ہوم » نیوز » مغربی ہندوستان

دردناک : گھر میں پیسٹ کنٹرول کروانا پڑا مہنگا ، چار سالہ بچی کی موت ، علاقہ میں غم کی لہر

کسار وڈوالی کے سینئر پولیس انسپکٹر کشور کھیرنار نے بتایا کہ گھر میں پیسٹ کنٹرول کیا گیا تھا اور اس کے بعد پورے گھر والے باہر چلے گئے تھے ۔ کچھ دیر بعد جب گھر والے واپس آئے تو وہ پیسٹ کنٹرول کی بدبو برداشت نہیں کر سکے ۔

  • Share this:
دردناک : گھر میں پیسٹ کنٹرول کروانا پڑا مہنگا ، چار سالہ بچی کی موت ، علاقہ میں غم کی لہر
دردناک : گھر میں پیسٹ کنٹرول کروانا پڑا مہنگا ، چار سالہ بچی کی موت ، علاقہ میں غم کی لہر

گھوڑ بندر: گھر میں پیسٹ کنٹرول کروانا ایک کنبہ کو کافی مہنگا پڑگیا ۔ پیسٹ کنٹرول کی بدبو کی وجہ سے ایک کنبہ اپنی چار سالہ بچی سے محروم ہوگیا ۔ فیبریکیشن کا کام کرنے والے راجو پنڈورنگ پالشیتکر اپنی بیوی اور چار سالہ بیٹی ترتوی کے ساتھ گھوڑبندر کے ڈیفوڈیل سوسائٹی میں رہتے ہیں ۔ اس حادثہ کے بعد علاقج میں غم کا ماحول ہے ۔


ہفتہ 13 مارچ کے دن انہوں نے اپنے گھر میں پیسٹ کنٹرول کرایا اور مکان بند کرکے کام سے باہر چلے گئے اور شام کو جب وہ اپنے گھر والوں کے ساتھ واپس آئے تو گھر میں بہت تیز بدبو آرہی تھی ، جس کی وجہ سے ان کی اہلیہ بیہوش ہوگئیں ۔ دوسری طرف شدید بدبو کے سبب ان کی بیٹی کی موت ہوگئی ۔ پولیس نے معاملہ درج کرکے تفتیش شروع کردی ہے ۔ پولیس کے مطابق ابتدائی تفتیش میں یہ بات سامنے آئی ہے کہ پیسٹ کنٹرول کے بعد دروازوں اور کھڑکیوں کو کھلا رکھا جانا چاہئے  تھا ، لیکن مکان بند یونے کی وجہ سے بدبو پھیل گئی اور درد ناک سانحہ پیش آیا ۔


کسار وڈوالی کے سینئر پولیس انسپکٹر کشور کھیرنار نے بتایا کہ گھر میں پیسٹ کنٹرول کیا گیا تھا اور اس کے بعد پورے گھر والے باہر چلے گئے تھے ۔ کچھ دیر بعد جب گھر والے واپس آئے تو وہ پیسٹ کنٹرول کی بدبو برداشت نہیں کر سکے ۔ راجو پانڈورنگ کی بیوی بے ہوش ہوگئی اور چار سالہ بچی کی طبیعت بگڑ گئی  ۔اسے قریبی اسپتال لے جایا گیا ، جہاں ڈاکڑوں نے اس کو مردہ قرار دے دیا ۔ راجو کی اہلیہ کی طبیعت میں بہتری آرہی ہے ۔


اس واقعے کے بعد  پولیس کی جانب سے لوگوں سے اپیل کی جارہی ہے کہ وہ پیسٹ کنٹرول کے دوران چھوٹے بچوں کو اس سے دور رکھیں اور گھر کی کھڑکیاں کھول کر رکھیں ۔ تاکہ گھر سے کیمیکل کی بدبو باہر نکل سکے ۔ پولیس نے سی آر پی سی ایکٹ 174 کے تحت مقدمہ درج کرکے معاملہ میں مزید جانچ شروع کردی ہے ۔
Published by: Imtiyaz Saqibe
First published: Mar 16, 2021 05:06 PM IST