உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    مذہب بدل کر شادی کرنے والی مسلم لڑکی نے اپنے گھر والوں سے بتایا خطرہ! جانئے پورا معاملہ

     ڈسٹرکٹ انٹیلی جنس ڈیپارٹمنٹ (LIU) اور مقامی پولیس سرگرم ہے  اور گدائی گاؤں پر نظر رکھے ہوئے ہے جب کہ نیا  جوڑا شادی کے بعد سے چار روز سے اپنے گھر میں قید ہے۔ فی الحال جوڑا اس معاملے میں کچھ بھی کہنے سے گریز کررہا ہے۔

    ڈسٹرکٹ انٹیلی جنس ڈیپارٹمنٹ (LIU) اور مقامی پولیس سرگرم ہے اور گدائی گاؤں پر نظر رکھے ہوئے ہے جب کہ نیا جوڑا شادی کے بعد سے چار روز سے اپنے گھر میں قید ہے۔ فی الحال جوڑا اس معاملے میں کچھ بھی کہنے سے گریز کررہا ہے۔

    ڈسٹرکٹ انٹیلی جنس ڈیپارٹمنٹ (LIU) اور مقامی پولیس سرگرم ہے اور گدائی گاؤں پر نظر رکھے ہوئے ہے جب کہ نیا جوڑا شادی کے بعد سے چار روز سے اپنے گھر میں قید ہے۔ فی الحال جوڑا اس معاملے میں کچھ بھی کہنے سے گریز کررہا ہے۔

    • Share this:
      اعظم گڑھ ضلع کے اترولیا میں واقع سمو ماتا مندر میں مذہب تبدیل کرنے والی مسلمان لڑکی مومن خاتون نے اپنے خاندان والوں سے اپنی جان کو خطرہ بتایا ہے۔ ساتھ ہی شادی کرنے والے ہندو نوجوان سورج نے بھی اپنی جان کو خطرہ ہونے کا خدشہ ظاہر کیا ہے۔ حالانکہ اس معاملے میں اس نے پولیس میں شکایت درج نہیں کرائی ہے۔ اس کے باوجود احتیاط کے طور پر ان کے گھر کے ارد گرد سکیورٹی بڑھا دی گئی ہے۔ ڈسٹرکٹ انٹیلی جنس ڈیپارٹمنٹ (LIU) اور مقامی پولیس سرگرم ہے  اور گدائی گاؤں پر نظر رکھے ہوئے ہے جب کہ نیا  جوڑا شادی کے بعد سے چار روز سے اپنے گھر میں قید ہے۔ فی الحال جوڑا اس معاملے میں کچھ بھی کہنے سے گریز کررہا ہے۔ بتایا جا رہا ہے کہ بہت جلد یہ جوڑا کورٹ میرج کر کے غیر صوبے میں چلے جائے گا۔ ہندو مذہب اختیار کرنے کے بعد مومنہ اب مینا بن گئی ہے۔ دونوں گزشتہ دو سال سے ایک دوسرے کے پیار میں تھے۔

      پورا معاملہ اترولیا تھانہ علاقہ کے خانپور فتح گاؤں کا ہے۔ معلومات کے مطابق اتر پردیش کے اعظم گڑھ ضلع کے اٹرولیا علاقے میں واقع مندر کمپلیکس کے ماحول اس وقت ایک نئی عبارت کو لکھ گیاجب ایک مسلمان لڑکی نے اپنے ہندو عاشق کے گلے میں مالا ڈال کر ہندو مذہب اختیار کر لیا اور اسے اپنا جیون ساتھی بنا لیا۔ مندر کے احاطے میں سات پھیرے لیکر محبت کرنے والے اس جوڑے کو رشتہ داروں اور معززین نے آشیروارد سے نوازا۔

      معلومات کے مطابق اتراولیا علاقے کے خان پور فتح گاؤں کے رہنے والے سورج کو دو سال قبل حیدر پور خاص گاؤں کی ایک مسلمان لڑکی  سے محبت ہو گئی تھی۔ جب دونوں کی محبت بڑھی تو وہاپنے گھر والوں سے چھپ چھپ کر مل کر ملنے لگے۔ لیکن جب لڑکی کے گھر والوں کو اس بات کا علم ہوا تو انہوں نے مذہب کی وجہ سے اعتراض کرنا شروع کر دیا جبکہ عاشق کے گھر والوں کو کوئی اعتراض نہیں تھا۔



      نہ صرف یہ گرل فرینڈ کے رشتہ داروں نے بھی عاشق اور اس کے گھر والوں پر اسلام قبول کرنے کے لیے دباؤ ڈالا۔ لیکن گرل فرینڈ نے انکار کر دیا۔ اس دوران دونوں نے شادی کرنے کا فیصلہ کیا اور مذہب کی راہ میں آنے والی دیوار کو توڑنے کا فیصلہ کیا۔ دونوں کی شادی آج علاقے کے سمو ماتا مندر میں ہندو رسومات کے مطابق ہوئی۔ اس دوران نئے شادی شدہ جوڑے کے اہل خانہ اور اہل علاقہ موجود تھے۔

      اب Cab بک کرنا کیوں ہورہا ہے مشکل، کیا ہے اس کی وجہ اور کمپنیوں نے کیوں بدلا اپنا طریقہ

      3 بیٹیوں کے بعد پیدا ہوا بیٹا تو والد نے اٹھایا خوفناک قدم، سن کر کھڑے ہو جائیں گے رونگٹے
      مندر کے احاطے میں آنے والے رشتہ داروں نے بھی دولہا اور دلہن دونوں کو آشیرواد دیا۔ اس دوران لڑکے کے گھر والے اس شادی سے بہت خوش تھے۔ رشتہ داروں نے بتایا کہ ان کے لڑکے نے ایک مسلمان لڑکی سے شادی کی اور اس کے بعد وہ نئے جوڑے کو آشیرواد دے کر سموماتا مندر سے گھر لے آئے۔
      Published by:Sana Naeem
      First published: