ہوم » نیوز » شمالی ہندوستان

Uttarakhand Glacier Tragedy:اتراکھنڈحکومت نےمہلوکین کے اہل خانہ کے لیے معاوضہ کاکیااعلان

گلیشیئر پھٹ جانے(Glacier Burst in Uttrakhand) سے سیلاب سے متاثرہ دریاؤں میں زیر تعمیر 480 میگاواٹ کے تپوان وشنوگڈ پن بجلی پروجیکٹ کی سرنگ میں تقریبا 170 افراد کے پھنس جانے کا خدشہ ہے۔

  • Share this:
Uttarakhand Glacier Tragedy:اتراکھنڈحکومت نےمہلوکین کے اہل خانہ کے لیے معاوضہ کاکیااعلان
اتراکھنڈ کے سی ایم تریویندر سنگھ راؤت (CM Trivendra Singh Rawat)

اتراکھنڈ کے چمولی ضلع میں گلیشیئر پھٹ جانے(Glacier Burst in Uttrakhand) سے سیلاب سے متاثرہ دریاؤں میں زیر تعمیر 480 میگاواٹ کے تپوان وشنوگڈ پن بجلی پروجیکٹ کی سرنگ میں تقریبا 170 افراد کے پھنس جانے کا خدشہ ہے۔ جبکہ اب تک 16 افراد کو راحت کاری ٹیموں نے بچالیاہے۔یہاں راحت کے کام میں مصروف ٹیموں کو 10 افراد کی لاشیں ملی ہیں۔ ادھر ، اتراکھنڈ کے سی ایم تریویندر سنگھ راؤت (CM Trivendra Singh Rawat) نے اس تباہی کے دوران ہلاک ہونے والے افراد کے اہل خانہ کو 4- 4 لاکھ روپے کا معاوضہ دینے کا اعلان کیا ہے۔


اس کے علاوہ ، سی ایم راوت نے کہا کہ ہندوستانی فوج کی مدد سے راحت کے کام کیے جارہے ہیں ۔ این ڈی آر ایف کی ایک ٹیم دہلی سے یہاں پہنچی ہے۔ طبی سہولت کی فراہمی کو بھی یقینی بنانے کے لیے محکمہ صحت کی جانب سے خصوصی اقدامات کیے جارہے ہیں ۔ وزیراعلیٰ نے کہا کہ انہوں نے مختلف علاقوں کو فضائی سروے بھی کیاہے۔ اس کے علاوہ انہوں نے رینی گاؤں جانے والی سڑک کا جائزہ لیا ۔ اس سے پہلے ، راؤت نے بتایا تھا کہ آئی ٹی بی پی کے جوان رسی کے ذریعے سرنگ کے اندر 150 میٹر تک پہنچ چکے ہیں۔ جبکہ یہ سرنگ تقریبا 250 میٹر لمبی ہے۔



وزیر اعلی تریویندر سنگھ راؤت کے مطابق ، 13 میگاواٹ کے رشی گنگا پاور پروجیکٹ میں 35 افراد کام کررہے تھےاور سبھی لاپتہ ہیں۔ اس کے علاوہ اتراکھنڈ پولیس کے دو اہلکار بھی لاپتہ بتائے جارہے ہیں ۔ جبکہ تپوان پاور پراجیکٹ میں 176 کارکنان کام کر رہے تھے۔ اسی دوران ، پانچ مقامی چرواہے اپنی 180 بھیڑیں اور بکریوں کے وہاں موجود تھے۔ ہمیں یہ خدشہ ہے کہ لگ بھگ 125 افراد لاپتہ ہوگئے ہیں۔ اگرچہ یہ تعداد زیادہ ہوسکتی ہے۔

ہر ممکن مدد کرنے کا مرکزی حکومت نے دلایا یقین

مرکزی وزیر داخلہ امیت شاہ نے اتوار کے روز اتراکھنڈ کے ضلع چمولی میں گلیشیر پگھلنے سے سیلاب کے حالات پیدا ہونے کے پیش نظر وزیر اعلی تریویندر سنگھ راوت کو ہر ممکن مدد کی یقین دہانی کرائی ہے۔ امیت شاہ نے حکام کو ہدایت دی ہے کہ وہ ہیلی کاپٹر کے ذریعہ نیشنل ڈیزاسٹر رسپانس فورس (این ڈی آر ایف) کی چار ٹیمیں دہرادون سے جوشی مٹھ روانہ کریں۔ ہمالیائی سرحد کی حفاظت پر مامور ہند- تبت سرحدی پولس کو بھی جوشی مٹھ کے ارد گرد علاقے میں امدادی کاموں میں شامل ہونے کا حکم دیا گیا ہے۔

امدادی سرگرمیوں پر آج شام کو کابینہ کے سکریٹری راجیو گوبا کی میٹنگ ہونے کی توقع ہے۔واضح رہے کہ اتراکھنڈ میں ضلع چمولی کے رینی گاؤں میں گلیشیر کی زد میں آنے سے کم از کم 50 افراد کے ہلاک یا لاپتہ ہونے کا خدشہ ظاہر کیا گیا ہے۔گلیشیر کے ٹوٹنے سے رشی گنگا پاور پروجیکٹ مکمل طور پر تباہ ہوگیا ہے اور سیلاب سے الکانندا ندی کی آبی سطح میں کئی فٹ تک اضافہ ہوا ہے۔ ریاستی حکومت نے فوری طور پر کارروائی شروع کردی ہے اور ندی کے کنارے آباد لوگوں کو وہاں سے منتقل کیا جارہا ہے۔

یواین آئی ان پٹ کےساتھ نیوز18 اردو کی رپورٹ
Published by: Mirzaghani Baig
First published: Feb 07, 2021 09:43 PM IST