உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    پھر بدلے گا اتراکھنڈ کا وزیراعلیٰ؟ تیرتھ سنگھ راوت نے کردی استعفیٰ کی پیشکش

    پھر بدلے گا اتراکھنڈ کا وزیراعلیٰ؟ تیرتھ سنگھ راوت نے کردی استعفیٰ کی پیشکش

    اتراکھنڈ میں سیاسی سرگرمی تیز ہوگئی ہے۔ وزیر اعلیٰ تیرتھ سنگھ راوت کے دہرہ دون لوٹنے پر ہلچل تیز ہوگئی ہے۔ بتایا جا رہا ہے کہ انہوں نے بی جے پی کے قومی صدر جے پی نڈا کو استعفیٰ کی پیشکش کردی ہے۔ دہرہ دون میں بی جے پی اراکین اسمبلی جمع ہونے لگے ہیں۔

    • Share this:
    دہرہ دون: اتراکھنڈ میں سیاسی سرگرمی تیز ہوگئی ہے۔ وزیر اعلیٰ تیرتھ سنگھ راوت کے دہرہ دون لوٹنے پر ہلچل تیز ہوگئی ہے۔ دہرہ دون میں بی جے پی اراکین اسمبلی جمع ہونے لگے ہیں۔ ذرائع کے مطابق، آئندہ 24 سے 36 گھنٹے میں قانون ساز کونسل کی میٹںگ ہوسکتی ہے۔ وزیر اعلیٰ تیرتھ سنگھ راوت کل گورنر سے مل سکتے ہیں۔

    ذرائع کے مطابق، اتراکھنڈ کے وزیر اعلیٰ تیرتھ سنگھ راوت نے بی جے پی صدر جے پی نڈا کو استعفیٰ سونپ دیا ہے۔ انہوں نے لکھا کہ آئینی عمل کہتا ہے کہ وزیر اعلیٰ کو کسی ایوان کا رکن ہونا چاہئے اور جب اسمبلی انتخابات میں ایک سال باقی ہو تو ضمنی انتخاب نہیں کرایا جاسکتا، اس لئے میں عہدے سے استعفیٰ دے رہا ہوں۔

    ذرائع کے مطابق، اتراکھنڈ کے وزیر اعلیٰ تیرتھ سنگھ راوت نے بی جے پی صدر جے پی نڈا کو استعفیٰ دینے کی پیشکش اس لئے کی کیونکہ ریاست میں آئینی بحران پیدا ہوگیا ہے۔ تیرتھ سنگھ راوت نے خط میں کہا ہے کہ آرٹیکل 164 اے کے لحاظ سے انہیں وزیراعلیٰ بننے کے بعد 6 ماہ میں اسمبلی کا رکن بننا تھا، لیکن آرٹیکل 151 کہتا ہے کہ اگر اسمبلی انتخابات میں ایک سال سے کم کا وقت بچتا ہے تو ضمنی انتخاب نہیں کرائے جاسکتے۔ اس لئے میں اتراکھنڈ میں آئینی بحران نہ پیدا ہو، اس لئے وزیر اعلیٰ کے عہدے سے استعفیٰ دینا چاہتا ہوں۔

     

     
    Published by:Nisar Ahmad
    First published: