உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    جسمانی طور پر ڈلیوری کے لئے معذور 13 سالہ نابالغ لڑکی کے اسقاط حمل سے بامبے ہائی کورٹ کا انکار: جانیں پورا معاملہ

    ممبئی ہائی کورٹ

    ممبئی ہائی کورٹ

    13 سالہ نابالغ کے والد نے اسقاط حمل کی اجازت کے لئے عدالت میں درخواست داخل کی تھی۔ جس میں کہا تھا کہ جسمانی طور پر ڈلیوری کے لئے معذور ہے لہذا اسے اسقاط حمل کی اجازت دی جانی چاہئے۔

    • Share this:
    بامبے ہائی کورٹ نے ایک نابالغ کو 33 ہفتے کی حمل کو ختم کرنے کی اجازت دینے سے انکار کردیا۔ متاثرہ لڑکی کے والد نے عدالت میں عرضی داخل کی تھی جس میں کہا تھا کہ چونکہ نابالغ جسمانی طور پر ڈلیوری کے لئے معذور ہے لہذا اسے اسقاط حمل کی اجازت دی جانی چاہئے۔ 13 سالہ نابالغ کے والد نے اسقاط حمل کی اجازت کے لئے عدالت میں درخواست داخل کی تھی۔ جس میں کہا تھا کہ جسمانی طور پر ڈلیوری  کے لئے معذور ہے لہذا اسے اسقاط حمل کی اجازت دی جانی چاہئے۔ حمل کے 33 ہفتوں کو ختم کرنے کا مطالبہ کیا تھا۔ عدالت نے اس کیس میں جے جے اسپتال کے ڈاکٹروں کے رپورٹ کی بنیاد پر فیصلہ سنایا۔
    اس معاملے میں ، ہائی کورٹ نے لڑکی کے طبی معائنے کے لئے جے جے اسپتال کے ڈاکٹروں کا ایک پینل بنایا تھا تاکہ وہ لڑکی کی جانچ کر سکے۔  رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ اس مرحلے پر ماں کو اسپتال میں بچے کے ساتھ موجود ہونے کی ضرورت ہوگی۔ بتایا جارہا ہے کہ 7 ماہ قبل اس کے قریب رہنے والے نے نابالغ کے ساتھ عصمت دری کی تھی ، ملزم نے اسے تنہا پاکر اس کو دھمکی دیی اور اس کے ساتھ زیادتی کی۔ نابالغ نے ڈر۔خوف اور دھمکی کے سبب گھر میں کسی کو کچھ نہیں بتایا۔

    جب پیٹ میں ابھار نظر آیا تو معاملہ سامنے آگیا۔ اس معاملے میں 23 فروری کو ملزم کے خلاف ایف آئی آر درج کی گئی اور لڑکی 30 ہفتوں کی حاملہ پائی گئی تھی۔ 13 سال کی بچی کے ساتھ سات ماہ پہلے پڑوسی نے اپنی حوس کا شکار بنایا تھا جس کے بعد بچی حاملہ ہو گئی اور کسی کو ڈر کی وجہ سے کچھ نہ بتایا اور اب بچی کے باپ نے کورٹ میں اس کے اسقاب حمل کی درخواست داخل کی تھی۔

    یہ بھی پڑھیں: بیوی نے پہلےشوہر کو دکھائی فحش فلم، کرسی سے ہاتھ۔پاؤں باندھے، کیا سیکس اور پھر کر ڈالا ایسا، اڑ گئے ہوش
    Published by:Sana Naeem
    First published: