اپنا ضلع منتخب کریں۔

    گجرات کی 15ویں اسمبلی میں 105 نئے چہرے، 14 خواتین اور 1 مسلم MLA۔ 77 موجودہ ایم ایل اے

    اس بار ریاستی اسمبلی میں 105 نئے ممبران ہوں گے، 14 خواتین ممبران اور 1 مسلم ممبر۔ موجودہ 77 ایم ایل اے کے علاوہ جنہیں دوبارہ منتخب کیا گیا ہے۔ گجرات کی 15 ویں قانون ساز اسمبلی نئے اور تجربہ کار اراکین کا مجموعہ بننے کیلئے تیار ہے۔

    اس بار ریاستی اسمبلی میں 105 نئے ممبران ہوں گے، 14 خواتین ممبران اور 1 مسلم ممبر۔ موجودہ 77 ایم ایل اے کے علاوہ جنہیں دوبارہ منتخب کیا گیا ہے۔ گجرات کی 15 ویں قانون ساز اسمبلی نئے اور تجربہ کار اراکین کا مجموعہ بننے کیلئے تیار ہے۔

    اس بار ریاستی اسمبلی میں 105 نئے ممبران ہوں گے، 14 خواتین ممبران اور 1 مسلم ممبر۔ موجودہ 77 ایم ایل اے کے علاوہ جنہیں دوبارہ منتخب کیا گیا ہے۔ گجرات کی 15 ویں قانون ساز اسمبلی نئے اور تجربہ کار اراکین کا مجموعہ بننے کیلئے تیار ہے۔

    • News18 Urdu
    • Last Updated :
    • Gujarat, India
    • Share this:
      گاندھی نگر: گجرات اسمبلی انتخابات 2022 کے نتائج آنے کے بعد اب نئی حکومت 12 دسمبر کو حلف لے گی۔ بی جے پی گجرات میں لگاتار ساتویں بار حکومت بنائے گی۔ انتخابی نتائج نے گجرات کی 15ویں قانون ساز اسمبلی کی نوعیت کا بھی فیصلہ کردیا ہے، جس میں بی جے پی کے 156، کانگریس کے 17، عام آدمی پارٹی کے 5 اور 4 آزاد (اگر کسی پارٹی میں شامل نہ ہوتےتب ) رکن ہوں گے۔ اس بار ریاستی اسمبلی میں 105 نئے ممبران ہوں گے، 14 خواتین ممبران اور 1 مسلم ممبر۔ موجودہ 77 ایم ایل اے کے علاوہ جنہیں دوبارہ منتخب کیا گیا ہے۔ گجرات کی 15 ویں قانون ساز اسمبلی نئے اور تجربہ کار اراکین کا مجموعہ بننے کیلئے تیار ہے۔

      نئے چہروں میں کرکٹر رویندر جڈیجہ کی بیوی ریوابا ہوں گی جنہوں نے جام نگر شمالی حلقہ سے بی جے پی کے امیدوار کے طور پر 50,000 سے زیادہ ووٹوں سے کامیابی حاصل کی تھی۔ 14ویں اسمبلی میں 13 خواتین ایم ایل ایز تھیں جب کہ 13ویں اسمبلی میں ریکارڈ 17 خواتین ایم ایل اے تھیں۔ ریوابا کے علاوہ دو دیگر ممبران ریٹا پٹیل اور مالتی مہیشوری پیشے سے کاروباری ہیں۔ پیشے کے لحاظ سے ایک بلڈر، ریتا پٹیل گاندھی نگر شمالی سیٹ سے بی جے پی کی نو منتخب ایم ایل اے ہیں، جو ریاستی راجدھانی کو کور کرتی ہے۔ وہ گاندھی نگر میونسپل کارپوریشن کی میئر تھیں۔ گاندھی دھام سیٹ سے جیتنے والی مالتی مہیشوری لاجسٹک کے کاروبار سے وابستہ ہیں۔





      نئی اسمبلی میں 3 پریکٹسنگ ڈاکٹر بھی ہوں گے، جن میں راجکوٹ میونسپل کارپوریشن کی سابق ڈپٹی میئر ڈاکٹر درشیتا شاہ بھی شامل ہیں، جنہوں نے راجکوٹ ویسٹ سیٹ سے جیتی تھیں، جس کی نمائندگی سابق وزیر اعلیٰ وجے روپادھی نے 2017 کے الیکشن میں کی تھی۔ دیگر ڈاکٹروں میں ڈاکٹر درشن دیشمکھ اور پائل ککرانی شامل ہیں، جنہوں نے بی جے پی کے لیے بالترتیب نندود اور نرودا سیٹیں جیتی ہیں۔ ان کے علاوہ، احمد آباد کے اساروا سے بی جے پی کی نو منتخب امیدوار، درشنا واگھیلا گھریلو خاتون ہیں جب کہ بھاو نگر-ایسٹ سے سیجل پانڈیا ٹیچنگ اور کوچنگ کے پیشے سے وابستہ ہیں۔ بی جے پی کی 13 نو منتخب خواتین ایم ایل اے میں سے 5 موجودہ ایم ایل اے ہیں۔ گجرات اسمبلی میں کانگریس کی واحد خاتون نمائندہ جینی بین ٹھاکر ہوں گی جو واو سے موجودہ ایم ایل اے ہیں اور اس بار بھی جیت گئی ہیں۔
      Published by:Sana Naeem
      First published: