உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    جے این یو میں پھر تشدد: اے بی وی پی اور لیفٹ اتحاد کے درمیان ہوئی پُرتشدد تصادم، کئی طلبا ہوئے زخمی

    جے این یو میں پھر تشدد: اے بی وی پی اور لیفٹ اتحاد کے درمیان ہوئی پُرتشدد تصادم، کئی طلبا ہوئے زخمی

    جے این یو میں پھر تشدد: اے بی وی پی اور لیفٹ اتحاد کے درمیان ہوئی پُرتشدد تصادم، کئی طلبا ہوئے زخمی

    جواہر لال نہرو یونیورسٹی (JNU) میں ایک بار پھر تشدد (Violence) کی جانکاری ملی ہے۔ خبر ہے کہ لیفٹٹ تنظیم آل انڈیا اسٹوڈنٹ ایسوسی ایشن، اسٹوڈنٹس فیڈریشن آف انڈیا (SFI) اور اکھل بھارتیہ ودیارتھی پریشد (ABVP) کے اراکین کے درمیان پُرتشدد جھڑپ ہوگئی ہے، جس میں 12 سے زیادہ طلبا زخمی ہوگئے ہیں۔

    • Share this:
      نئی دہلی: جواہر لال نہرو یونیورسٹی (JNU) میں ایک بار پھر تشدد (Violence) کی جانکاری ملی ہے۔ خبر ہے کہ لیفٹٹ تنظیم آل انڈیا اسٹوڈنٹ ایسوسی ایشن، اسٹوڈنٹس فیڈریشن آف انڈیا (SFI) اور اکھل بھارتیہ ودیارتھی پریشد (ABVP) کے اراکین کے درمیان پُرتشدد جھڑپ ہوگئی ہے، جس میں 12 سے زیادہ طلبا زخمی ہوگئے ہیں۔ زخمی طلبا میں سے تین کی حالت بے حد نازک بنی ہوئی ہے۔ طلبہ تنظیم کے اراکین نے بتایا تصادم میں شدید طور پر زخمی طلبا کو نئی دہلی واقع ایمس میں داخل کرایا گیا ہے۔

      جے این یو میں دوگروپوں میں جھڑپ

      اطلاع کے مطابق، دہلی میں جے این یو کے اندر اتوار کی شام طلبا کے دو گروپوں میں بحث اور دھکا مکی ہوئی ہے۔ ابھی تک کی جانکاری کے مطابق، اکھل بھارتیہ ودیارتھی پریشد اور لیفٹ حامی طلبا کے درمیان کسی بات کو لے بحث ہوئی تھی، جس کے بعد جھگڑا اتنا بڑھ گیا کہ ہاتھا پائی تک کی نوبت آگئی۔ پولیس کو دی شکایت میں دونوں ہی گروپوں کے طلبا نے ایک دوسرے پر الزام لگایا ہے۔

      وسنت کنج پولیس نے دیا بیان

      ڈی سی پی ساوتھ ویسٹ گورو شرما کے مطابق، اتوار کو تھانہ وسنت کنج نارتھ میں نعرے بازی اور جھگڑے کی اطلاع ملی تھی۔ پولیس نے فوراً کال کا جواب دیا۔ حالانکہ موقع پر کسی طرح کا جھگڑا نہیں ہوا۔ پوچھ گچھ کرنے پر پتہ چلا کہ طلبہ یونین ہال میں میٹنگ منعقد کرنے کو لے کر طلبا کے دو گروپوں میں سخت نوک جھونک ہوئی۔

      یہ بھی پڑھیں۔

      پاکستان میں حکومت اور فوج کے درمیان تکرار تیز، عمران خان کی وزیر اعظم عہدے سے چھٹی طے


      جے این یو طلبہ یونین کی جانب سے نہیں کی گئی ہے شکایت

      جے این یو طلبہ یونین (جے این یو ایس یو) نے ابھی تک کوئی شکایت درج نہیں کرائی ہے۔ وہیں اے بی وی پی سے وابستہ طلبا نے تھانے میں جاکر تحریری شکایت دی۔ ساتھ ہی لیفٹ تنظیم سے وابستہ ایک طالب علم نے بھی شکایت دی ہے۔ دونوں فریق ایک دوسرے پر میٹنگ میں رخنہ اندازی کرنے اور دوسرے فریق سے مارپیٹ کرنے کا الزام لگا رہے ہیں۔ اس کے علاوہ جانچ جاری ہے۔ تحقیقات کے بعد قانونی کارروائی کی جائے گی۔
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: