہت سی چیزوں میں استعمال ہوتی ہیں۔ جس کی وجہ سے آنے والے دنوں میں ان چیزوں کی قیمتوں میں مزید اضافے کا قوی امکان ہے۔

      بڑھ سکتے ہیں قدرتی گیس کی قیمتیں
      یوکرین روس جنگ کی وجہ سے سب سے بڑا خطرہ قدرتی گیس کی سپلائی چین کو پہنچنے والا نقصان ہے۔ دنیا کی قدرتی گیس کی مجموعی پیداوار میں روس کا حصہ 17 فیصد ہے۔ ایسے میں یوکرین روس تنازعہ کی وجہ سے اس کی سپلائی متاثر ہو رہی ہے۔ اس سے عالمی سطح پر گیس کی قلت کا اثر نظر آنا شروع ہو گیا ہے اور آنے والے دنوں میں ایل پی جی اور سی این جی کی قیمتوں میں 10 سے 15 روپے فی کلو اضافہ ہو سکتا ہے۔

      51 ہزار روپے کے قریب پہنچا سونا
      روس یوکرین کشیدگی کی وجہ سے سونے اور چاندی کی قیمتوں میں زبردست اضافہ ہوا ہے۔ سونا ایک بار پھر 51 ہزار روپے فی 10 گرام اور چاندی 65 ہزار روپے فی کلو کے قریب پہنچ گئی ہے۔ انڈیا بلین اینڈ جیولرس ایسوسی ایشن (IBJA) کی ویب سائٹ کے مطابق، آج بلین مارکیٹ میں سونے کی قیمت 50,547 روپے فی 10 گرام ہے۔ اس کے ساتھ ہی چاندی کی قیمت 64,656 روپے فی کلو ہے۔ بین الاقوامی مارکیٹ کی بات کریں تو سونا 1,909.12 ڈالر فی اونس اور چاندی 24 ڈالر فی اونس سے تجاوز کر گئی ہے۔
      Published by:Shaik Khaleel Farhaad
      First published: