ہوم » نیوز » مغربی ہندوستان

کوروناوائرس مشکوک افراد کی جانچ کے لئے پہنچی ڈاکٹروں کی ٹیم پر جان لیوا حملہ

ناندیڑ کے دھنے گاؤں کا یہ معاملہ ہے۔ یہاں پونے سے چار افراد آکر چوری چھپے رہ رہے ہیں۔ طبی عملہ اپنے معمول کی طرح گاؤں میں سروے کا کام کررہا تھا۔ اس دوران کسی نے انہیں ان چاروں افراد کے بارے میں اطلاع دی جو حال ہی میں پونے سے لوٹے ہیں۔حالانکہ یہ لوگ دھنےگاؤں کے ہی رہنے والے ہیں لیکن روزگار کے حصول میں کئی سالوں سے پونے میں منتقل ہوگئے تھے۔ لیکن جیسے ہی کورونا کا مسئلہ سامنے آیا ہے یہ لو گ بھی بچتے بچاتے اور چوری چھپے پونے سے نکل کر اپنے گاؤں آگئے تھے اور یہاں بنا کسی کوکچھ بتائے رہ رہے تھے۔جیسے ہی طبی عملہ کو ان کے آنے کی خبر ہوئی یہ لوگ اس مکان پر گئے اور انہوں نے لوگوں سے پوچھ تاچھ کی لیکن ان لوگوں نے اپنے بارے میں کچھ بتانے کے بجائے طبی سے ہی الٹے سوالات کرنے لگے کہ وہ کون ہے اور یہاں کیوں آئے اور کسی بھی طرح کی معلومات دینے سے انکار کردیا۔

  • Share this:
کوروناوائرس مشکوک افراد کی جانچ کے لئے پہنچی ڈاکٹروں کی ٹیم پر جان لیوا حملہ
ناندیڑ کے دھنے گاؤں کا یہ معاملہ ہے۔ یہاں پونے سے چار افراد آکر چوری چھپے رہ رہے ہیں۔ طبی عملہ اپنے معمول کی طرح گاؤں میں سروے کا کام کررہا تھا۔ اس دوران کسی نے انہیں ان چاروں افراد کے بارے میں اطلاع دی جو حال ہی میں پونے سے لوٹے ہیں۔حالانکہ یہ لوگ دھنےگاؤں کے ہی رہنے والے ہیں لیکن روزگار کے حصول میں کئی سالوں سے پونے میں منتقل ہوگئے تھے۔ لیکن جیسے ہی کورونا کا مسئلہ سامنے آیا ہے یہ لو گ بھی بچتے بچاتے اور چوری چھپے پونے سے نکل کر اپنے گاؤں آگئے تھے اور یہاں بنا کسی کوکچھ بتائے رہ رہے تھے۔جیسے ہی طبی عملہ کو ان کے آنے کی خبر ہوئی یہ لوگ اس مکان پر گئے اور انہوں نے لوگوں سے پوچھ تاچھ کی لیکن ان لوگوں نے اپنے بارے میں کچھ بتانے کے بجائے طبی سے ہی الٹے سوالات کرنے لگے کہ وہ کون ہے اور یہاں کیوں آئے اور کسی بھی طرح کی معلومات دینے سے انکار کردیا۔

کورونا وائرس (coronavirus )  سے متاثرہ افراد کی جانچ کرنے اور انہیں اسپتالوں میں داخل کرنے کی خدمات انجام دے رہے ڈاکٹروں پر جان لیوا حملے (attack on medical Team )  اب عام ہوتے جارہے ہیں۔ ان حملوں سے طبی شعبہ میں خدما ت انجام دے رہے لوگ شدید ڈر و خوف کے حالات کا سامنا کررہے ہیں۔ طبی عملہ پر جان لیوا حملہ کا ایساہی ایک معاملہ آج ناندیڑ (Nanded )  میں پیش آیا ہے۔ ناندیڑ کے دھنے گاؤں کا یہ معاملہ ہے۔ یہاں پونے سے چار افراد آکر چوری چھپے رہ رہے ہیں۔ طبی عملہ اپنے معمول کی طرح گاؤں میں سروے کا کام کررہا تھا۔ اس دوران کسی نے انہیں ان چاروں افراد کے بارے میں اطلاع دی جو حال ہی میں پونے سے لوٹے ہیں۔حالانکہ یہ لوگ دھنےگاؤں کے ہی رہنے والے ہیں لیکن روزگار کے حصول میں کئی سالوں سے پونے میں منتقل ہوگئے تھے۔ لیکن جیسے ہی کورونا کا مسئلہ سامنے آیا ہے یہ لو گ بھی بچتے بچاتے اور چوری چھپے پونے سے نکل کر اپنے گاؤں آگئے تھے اور یہاں بنا کسی کوکچھ بتائے رہ رہے تھے۔جیسے ہی طبی عملہ کو ان کے آنے کی خبر ہوئی یہ لوگ اس مکان پر گئے اور انہوں نے لوگوں سے پوچھ تاچھ کی لیکن ان لوگوں نے اپنے بارے میں کچھ بتانے کے بجائے طبی سے ہی الٹے سوالات کرنے لگے کہ وہ کون ہے اور یہاں کیوں آئے اور کسی بھی طرح کی معلومات دینے سے انکار کردیا۔

وہیں جب طبی عملہ کے لوگوں نے مقامی سرپنچ کو طلب کیا اور سرپنچ کی موجودگی میں ان سے ان کے بارے میں معلومات دینے کی بات تک ان چاروں نے سرپنچ اور طبی عملہ پر جان لیوا حملہ کردیا۔ ان کے پاس تلواریں اور دھار دار ہتھیار بھی موجود تھے۔ سرپنچ اور طبی عملہ پر حملہ ہونے کی اطلاع ملتے ہی گاؤں کے لوگ کثیر تعداد میں وہاں جمع ہونے لگے اور ان لوگوں نے چاروں کورونا مشکوک افراد (covid19 suspect) کی جم کر پٹائی کردی اور انہیں زخمی کردیا۔


اس دوران پولیس بھی وہاں پہنچی اور پولیس نے پونے سے آئے چاروں افراد کو علاج کے لئے سرکاری اسپتال داخل کرادیا۔ اس سلسلہ میں طبی عملہ میں شامل ڈاکٹروں نے بتایا کہ کورونا سے بچنے کے لئے پورے ملک میں لاک ڈاؤن کیا گیاہے۔ لاک ڈاؤن کے دوران جہاں ایک طرف تمام ادارے بند کئے گئے ہیں وہیں دوسری طرف لوگوں کو بھی اپنے اپنے گھروں میں بند رہنے کی اپیل کی گئی ہے۔ اسی طرح کورونا متاثرہ علاقوں سے آئے افراد کے بارے میں بھی معلومات حاصل کی جارہی ہے اورگھر گھر جاکر سرو ے (Corona Testing Servey)کیا جارہا ہے لوگوں سے پوچھ تاچھ کے ذریعہ یہ معلوم کرنے کی کوشش کی جارہی ہے کہ کسی کو کورونا سے متعلق علامت پائی جاتی ہے یا پھر کسی کورونا متاثرہ علاقے کا کوئی شخص یہاں آیا تو نہیں۔ ایسے ہی معاملوں کی تفتیش کرنے کے دوران ناندیڑ کے دھنے گاؤں میں پونے سے آئے ہوئے چار افراد کے بارے میں ضلع انتظامیہ کو اطلاع ملی ۔


بتادیں کہ طبی عملہ پولیس کو ساتھ لیکر ان چاروں کے بارے میں تفصیلات جاننے کیلئے دھنے گاؤں پہنچا ۔جیسے ہی انہیں طبی عملہ اور سرپنچ کے آنے کی خبر ہوئی ان لوگوں نے برہمی ظاہر کرتے ہوئے طبی عملہ پر اور سرپنچ پر تلور سے جان لیوا حملہ کیا ۔اس حملہ میں دھنے گاؤں کے سرپنچ کا ایک دات ٹوٹ چکا ہے جبکہ طبی عملہ ایک خاتون ملازمہ کو بھی زخمی کیا گیاہے۔ طبی عملہ پر حملے کی اطلاع ملتے ہی گاؤں کے لوگ وہاں جمع ہوگئے اور انہوں نے پونے سے آئے چار حملہ آوروں کی جم کر پٹائی کردی اور انہیں شدید زخمی کردیا ۔چار وں زخمیوں کو ضلع اسپتال میں بھرتی کیا گیاہے اور طبی عملہ کی جانب سے ان کے کورونا کی جانچ بھی کی جارہی ہے ۔ان چاروں کی شناخت ستیش مہاگڑے ،سومیت مہاگڑے ،پرمود مہاگڑے ،پروین مہاگڑے کے طورپر کی گئی ہے ۔اس معاملے میں ناندیڑ گرامین پولیس اسٹیشن میں حملہ آور چاروں کے خلاف کیس درج کیا گیاہے۔
First published: Apr 16, 2020 08:08 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading