உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    مغربی بنگال: درگا وسرجن سے لوٹ رہے لوگوں پر بم سے حملہ کا الزام، گاڑیوں میں کی گئی توڑ پھوڑ

    مغربی بنگال: درگا وسرجن سے لوٹ رہے لوگوں پر بم سے حملہ کا الزام، گاڑیوں میں کی گئی توڑ پھوڑ

    مغربی بنگال: درگا وسرجن سے لوٹ رہے لوگوں پر بم سے حملہ کا الزام، گاڑیوں میں کی گئی توڑ پھوڑ

    حادثہ کے وقت وہاں موجود لوگوں کا کہنا ہے کہ حملہ (Attack) اس وقت ہوا جب درگا پور (Durgapur) کے انا پورنا علاقے میں لوگ درگا وسرجن کرکے لوٹ رہے تھے۔ خبر ہے کہ جب تک پولیس وہاں پہن(Durga immersion) چتی اور شرپسند عناصر کو پکڑتی اس سے پہلے ہی سبھی وہاں سے فرار ہوگئے۔

    • Share this:
      کولکاتا: مغربی بنگال (West Bengal) کے درگا پور (Durgapur) میں ہفتہکی شب درگا وسرجن (Durga immersion) سے لوٹ رہی بھیڑ پر کچھ لوگوں پر دیسی بم سے حملہ (Bomb Attack) کئے جانے کا الزام ہے۔ بتایا جاتا ہے کہ بم کی آواز سے وہاں پر افراتفری مچ گئی۔ حملے کے دوران شرپسند عناصر نے گاڑیوں میں توڑ پھوڑ کی۔ حادثہ کے وقت وہاں موجود لوگوں کا کہنا ہے کہ حملہ اس وقت ہوا، جب درگاپور کے انا پورنا علاقے میں لوگ درگا وسرجن کرکے لوٹ رہے تھے۔ خبر ہے کہ جب تک پولیس وہاں پہنچتی اور شرپسند عناصر کو پکڑتی، اس سے پہلے سبھی وہاں سے فرار ہوگئے۔

      اطلاعات کے مطابق، درگا پور کے انا پورنا علاقے میں ہفتہ کی شب کچھ لوگ درگا وسرجن کرکے اپنے گھر لوٹ رہے تھے۔ اسی دوران کچھ لوگوں نے ان پر حملہ کردیا۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق، دونوں گروپوں کے درمیان پہلے شراب کو لے کر جھگڑا ہوچکا تھا۔ خبر ہے کہ ایک گروپ جب درگا وسرجن سے لوٹ رہا تھا تبھی دوسرے گروپ کے لوگوں نے انہیں راستے میں روک لیا اور شراب خریدنے کے لئے پیسے مانگنے لگے۔



      اسی بات پر دونوں گروپوں کے درمیان جھگڑا ہوگیا اور مارپیٹ شروع ہوگئی۔ معاملہ اتنا بڑھ گیا کہ دوسرے گروپ کے لوگوں نے بم سے حملہ کرنا شروع کردیا۔ بم کی آواز سن کر وہاں پر افراتفری مچ گئی۔ اس کے بعد دوسرے گروپ کے لوگوں نے وہاں موجود گاڑیوں میں توڑ پھوڑ کی اور وہاں سے فرار ہوگئے۔

      حادثہ کے بعد موقع پر پہنچی پولیس نے لوگوں کو خاموش کرایا اور زخمیوں کو اسپتال میں داخل کرایا۔ اے سی پی دھرب جیوتی مکھرجی نے بتایا کہ دو گروپوں کے درمیان حملے میں کئی لوگ زخمی ہوئے ہیں۔ زخمیوں کا اسپتال میں علاج کرایا جا رہا ہے۔ ابھی تک حملہ آوروں کی پہچان نہیں کی جاسکی ہے۔ پولیس نے جھگڑے کے دوران بم سے حملے کی بات سے انکار کیا ہے۔
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: