உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    Uttarakhand Election Results 2022: ابتدائی رجحانات میں کانگریس اور بی جے پی میں ٹکر

    Youtube Video

    Uttarakhand Election Results 2022 : بی جے پی اور کانگریس اپنی اپنی جیت کا دعوی کررہی ہیں تو وہیں اس مرتبہ عام آدمی پارٹی نے بھی دم بھرا ہے ، جس کی وجہ سے الیکشن مزید دلچسپ ہوگیا ۔

    • Share this:
      Uttarakhand Election Results 2022: اتراکھنڈ اسمبلی انتخابات میں  ووٹوں کی گنتی کا عمل شروع ہوگیا ہے ۔ اور رحجانات بھی آنے شروع ہوگئے ہیں ۔ اس مرتبہ ریاست میں ایک ہی مرحلہ میں 14 فروری کو سبھی 70 سیٹوں کیلئے ووٹ ڈالے گئے تھے ۔ اس دوران 62.5 فیصد ووٹ پڑے تھے ۔ اس کے ساتھ ہی وزیر اعلی پشکر سنگھ دھامی ، ہریش راوت اور ستپال مہاراج سمیت 632 امیدوروں کی قسمت ای وی ایم میں بند ہوگئی تھی ۔ بی جے پی اور کانگریس اپنی اپنی جیت کا دعوی کررہی ہیں تو وہیں اس مرتبہ عام آدمی پارٹی نے بھی دم بھرا ہے ، جس کی وجہ سے الیکشن مزید دلچسپ ہوگیا ۔

      وہیں اگر حتمی نتائج سے پہلے آئے ایگزٹ پولز کی بات کریں تو اس میں بی جے پی کو سبقت دکھائی گئی ہے ۔ ٹائمس ناو کے ایگزٹ پول میں بی جے پی کی واپسی ہوتی دکھ رہی ہے ۔ حالانکہ کانگریس اس کو سخت ٹکر دے رہی ہے ۔ ایگزٹ پولس میں بی جے پی کو 37 سیٹیں تو کانگریس کو 31 سیٹیں ملتی دکھ رہی ہیں ۔ اس کے علاوہ پہلی مرتبہ انتخابی میدان میں اتری عام آدمی پارٹی کو ایک تو دیگر کو ایک سیٹ ملتی نظر آرہی ہے ۔ وہیں سی ووٹر کے ایگزٹ پول کے مطابق بی جے پی کو 26-32 سیٹیں ، کانگریس کو 32-38 سیٹیں ، عام آدمی پارٹی کو  0-2 سیٹیں اور دیگر کے کھاتے میں 3-7 سیٹیں جاسکتی ہیں ۔ بتادیں کہ ایگزٹ پولس ووٹنگ کے دوران ہوئے سروے پر مبنی ہوتے ہیں اور اس کے نتائج کو حتمی نہیں مانا جاسکتا ہے ۔ کافی مواقع پر ایسا ہوا ہے جس میں انتخابی نتائج ، ایگزٹ پولس کے بالکل برعکس آئے ہیں ۔

      نیچے دیکھئے نتائج سے متعلق ہر اپ دیٹ

       

      ابتدائی رحجانات میں بی جے پی آگے چل رہی ہے ، مگر کانگریس بھی اس کو ٹکر دیتی نظر آرہی ہے ۔

      بی جے پی کے جنرل سکریٹری اور سینئر لیڈر کیلاش وجے ورگیہ نے سابق وزیر اعلیٰ رمیش پوکھریال نشنک، وزیر اعلی پشکر سنگھ دھامی اور دیگر رہنماؤں کے ساتھ میٹنگ کی۔وجے ورگیہ ماضی میں اس وقت کے وزیر اعلیٰ ہریش راوت کے خلاف کانگریس ایم ایل اے کی بغاوت کے دوران ریاستی سیاست میں سرگرم رہے تھے، جس کی وجہ سے اتراکھنڈ میں صدر راج نافذ ہوا تھا۔

      کانگریس کیمپ پارٹی کے مرکزی مبصر دیپیندر ہڈا، اتراکھنڈ کے پارٹی انچارج دیویندر یادو، انتخابی مہم کے سربراہ ہریش راؤت اور کانگریس کی ریاستی یونٹ کے صدر گنیش گوڈیال کے ساتھ بھی میٹنگ کر رہے ہیں اور صورتحال پر گہری نظر رکھے ہوئے ہے۔

      Assembly Election Results 2022: سخت سیکورٹی کےدرمیان5ریاستوں میں صبح8بجےشروع ہوگی ووٹوں کی گنتی، پھر آئیں گے رحجانات



      کئی پوسٹ پول سروے میں بی جے پی کو کچھ میں اور کانگریس کو کچھ میں اکثریت حاصل کرنے کی بات کہی گئی ہے۔ ان میں سے کئی میں کہا گیا کہ ان دو بڑی جماعتوں کے درمیان سخت مقابلہ ہے اور معلق اسمبلی کی صورتحال پیدا ہو سکتی ہے۔ یہ ایک ایسا منظر نامہ ہوگا جس میں حکومت سازی میں آزاد اور علاقائی جماعتوں جیسے AAP، SP، BSP اور اتراکھنڈ کرانتی دل کو حکومت سازی میں اہم رول ادا کرنا پڑسکتاہے۔

      اتراکھنڈ میں 70 رکنی اسمبلی ہے۔ بڑی جماعتیں ان باغیوں پر بھی نظر رکھے ہوئے ہیں جنہوں نے اپنے پارٹی امیدواروں کے خلاف آزاد حیثیت سے میدان میں اترا تھا۔ اس بار بی جے پی کے تیرہ باغی اور کانگریس کے چھ باغی میدان میں تھے۔
      Published by:Imtiyaz Saqibe
      First published: