ہوم » نیوز » No Category

یونیورسٹی کا عجیب و غریب فرمان ، وائس چانسلر کے بیٹے کی شادی کے لئے مانگے گئے 500-500 روپے

جودھپور : جودھپور کی نیشنل لاء یونیورسٹی میں ایک عجیب و غریب فرمان سنایا گیا۔ یونیورسٹی کے وائس چانسلر کے بیٹے کی شادی کے لئے گفٹ دینے کے لئے تمام فیکلٹی ممبرس کو 500-500 روپے جمع کرنے کا فرمان سنایا گیا ۔ اس حکم کے بعد اساتذہ نے پیسے جمع کرکے 25 ہزار روپے اکٹھے کیے اور ایک جیولری سیٹ گفٹ کیا ۔

  • Pradesh18
  • Last Updated: Mar 16, 2016 09:45 AM IST
  • Share this:
  • author image
    NEWS18-Urdu
یونیورسٹی کا عجیب و غریب فرمان ، وائس چانسلر کے بیٹے کی شادی کے لئے مانگے گئے 500-500 روپے
جودھپور : جودھپور کی نیشنل لاء یونیورسٹی میں ایک عجیب و غریب فرمان سنایا گیا۔ یونیورسٹی کے وائس چانسلر کے بیٹے کی شادی کے لئے گفٹ دینے کے لئے تمام فیکلٹی ممبرس کو 500-500 روپے جمع کرنے کا فرمان سنایا گیا ۔ اس حکم کے بعد اساتذہ نے پیسے جمع کرکے 25 ہزار روپے اکٹھے کیے اور ایک جیولری سیٹ گفٹ کیا ۔

جودھپور : جودھپور کی نیشنل لاء یونیورسٹی میں ایک عجیب و غریب فرمان سنایا گیا۔ یونیورسٹی کے وائس چانسلر کے بیٹے کی شادی کے لئے گفٹ دینے کے لئے تمام فیکلٹی ممبرس کو 500-500 روپے جمع کرنے کا فرمان سنایا گیا ۔ اس حکم کے بعد اساتذہ نے پیسے جمع کرکے 25 ہزار روپے اکٹھے کیے اور ایک جیولری سیٹ گفٹ کیا ۔

لیکن یہ اس يونورسٹي کا پہلا کارنامہ نہیں، اس سے پہلے بھی یہ یونیورسٹی دھاندلیوں کو لے کر تنازعہ میں رہا ہے ۔ 14 مئی 2015 کو يونورسٹي کے ایک پلمبر اور ملازم یونین کے اس وقت کے جنرل سکریٹری دلپ رنگا نے راجستھان کے وزیر تعلیم کو خط لکھ کر یونیورسٹی میں گڑبڑیوں کا انکشاف کیا تھا ۔

خط میں الزام لگایا گیا تھا کہ یونیورسٹی کے دو پی اے سجیش پلئی اور ارون سنگھ گوڑ 12 ویں پاس ہیں ۔ جبکہ اصولوں کے مطابق گریجویشن چاہئے ۔ خط میں الزام لگایا گیا تھا کہ یونیورسٹی نے تنخواہ  اور پرموشن میں دھاندلیاں کی ہیں. ۔ اس کے کچھ دن بعد ہی 27 مئی کو رنگا کو پہلے یونیورسٹی نے نوٹس تھمایا کہ وہ یونیورسٹی کے علاوہ دوسرے ادارے میں کام کر رہے ہیں پھر 06 جون 2015 کو نکال دیا گیا۔

First published: Mar 16, 2016 09:45 AM IST