உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Meerut : بنکروں کے لیے بجٹ میں مختص رقم اُونٹ کے منہ میں زیرہ 

    Meerut : بنکروں کے لیے بجٹ میں مختص رقم اُونٹ کے منہ میں زیرہ 

    Meerut : بنکروں کے لیے بجٹ میں مختص رقم اُونٹ کے منہ میں زیرہ 

    Meerut News: غریب کلیان اور مفت راشن اسکیم کے ساتھ اُجولا اسکیم میں دو گیس ریفل سلینڈر مفت دینے کے فیصلے کی ماہرین اقتصادیات نے ستائش تو کی ہے لیکن اس کے دائرے کو اُجولا اسکیم کے مستحقین تک محدود رکھنے پر نا اتفاقی بھی ظاہر کی ہے ۔

    • Share this:
    میرٹھ : بی جے پی کی یوگی حکومت نے اپنے دوسرے ٹرم کا پہلا اور اب تک کا سب سے بڑا بجٹ پیش کیا ۔  چھ لاکھ پندرہ ہزار کروڑ کے اس بجٹ میں یوگی حکومت نے ترقیاتی کاموں کی رفتار کو تیز کرنے اور نئے پروجیکٹس کو شروع کرنے مقصد سے بڑی رقم مختص کرنے کے ساتھ صنعتی ترقی کو فروغ دینے کے لیے بھی بجٹ میں اضافہ کیا ہے۔ کاروباری شہر ہونے کی وجہ سے میرٹھ کے کاروباریوں کو بجٹ سے کافی اُمید تھی۔ خاص طور پر کپڑا صنعت کے ہینڈ اور پاور لوم کاروبار سے وابستہ کاریگروں اور لوم کاروباریوں کو بجلی کے فلیٹ ریٹ اور بند پڑی میرٹھ کی دو بڑی کتائی ملوں کو دوبارہ شروع کرنے کے لیے بجٹ مختص کئے جانے کی اُمید تھی۔

     

    یہ بھی پڑھئے: مودی حکومت کی پالیسیوں سے گھوٹالہ بازوں اور اقتصادی مجرموں میں خوف


    حالانکہ حکومت نے بنکروں کی راحت دینے کے لیے سبسڈی میں اضافہ تو کیا لیکن اس کاروبار سے منسلک کاروباریوں کا کہنا ہے کہ یہ رقم اونٹ کے منہ میں زیرے کے برابر ہے۔  وہیں غریب کلیان اور مفت راشن اسکیم کے ساتھ اُجولا اسکیم میں دو گیس ریفل سلینڈر مفت دینے کے فیصلے کی ماہرین اقتصادیات نے ستائش تو کی ہے لیکن اس کے دائرے کو اُجولا اسکیم کے مستحقین تک محدود رکھنے پر نا اتفاقی بھی ظاہر کی ہے ۔

     

    یہ بھی پڑھئے: ہندوستان کے لئے بہت خطرناک ہوسکتے ہیں سوپرسائیکلون،محققین کارپورٹ میں اندیشہ


    مومن انصار سبھا کے صوبائی صدر معراج الدین انصاری کا کہنا ہے کہ سرکار میں پاور سبسڈی کا بجٹ ڈیڑھ سو کروڑ سے بڑھا کر ڈھائی سو کروڑ کیا ہے، جس سے بنکروں کی کچھ راحت ملنے کی امید ہے، لیکن بجلی بل کے فلیٹ ریٹ پر سرکار نے ابھی کچھ نہیں کیا ہے ۔

    وہیں بنکر وکاس سمیتی کے صدر حبیب نصاری کا کہنا ہے کہ سرکار کا بجٹ میں کیا گیا اضافہ اُونٹ کے منہ میں زیرے کے برابر ہے ۔ سبسڈی کے لیے بجٹ میں پانچ سو کروڑ کی رقم مختص کرنی چاہئے تھی، لیکن حکومت نے کسانوں کی طرح کپڑا صنعت سے وابستہ بنکر کاروباریوں کے ساتھ برابری کا برتاؤ نہیں کیا ہے ۔
    Published by:Imtiyaz Saqibe
    First published: