ہوم » نیوز » مغربی ہندوستان

دلت اسکالر روہت ویمولا کی خودکشی کو لیکر ممبئی میں زبردست احتجاج

ممبئی : حیدرآباد میں دلت اسکالر روہت ویمولا کی خودکشی کو لیکر ممبئی کی مختلف تنظیموں نے جسٹس فور روہت جوائنٹ ایکشن کمیٹی کے بینر تلے زبردست احتجاج کیا اور بائیکلہ رانی باغ سے لیکر جے جے برج تک کا پیدل مارچ کیا جس کے بعد پولیس نے مظاہرین کو اپنی گاڑیوں میں بیٹھا کرآزاد میدان لایا جہاں بعد میں ایک احتجاجی جلسے کا انعقاد کیا گیا تھا ۔

  • UNI
  • Last Updated: Feb 01, 2016 06:41 PM IST
  • Share this:
  • author image
    NEWS18-Urdu
دلت اسکالر روہت ویمولا کی خودکشی کو لیکر ممبئی میں زبردست احتجاج
ممبئی : حیدرآباد میں دلت اسکالر روہت ویمولا کی خودکشی کو لیکر ممبئی کی مختلف تنظیموں نے جسٹس فور روہت جوائنٹ ایکشن کمیٹی کے بینر تلے زبردست احتجاج کیا اور بائیکلہ رانی باغ سے لیکر جے جے برج تک کا پیدل مارچ کیا جس کے بعد پولیس نے مظاہرین کو اپنی گاڑیوں میں بیٹھا کرآزاد میدان لایا جہاں بعد میں ایک احتجاجی جلسے کا انعقاد کیا گیا تھا ۔

ممبئی : حیدرآباد میں دلت اسکالر روہت ویمولا کی خودکشی کو لیکر ممبئی کی مختلف تنظیموں نے جسٹس فور روہت جوائنٹ ایکشن کمیٹی کے بینر تلے زبردست احتجاج کیا اور بائیکلہ رانی باغ سے لیکر جے جے برج تک کا پیدل مارچ کیا جس کے بعد پولیس نے مظاہرین کو اپنی گاڑیوں میں بیٹھا کرآزاد میدان لایا جہاں بعد میں ایک احتجاجی جلسے کا انعقاد کیا گیا تھا ۔


مظاہرین میں طلبہ ، مختلف شعبہ حیات سے تعلق رکھنے والی شخصیات کے علاوہ برقعہ پوش خواتین اور باشرع افراد کی ایک بڑی تعداد بھی موجود تھی ۔ رانی باغ کے پاس سے جب یہ جلوس دوپہر ایک بجے شروع ہوا تو تقریبا پانچ ہزار سے زائد افراد اس میں شامل تھے جس میں مختلف کالیجیس کے طلبہ، متعدد طلبہ کی جماعتوں کے نمائندے ، دلت تنظیموں کے رضاکاران اور دیگر مرکزی حکومت کے خلاف سخت لفظوں میں نعرے لگا رہے تھے ۔


عام آدمی پارٹی ، پیوپلس ڈیموکریٹک پارٹی ، ویلفیئر پارٹی آف انڈیا ، کمیونسٹ پارٹی آف انڈیا اور دیگر نے اس احتجاجی جلسے میں بڑے بڑے بینر اور پلے کارڈ لے رکھے تھے جس میں ملک میں عدم رواداری کے خلاف سخت احتجاج کیا گیا تھا اور مرکزی حکومت کو نشانہ بنایا گیا تھا ۔


احتجاجی جلسے میں مسلم سماجی خادمین سلیم الوارے ، فیروز میتھی بور والا ، سید فرقان احمد ، سعید خان اور دیگر بھی شامل تھے ۔ پولیس نے سخت حفاظتی بندوبست کیا تھا اور مورچے کی وجہ سے ٹریفک کا نظام بھی متاثر ہوا ۔


ودھان بھون تک پیدل مارچ کرنے والے اس مورچے کو جے جے برج کے آغاز سے قبل ہی روک دیا گیا تھا اور مظاہرین کو پولیس جیپ میں بیٹھا کر آزاد میدان لے جایا گیا ۔ احتجاجی جلسے میں دو ٹرک بھی شامل تھے جس پر نوجوان طلبأ ناٹک پیش کر کے احتجاج کر رہے تھے ۔

First published: Feb 01, 2016 06:41 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading