ہوم » نیوز » No Category

یکساں سول کوڈ کے خلاف ناندیڑ میں اجلاس عام کا انعقاد، شریعت میں مداخلت پر مودی حکومت کی تنقید

ناندیڑ۔ تین طلاق کے مسئلہ پر حکومت کی جانب سے شرعی معاملات میں مداخلت کے خلاف ملک بھر میں شہروں کے علاوہ قصبوں اور دیہاتوں میں بھی مسلم پرسنل لا بورڈ کی حمایت میں جلسے منعقد کئے جارہے ہیں ۔

  • ETV
  • Last Updated: Oct 25, 2016 06:45 PM IST
  • Share this:
  • author image
    NEWS18-Urdu
یکساں سول کوڈ کے خلاف ناندیڑ میں اجلاس عام کا انعقاد، شریعت میں مداخلت پر مودی حکومت کی تنقید
ناندیڑ۔ تین طلاق کے مسئلہ پر حکومت کی جانب سے شرعی معاملات میں مداخلت کے خلاف ملک بھر میں شہروں کے علاوہ قصبوں اور دیہاتوں میں بھی مسلم پرسنل لا بورڈ کی حمایت میں جلسے منعقد کئے جارہے ہیں ۔

ناندیڑ۔ تین طلاق کے مسئلہ پر حکومت کی جانب سے شرعی معاملات میں مداخلت کے خلاف ملک بھر میں شہروں کے علاوہ قصبوں اور دیہاتوں میں بھی مسلم پرسنل لا بورڈ کی حمایت میں جلسے منعقد کئے جارہے ہیں ۔ ناندیڑ کے مدکھیڑ میں بھی ایسا ہی ایک اجلاس کا انعقاد کیا گیا ۔اجلاس میں علماء و دانشوروں نے مرکز کی مودی حکومت پر سخت تنقید کی ۔ مرکزی حکومت ان دنوں طلاق ثلاثہ اور تعدد ازدواج کے معاملہ میں شرعی قوانین میں تبدیلی کی بات کررہی ہے اور ساتھ ہی یکساں سول کوڈ کے نفاذ کی بھی کوششیں کی جارہی ہیں ۔ حکومت کی ان کوششوں نے مسلمانوں میں شدید بے چینی پیدا کردی ہے ۔


حکومت کو اپنی ناراضگی کا احساس کروانے کے لئے ناندیڑ کے مدکھیڑ میں ایک جلسہ عام میں شریک علماء نے ایک طرف جہاں حکومت کو انتباہ دیا کہ وہ شرعی معاملات میں مداخلت کرنا بند کردے وہیں دوسری طرف مسلمانوں کو بھی اپنے دین وشریعت پر مکمل عمل کرنے کا مشورہ دیا ۔ طلاق ثلاثہ کے معاملہ میں وزیر اعظم مودی نے گذشتہ روز ایک تقریب سے خطاب کرتے ہوئے مسلم خواتین سے ہمدردی کا دعوی کرتے ہوئے تین طلاق کے معاملہ کو مسلم خواتین کے ساتھ ظلم کے مترادف قراردیا تھا ۔ مولانا سرور قاسمی نے اپنے خطاب میں وزیراعظم مودی کو آئینہ دکھانے کی کوشش کی اور کہا کہ مسلم خواتین سے ہمدردی کے جو دعوے وہ کررہے ہیں وہ جھوٹےہیں۔ انہوں نے اپنی بیوی کو خود اس کے حقوق سے محروم  کررکھا ہے۔   حالات حاضرہ کے عنوان پر منعقدہ اجلاس میں مختلف مکاتب فکر کے علماء کو ایک اسٹیج پر مدعو کرکے مسلمانوں کے باہمی اتحاد کی ایک مثال پیش کرنے کی کوشش کی گئی اور اس اجلاس کے ذریعہ یہ پیغام دینے کی کوشش کی گئی کہ شرعی معاملات میں سبھی مکتب فکر کے علماء اوران کے ماننے والے متحد ہیں ۔اجلاس میں ناندیڑ ضلع کے مختلف مقامات سے سیکڑوں کی تعداد میں لوگوں نے شرکت کی اور باہمی اتحاد کا ثبوت پیش کیا ۔

First published: Oct 25, 2016 06:45 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading