உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Uniform Civil Code:حجاب تنازعہ کے درمیان یونیفارم سول کوڈ کی چرچا۔۔۔ جانیے کیا ہے یہ اور اس سے کیا بدل جائے گا

    حجاب تنازعہ کے درمیان اب یونیفارم سول کوڈ کو لے کر چھڑی بحث۔

    حجاب تنازعہ کے درمیان اب یونیفارم سول کوڈ کو لے کر چھڑی بحث۔

    Uniform Civil Code:یونیفارم سول کوڈ کی مخالفت کرنے والوں کا کہنا ہے کہ یہ ہندو قانون کو تمام مذاہب پر لاگو کرنے کے مترادف ہے۔ اس پر مسلم پرسنل لا بورڈ کو بڑا اعتراض ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ اگر سب کے لیے یکساں قانون نافذ کیا گیا تو ان کے حقوق پامال ہوں گے۔

    • Share this:
      نئی دہلی:کرناٹک کے ایک کالج سے شروع ہوا حجاب کا تنازعہ(Hijab Controversy) قومی سطح پر چھایا ہوا ہے اور اس پر سیاست تیز ہو گئی ہے۔ پچھلے کچھ دنوں میں آپ نے دیکھا ہوگا کہ یہ کس طرح قومی سطح کا مسئلہ بن گیا ہے۔ کرناٹک سے لے کر دہلی تک حکمران جماعت اور اپوزیشن کے لیڈر حجاب کی حمایت اور مخالفت میں اپنے دلائل دے رہے ہیں۔ اس تنازعہ کے درمیان ایک بار پھر یکساں سول کوڈ(Uniform Civil Code) پر بات ہو رہی ہے۔ ہفتہ کو وزیر اعلیٰ پشکر سنگھ دھامی نے اتراکھنڈ میں بڑا داؤ کھیلا ہے۔ انہوں نے کہا ہے کہ جیسے ہی دوبارہ حکومت بنے گی وہ خصوصی کمیٹی بنا کر یکساں سول کوڈ لائیں گے۔ اس حوالے سے سپریم کورٹ(Supreme Court) میں درخواستیں بھی دائر کر دی گئی ہیں۔

      یکساں سول کوڈ پر ماضی میں بھی کافی بحث ہوئی ہے۔ لوگوں نے اس کے حق میں اور مخالفت میں بھی اپنا ووٹ ڈالا ہے۔ اس بار یہ حجاب کو لے کر اٹھنے والے تنازعہ کے درمیان ایک بار پھر سرخیوں میں آگئی ہے۔ ہمیں بتائیں کہ یکساں سول کوڈ کیا ہے؟ اس کا آئین سے کیا تعلق ہے؟ حجاب کے تنازعہ کے درمیان اس کا کیا مطلب ہے؟ اس کے آنے سے کیا کچھ بدل جائے گا؟

      کیا ہے یونیفارم سول کوڈ؟
      یکساں سول کوڈ کا سیدھا مطلب ہے - ملک کے ہر شہری کے لیے یکساں قانون۔ پھر چاہے وہ کسی بھی مذہب یا ذات سے تعلق رکھتا ہو۔ اس وقت ملک میں مختلف مذاہب کے لیے مختلف پرسنل لاز ہیں۔ یکساں سول کوڈ کے نفاذ کے بعد ہر مذہب کے لیے ایک جیسا قانون ہوگا۔ یکساں سول کوڈ کا مقصد ہر مذہب کے ذاتی قوانین میں یکسانیت لانا ہے۔ اس کے تحت ہر مذہب کے قوانین میں بہتری اور یکسانیت لانے کے لیے کام کیا جائے گا۔ یونیفارم سول کوڈ کا مطلب ایک منصفانہ قانون ہے، جس کا کسی مذہب سے کوئی تعلق نہیں ہے۔

      کیوں اسے ضروری بتایا جارہا ہے؟
      ماہرین کا کہنا ہے کہ ہر مذہب میں مختلف قوانین کی وجہ سے عدلیہ پر بوجھ آتا ہے۔ کامن سول کوڈ کے آنے سے یہ مشکل دور ہو جائے گی اور عدالتوں میں برسوں سے زیر التوا مقدمات جلد نمٹائے جائیں گے۔

      آئی آئی ایم ٹی نوئیڈا کے میڈیا ٹیچر ڈاکٹر نرنجن کمار کا کہنا ہے کہ اگر تمام شہریوں کے لیے قانون میں یکسانیت ہوگی تو سماجی اتحاد کو فروغ ملے گا۔ وہ مزید کہتے ہیں،’’اس میں کوئی شک نہیں کہ جہاں ہر شہری برابر ہو، وہ ملک تیزی سے ترقی کرتا ہے۔ بہت سے ممالک میں یکساں سول کوڈ نافذ ہیں۔

      کئی ملکوں میں لاگو ہے یوسی سی
      پاکستان، بنگلہ دیش، ملیشیا، ترکی، انڈونیشیا، سوڈان اور مصر جیسے کئی ملکوں میں یونیفارم سول کوڈ پہلے سے ہی لاگو ہے۔

      کیوں ہوتی رہی ہے مخالفت؟
      یونیفارم سول کوڈ کی مخالفت کرنے والوں کا کہنا ہے کہ یہ ہندو قانون کو تمام مذاہب پر لاگو کرنے کے مترادف ہے۔ اس پر مسلم پرسنل لا بورڈ کو بڑا اعتراض ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ اگر سب کے لیے یکساں قانون نافذ کیا گیا تو ان کے حقوق پامال ہوں گے۔ مسلمانوں کو تین شادیاں کرنے کا حق نہیں ہوگا۔ اسے اپنی بیوی کو طلاق دینے کے لیے قانون سے گزرنا پڑے گا۔ وہ اپنی شریعت کے مطابق جائیداد کی تقسیم نہیں کر سکیں گے۔
      Published by:Shaik Khaleel Farhaad
      First published: