உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    پاکستان کی جیت پر لگائے تھے پاک زندہ آباد کے نعرے ، اب تین کشمیری طلبہ معطل

    پاکستان کی جیت پر لگائے تھے پاک زندہ آباد کے نعرے ، اب تین کشمیری طلبہ معطل

    پاکستان کی جیت پر لگائے تھے پاک زندہ آباد کے نعرے ، اب تین کشمیری طلبہ معطل

    India Pakistan T20 world Cup match: ٹی ٹوینٹی ورلڈ کپ میں ہندوستان اور پاکستان کی جیت کو لے کر آگرہ کے بچپوری میں واقع آر بی ایس کیپس میں سوشل میڈیا پر خوشیاں منانے والے کشمیری طلبہ کے خلاف کارروائی کا ہنٹر چلا ہے ۔

    • Share this:
      آگرہ : ٹی ٹوینٹی ورلڈ کپ میں ہندوستان اور پاکستان کی جیت کو لے کر آگرہ کے بچپوری میں واقع آر بی ایس کیپس میں سوشل میڈیا پر خوشیاں منانے والے کشمیری طلبہ کے خلاف کارروائی کا ہنٹر چلا ہے ۔ تین کشمیری طلبہ کو کالج انتظامیہ نے معطل کردیا ہے ۔ جن طلبہ کے خلاف کارروائی کی گئی ان میں رشید یوسف ، عنایت الطاف شیخ اور شوکت احمد شامل ہیں ۔ یہ کارروائی بھارتیہ جنتا یووا مورچہ کے لیڈروں کے ذریعہ غصہ ظاہر کئے جانے کے بعد ہوئی ہے ۔ کیمپس میں پولیس بھی پہنچ گئی اور جن طلبہ پر خوشیاں منانے کا الزام ہے ، ان کی جانچ پڑتال کی جاری ہے ۔

      بچپوری علاقہ میں واقعہ کو لے کر خفیہ محکمہ بھی الرٹ ہوگیا ہے ۔ اتوار کو ٹی ٹوینٹی ورلڈ کپ میں کھیلے گئے ایک میچ میں پاکستان نے ہندوستان کو ہرادیا تھا ، اس کے بعد کیمپس کے کچھ کشمیری طلبہ نے وہاٹس ایپ پر پاکستان کی حمایت پوسٹ لگائے تھے ، جس پر سبھی طلبہ نے اعتراض کیا ۔ پھر بھی کشمیری طلبہ اپنے موقف پر قائم رہے ۔ اب وہاٹس ایپ پر کی گئی پوسٹ کا اسکرین شاٹ سوشل میڈیا پر وائرل ہوگیا ہے ۔

      معاملہ کی جانکاری ہوتے ہی بھارتیہ جنتا یووا مورچہ کے لیڈر گورو سنگھ راجاوت اور مہانگر صدر شیلو پنڈت کی قیادت میں سبھی یووا بھاجپائی تھانے پہنچ گئے ۔ ان لوگوں نے ملزم کشمیری طلبہ کے خلاف تحریر بھی لکھ کر دی ہے ۔ پولیس اس پر کارروائی کررہی ہے ۔ فی الحال کالج انتظامیہ نے تینوں ملزم طلبہ کو معطل کردیا ہے ۔

      بجپوری میں واقع آر بی ایس کیمپس میں بھی بھارتیہ جنتا یووا مورچہ کے عہدیداران پہنچ گئے اور انہوں نے ہنگامہ کردیا ۔ پاکستان کی حمایت میں نعرے بازی اور جشن کا الزام بھی لگایا ۔ سوربھ سنگھ نے بتایا کہ تین طلبہ کو کالج انتظامیہ نے معطل کردیا ہے ۔ شیلو پنڈت کی تحریر پر مقدمہ درج کیا جارہا ہے ۔
      Published by:Imtiyaz Saqibe
      First published: