உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    ابو عاصم نے مہاراشٹر اسمبلی میں ذاکر نائک پر پابندی کے خلاف اٹھائی آواز، کہا، ذاکر نائک اسلام سے متعلق غلط فہمیوں کا کر رہے ہیں ازالہ

    ابو عاصم اعظمی: فائل فوٹو

    ابو عاصم اعظمی: فائل فوٹو

    ابوعاصم اعظمی نے کہا کہ انٹرنیشنل اسلامک اسکول کے منجمد بینک اکاؤنٹ کو کھولنے کے احکامات جاری کئے جانے چاہئیں اور اسکولوں کے طلباء کے مستقبل کو ذہن میں رکھ کر حکومت کو کوئی فیصلہ کرناچاہئے ۔

    • UNI
    • Last Updated :
    • Share this:

      ممبئی، ناگپور۔  سماجوادی پارٹی ورکن اسمبلی ابوعاصم اعظمی نے ایوان میں توجہ طلب نوٹس پر بحث کر تے ہوئے عالمی شہرت یافتہ مبلغ ڈاکٹر ذاکر نائک کے زیر اثر جاری انٹرنیشنل اسلامک اسکول کے بینک اکاؤنٹ کو منجمد کئے جانے کو غلط قرار دیتے ہوئے کہا کہ بینک اکاؤنٹ منجمد ہونے کے سبب یہاں کام کر نے والے اساتذہ و ملازمین اپنی نتخواہوں سے محروم ہوگئے ہیں،  ساتھ ہی بچوں کو اسکول کے ذریعہ جو کھانے کی چیزیں مہیا کی جاتی ہیں وہ بھی اب فراہم نہیں کی جارہی ہیں ۔ ذاکر نائک کی تنظیم پر پابندی کا معاملہ ایوان میں اٹھاتے ہوئے ابوعاصم اعظمی نے کہا کہ ذاکر نائک گزشتہ 25برسوں سے تبلیغی سر گرمیاں چلارہے ہیں اور اسلام کے تعلق سے غلط فہمیاں دور کر نے کے علاوہ اسلامی تعلیمات کو عام لوگوں اور برادران وطن میں عام کر نے کی خدمات انجام دے رہے ہیں۔ لیکن غلط وجوہات کی بناء پر ان کی تنظیم آئی آر ایف پر پابندی عائد کر دی گئی ہے۔  اتنا ہی نہیں این آئی اے نے 18نومبر 2008 ء کو انٹرنیشنل اسلامک اسکول کے بینک اکاؤنٹ بھی منجمد کر دئیے ہیں جبکہ اس اسکول میں 165 طلبا ء اور 100 ملازمین بر سر روزگار ہیں اس سے ملازمین کی صرف تنخواہیں ہی نہیں بلکہ بچوں کا مڈڈے میل بھی بند ہوگیا ہے جس کے سبب بچوں اور ملازمین کو کافی پریشانیوں کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔ اسی وجہ سے اسکول بند ہونے کا خطرہ بھی بڑھ گیا ہے۔


      ابوعاصم اعظمی نے کہا کہ انٹرنیشنل اسلامک اسکول کے منجمد بینک اکاؤنٹ کو کھولنے کے احکامات جاری کئے جانے چاہئیں اور اسکولوں کے طلباء کے مستقبل کو ذہن میں رکھ کر حکومت کو کوئی فیصلہ کرناچاہئے ۔

      First published: