Choose Municipal Ward
    CLICK HERE FOR DETAILED RESULTS
    ہوم » نیوز » مغربی ہندوستان

    عالمی صحت تنظیم نے ممبئی کی دھاراوی جھگی بستی کو کامیاب ماڈل مانا

    دھاراوی میں انفیکشن کے بڑھ رہے معاملوں کی سب سے بڑی وجہ وہاں کی گھنی بستی تھی۔

    • Share this:
    عالمی صحت تنظیم  نے ممبئی کی دھاراوی جھگی بستی کو کامیاب ماڈل مانا
    عالمی صحت تنظیم نے ممبئی کی دھاراوی جھگی بستی کو کامیاب ماڈل مانا

    ممبئی۔ عالمی صحت تنظیم (World Health Organisation-WHO)  نے ممبئی کی جھگی بستی دھاراوی (Dharavi) میں کووڈ۔ انیس کو روکنے کے لئے کی گئی کوششوں کا کامیاب ماڈل  (Success Model) کے طور پر اعتراف کیا ہے۔ ایشیا کی سب سے بڑی جھگی بستی دھاراوی کو لے کر اپریل اور مئی مہینے میں کہا جا رہا تھا کہ یہاں پر ’ کورونا دھماکہ‘ ہو سکتا ہے۔ اچانک بڑھے معاملوں کو لے کر انتظامیہ کے ہاتھ پاوں پھول گئے تھے لیکن پھر تقریبا پانچ ہزار صحت عملے کی محنت نے رنگ دکھایا۔ جون مہینے میں دھاراوی میں نئے معاملوں کی تعداد کو کافی حد تک قابو میں کر لیا گیا۔


    گھنی بستی کی وجہ سے بڑھ رہے تھے معاملے


    دھاراوی میں انفیکشن کے بڑھ رہے معاملوں کی سب سے بڑی وجہ وہاں کی گھنی بستی تھی۔ تقریبا  2.5 لاکھ لوگ فی اسکوائر کلومیٹر کے دائرے میں دھاراوی میں رہتے ہیں یعنی ڈھائی اسکوائر کلومیٹر کے اندر تقریبا سات سے آٹھ لاکھ لوگوں کی آبادی ہے۔ یہاں رہنے والے لوگوں میں زیادہ تر تعداد مزدوروں کی ہے۔



    4T فارمولے پر کیا گیا گام

    دھاراوی کے رکن اسمبلی اور ریاستی وزیر تعلیم ورسا گائیکواڑ کے مطابق، ان کے اسمبلی حلقہ دھاراوی میں اس انفیکشن کو روکنا ان کے لئے ایک بڑا چیلنج تھا۔ آج جس طرح سے انفیکشن دھاراوی میں رکا ہے وہ پورے ملک کے لئے ایک مثال ہے اور ملک بھر میں اس طریقے سے دھاراوی پیٹرن کو نافذ کرنا چاہئے۔ دھاراوی میں انفیکشن روکنے کے لئے بی ایم سی نے 4 ٹی فارمولا نافذ کیا۔ یعنی ٹریسنگ، ٹریکنگ، ٹیسٹنگ اور ٹریٹنگ۔ اس 4 ٹی فارمولے کے تحت دھاراوی میں آج کورونا انفیکشن معاملوں کی تعداد کم ہو گئی ہے۔ ہر دن دھاراوی میں کورونا کے معاملے ایک عدد پر آ گئے ہیں۔
    Published by: Nadeem Ahmad
    First published: Jul 11, 2020 07:55 AM IST
    corona virus btn
    corona virus btn
    Loading