اپنا ضلع منتخب کریں۔

    UP Election Result 2022: مسلم علاقوں میں بھی بی جے پی نے کیا بہترین مظاہرہ، جانیں کہاں کسے ملی جیت

    اترپردیش اسمبلی انتخابات (UP Chunav 2022) میں بی جے پی (BJP wins in UP) زبردست اکثریت کے ساتھ دوبارہ حکومت بنانے جا رہی ہے۔ ریاست کی 403 رکنی اسمبلی الیکشن میں بی جے پی اور اس کی اتحادی جماعتوں نے اس بار 273 سیٹیں اپنے نام کی ہیں۔

    اترپردیش اسمبلی انتخابات (UP Chunav 2022) میں بی جے پی (BJP wins in UP) زبردست اکثریت کے ساتھ دوبارہ حکومت بنانے جا رہی ہے۔ ریاست کی 403 رکنی اسمبلی الیکشن میں بی جے پی اور اس کی اتحادی جماعتوں نے اس بار 273 سیٹیں اپنے نام کی ہیں۔

    اترپردیش اسمبلی انتخابات (UP Chunav 2022) میں بی جے پی (BJP wins in UP) زبردست اکثریت کے ساتھ دوبارہ حکومت بنانے جا رہی ہے۔ ریاست کی 403 رکنی اسمبلی الیکشن میں بی جے پی اور اس کی اتحادی جماعتوں نے اس بار 273 سیٹیں اپنے نام کی ہیں۔

    • Share this:
      لکھنو: اترپردیش اسمبلی انتخابات (UP Election 2022) میں بی جے پی (BJP wins in UP) زبردست اکثریت کے ساتھ دوبارہ حکومت بنانے جا رہی ہے۔ ریاست کی 403 رکنی اسمبلی الیکشن میں بی جے پی اور اس کی اتحادی جماعتوں نے اس بار 273 سیٹیں اپنے نام کی ہیں۔ اس میں دلچسپ بات یہ ہے کہ بھگوا جماعت نے مسلم اکثریتی حلقوں کے طور پر شمار مغربی یوپی کی 25 سیٹون پر جیت حاصل کی ہے۔ گزشتہ اسمبلی انتخابات میں بی جے پی نے یہاں 65 میں سے 40 سیٹیں جیتی تھیں۔ ایسے میں بی جے پی کی سیٹیں یہاں کم ضرور ہوئی ہیں، لیکن پھر یہاں 25 سیٹوں پر جیت کو بہترین ہی مانا جا رہا ہے۔

      یوپی الیکشن کے نتائج کے مطابق، مسلم اکثریتی ان 65 سیٹوں میں سے سماجوادی-آرایل ڈی اتحاد نے 40 سیٹوں پر جیت درج کی، جبکہ بی جے پی کے کھاتے میں 25 سیٹیں آئیں۔ ان نتائج پر قریبی نظر رکھنے پر ایک بات یہ معلوم ہوتی ہے کہ مسلمانوں کا یکمشت ووٹ سماجوادی اتحاد کو ملا ہے۔ وہیں بی جے پی نے بی ایس پی کے دلت ووٹ بینک میں سیندھ لگا دی۔ مانا جا رہا ہے کہ بی ایس پی کے ہی ووٹ سے بی جے پی نے مسلم حلقوں میں اپنی سیٹ بچائی۔

      دوسری جانب، آل انڈیا مجلس اتحاد المسلمین (اے آئی ایم آئی ایم) کے سربراہ اور حیدرآباد کے رکن پارلیمنٹ اسدالدین اویسی نے 100 سیٹوں پر امیدوار اتارے تھے، لیکن ان میں ایک بھی امیدوار کو جیت نصیب نہیں ہو پائی۔ اے آئی ایم آئی ایم کو کل ملاکر %0.49 ووٹ ملے، جبکہ اس سے زیادہ %0.69 ووٹروں نے نوٹا کا بٹن دبایا۔

      یہ بھی پڑھیں۔

      UP Assembly Elections: اس بارکونسے مسلم امیدوارکس حلقے سے ہوئے کامیاب؟ یہاں دیکھیں مکمل فہرست

      کونسا امیدوار کس حلقہ سے ہوا کامیاب:

      امروہہ- محبوب علی
      بہاری- عطا الرحمان
      بیہٹ- عمر علی خان
      بھدوہی- محمد زاہد
      بھوجی پورہ- شہزل اسلام
      بلاری۔ محمد فہیم احمد
      چمروا-نصیر احمد
      گوپالپور-نفیس احمد
      اسولی- محمد طاہر خان
      کیرانہ-ناہید حسن
      کانپور کینٹ- محمد حسن
      کانٹھ-کمال اختر،

      کٹھور-شاہد منظور
      کندرکی-ضیاء الرحمان
      لکھنؤ ویسٹ-ارمان خان
      مٹیرا-ماریہ یاسر شاہ

      مئو- عباس انصاری
      میرٹھ-رفیق انصاری

      محمود آباد- صہیب عرف مانو انصاری
      مراد آباد رورل- محمدناصر
      نجیب آباد- تسلیم احمد
      نظام آباد- عالم بدی
      پٹیالی- نادرہ سلطان
      رام نگر- فرید محمد قدوائی

      رام پور- اعظم خان
      سنبھل- اقبال محمود
      سکندر پور- ضیاء الدین رضوی
      شیشا مئو- حاجی عرفان سولنکی
      سوال خاص- غلام محمد

      سوار رامپور عبداللہ اعظم
      ٹھاکردوارہ- نواب جان
      تھانہ بھون- اشرف علی
      ڈومریا گنج- سیدہ خاتون
      سہارنپور- آشو ملک
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: