உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    دلت خاندان کے چار افراد کا بہیمانہ قتل، مقتولین میں 13 سالہ بچی اور 17 سالہ لڑکا بھی شامل

    دلت خاندان کے چار افراد کا بہیمانہ قتل، مقتولین میں 13 سالہ بچی اور 17 سالہ لڑکا بھی شامل

    دلت خاندان کے چار افراد کا بہیمانہ قتل، مقتولین میں 13 سالہ بچی اور 17 سالہ لڑکا بھی شامل

    پریاگ راج میں اجتماعی قتل کا دل دہلا دینے والا واقعہ پیش آیا ہے ۔ دلت خاندان کے چارافراد کو ان کے گھر میں گھس کر قتل کر دیا گیا ہے ۔ قتل ہونے والوں میں سترہ سالہ لڑکا اور تیرہ سالہ بچی بھی شامل ہے ۔

    • Share this:
    پریاگ راج میں اجتماعی قتل کا دل دہلا دینے والا واقعہ پیش آیا ہے ۔ دلت خاندان کے چارافراد کو ان کے گھر میں گھس کر قتل کر دیا گیا ہے ۔ قتل ہونے والوں میں سترہ سالہ لڑکا اور تیرہ سالہ بچی بھی شامل ہے ۔ پریاگ راج سے تقریباً تیس کلومیٹر دور پھاپھامئو پولیس تھانے کے تحت آنے والے موہن گنج گاؤں میں یہ دلخراش واردات انجام دی گئی ۔ گاؤں میں رہنے والے دلت طبقے کے پھول چند ، ان کی اہلیہ مینو دیوی ، بیٹی گڑیا اور بیٹا بابو کو علی الصبح سوتی حالت میں قتل کر دیا گیا ۔ قتل کی واردات انجام دینے والے افراد نے کلہاڑی کا استعمال کیا ۔

    مقتولین کے رشتہ داروں نے بتایا کہ گاؤں کے بعض دبنگ افراد دلت خاندان کی زمین پر قبضہ جمانے کی کوشش کر رہے تھے ۔ ان کے خلاف پھول چند کی طرف سے پولیس تھانے میں ایس سی ایس ٹی ایکٹ کے تحت مقدمہ درج کرایا گیا تھا ۔ پولیس میں مقدمہ درج کرانے کے بعد آپسی رنجش نے مزید شدت اختیار کرلی۔ پھول چند کی رشتہ دار رادھا دیوی نے الزام لگایا کہ ایس سی ایس ٹی ایکٹ کے تحت کیس درج کرانے کے با وجود پولیس نے نام زد لوگوں کے خلاف کوئی کار روائی نہیں کی ۔

    مقتول کے رشتہ داروں نے بھی پولیس پر دبنگوں کی پشت پناہی کا الزام لگایا ہے۔ دلت افراد کے قتل کی واردات کے بعد گاؤں میں کشیدگی پیدا ہو گئی ہے ۔ کشیدگی کو دیکھتے ہوئے مقامی انتظامیہ نے گاؤں میں پولیس فورس تعینات کر دی ہے ۔ پریاگ راج کے ایس ایس پی سروا سریشٹھ ترپاٹھی کا کہنا ہے کہ ابتدائی جانچ میں جن افراد کے نام سامنے آئے ہیں۔ ان کو حراست میں لیکر پوچھ گچھ کی جا رہی ہے ۔

    ایس ایس پی کا کہنا ہے کہ واردات میں شامل قصورواروں کو جلد ہی گرفتار کر لیا جائے گا ۔
    Published by:Imtiyaz Saqibe
    First published: