ہوم » نیوز » مشرقی ہندوستان

شہریت ترمیمی قانون اور این آر سی کے خلاف کولکاتہ میں خواتین کی ریلی ، کیا یہ مطالبہ

کولکاتہ میں خواتین کی جانب سے نکالی گٸی ریلی میں ہزاروں کی تعداد میں خواتین نے شرکت کی ۔ خواتین نے این آر ی اور سی اے اے کو نا قابل قبول قرار دیا ۔

  • Share this:
شہریت ترمیمی قانون اور این آر سی کے خلاف کولکاتہ میں خواتین کی ریلی ، کیا یہ مطالبہ
شہریت ترمیمی قانون اور این آر سی کے خلاف کولکاتہ میں خواتین کی ریلی ، کیا یہ مطالبہ ۔ تصویر : شبانہ جاوید ۔

کولکاتہ میں این آر سی اور سی اے اے کے خلاف خواتین کے احتجاج میں مزید شدت آگئی ہے ۔ جمعرات کو کولکاتہ میں خواتین کی جانب سے نکالی گٸی ریلی میں ہزاروں کی تعداد میں خواتین نے شرکت کی ۔ شہر کے اردو اکیڈمی سے گاندھی مجمسے تک ریلی نکالی گٸی ۔ گاندھی مجسمے کے سامنے خواتین کی میٹنگ بھی منعقد کی گٸی ۔ آپسی اتحاد اور بھاٸی چارگی کے پیغام کے ساتھ  بینر لئے ہوئے خواتین نے این آر ی اور سی اے اے کو نا قابل قبول قرار دیا ۔


ریلی میں شامل مسلم پرسنل لا بورڈ کی ممبر عظمی عالم نے سی اے اے کو ملک کے دستور کے خلاف بتاتے ہوٸے اس قانون کو ملک کے تمام لوگوں کے لٸے نقصاندہ قرار دیا ۔ انہوں نے اس قانون کو ملک کی جمہوریت کے خلاف بتایا اور حکومت سے اس قانون پر نظر ثانی کا مطالبہ کیا۔ ریلی میں ہر عمر کی خواتین شریک تھیں ۔


خواتین نے این آر ی اور سی اے اے کو نا قابل قبول قرار دیا ۔ تصویر : شبانہ جاوید ۔


کولکاتہ میں گزشتہ دس دنوں سے شہر کے پارک سرکس میدان میں خواتین کا دھرنا بھی جاری ہے ۔ خواتین اس اہم مسئلہ پر حکومت کے سامنے اپنا احتجاج درج کرارہی ہیں ۔ آٸندہ 22 جنوری تک احتجاج جاری رکھنے کا فیصلہ کیا گیا ہے ۔  خواتین جماعتوں نے اس امید کا اظہار کیا ہے کہ حکومت اس معاملے میں اپنا موقف نرم کرے گی ۔ ساتھ ہی ریلی میں شامل پرینکا بنرجی نے این ار سی وسی اے اے کے خلاف احتجاج کو اہم بتاتے ہوٸے احتجاج جاری رکھنے کی ضرورت پر زور دیا ۔
First published: Jan 16, 2020 07:04 PM IST