உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    کرفیو زدہ علاقے میں دیر شام پھر جمع ہوئی بھیڑ، نوجوان کو مارا چاقو، واقعہ سی سی ٹی وی کیمرے میں ہوا قید

    Youtube Video

    Jodhpur violence and Curfew: تشدد پر قابو پانے کے بعد پولیس انتظامیہ کا دعویٰ ہے کہ کرفیو کو سختی سے نافذ کیا جائے گا۔ کرفیو والے علاقے میں صرف ضروری بنیادی سہولیات جیسے پانی، بجلی اور طبی خدمات فراہم کی جائیں گی۔

    • Share this:
      جودھ پور۔ سی ایم اشوک گہلوت کے آبائی شہر جودھپور (Jodhpur) میں کشیدگی کے بعد شہر میں امن و امان کی بحالی کے لیے متاثرہ علاقوں میں کرفیو (Curfew) نافذ کر دیا گیا ہے۔ پولیس اور انتظامیہ کا دعویٰ ہے کہ اب شہر میں کسی بھی طرح کا تشدد نہیں ہونے دیا جائے گا۔ لیکن منگل کی دیر رات کرفیو سے متاثرہ سورساگر تھانہ علاقے میں ایک بار پھر بھیڑ جمع ہوگئی۔ وہاں ایک نوجوان کو چاقو مار دیا گیا۔ یہ واقعہ سی سی ٹی وی میں بھی قید ہوگیا۔ یہ سی سی ٹی وی پولیس انتظامیہ کے تمام دعووں کی پول کھولتا نظر آرہا ہے۔ فی الحال، پولس اس معاملے کی جانچ کر رہی ہے کہ آیا یہ چاقو بازی آپسی دشمنی کی وجہ سے کی گئی ہے یا جودھ پور میں ہوئے فرقہ وارانہ تشدد کا حصہ ہے۔

      تشدد پر قابو پانے کے بعد پولیس انتظامیہ کا دعویٰ ہے کہ کرفیو کو سختی سے نافذ کیا جائے گا۔ کرفیو والے علاقے میں صرف ضروری بنیادی سہولیات جیسے پانی، بجلی اور طبی خدمات فراہم کی جائیں گی۔ کرفیو والے علاقے میں اسکول مکمل طور پر بند رہیں گے۔ لیکن کرفیو والے علاقے میں امتحانی مراکز کے طور پر اعلان کردہ اسکول چلتے رہیں گے۔ امیدوار کے ایڈمٹ کارڈ کو کرفیو ایریا کا پاس سمجھا جائے گا۔ میڈیکل سروس سے وابستہ ملازمین کا صرف شناختی کارڈ بطور پاس قبول کیا جائے گا۔

      50 شرپسند گرفتار
      عید کے موقع پر جودھ پور میں تشدد کے بعد نافذ کرفیو آج رات 12 بجے یعنی بدھ کی رات تک نافذ ہے۔ اس کے ساتھ ہی پورے جودھپور ضلع میں بدھ کی آدھی رات 12 بجے تک انٹرنیٹ بھی بند رہے گا۔ ڈی جی لا اینڈ آرڈر ہواسنگھ گھمریا نے کہا کہ ہنگامہ آرائی کے بعد حرکت میں آنے والی پولیس نے منگل کی رات تک 97 شرپسندوں کو حراست میں لیا تھا جس کے بعد ان میں سے 50 کو گرفتار کر لیا گیا ۔ گھمریا نے کہا کہ مجرموں کو کسی صورت بخشا نہیں جائے گا۔

      یہ بھی پڑھیں: Jodhpur Violence: جودھوپر میں بگڑے حالات، کشیدگی کے بعد لگایا گیا کرفیو، چپے۔چپے پر پولیس

      یہاں جانئے پورا معاملہ: Security on Eid:جودھپور میں مذہبی جھنڈوں کو لیکر تنازع کے بعد حساس علاقوں میں الرٹ جاری

      پیر کی رات جھنڈا لگانے کو لے کر ہوا تھا تنازعہ
      قابل ذکر ہے کہ جودھپور کے جلوری گیٹ چوراہے کے بالمکند بسا سرکل پر پیر کی رات ایک ہندو گروپ کی جانب سے جھنڈا لہرانے کے بعد مذہبی جھنڈوں کو لے کر تنازعہ حل ہو گیا تھا۔ پولیس نے دونوں کمیونٹی کے جھنڈوں کو ہٹا دیا اور ان کی جگہ ترنگا لہرایا۔ لیکن دیر رات پتھراؤ کے بعد جس میں کم از کم 4 پولیس اہلکار زخمی ہوئے، منگل کی صبح شہر میں پھر سے کشیدگی پھیل گئی۔ کیونکہ اقلیتی گروپ کے ارکان نے ہندوؤں کی طرف سے لہرائے گئے جھنڈے کو ہٹانے کی کوشش کی۔ نیوز 18 راجستھان نے اطلاع دی ہے کہ بھیڑ پر قابو پانے کے لیے پولیس نے منگل کو آنسو گیس چھوڑی اور لوگوں پر لاٹھی چارج کیا۔ حالات اب قابو میں ہیں لیکن علاقے میں پولیس کی بھاری نفری تعینات ہے۔
      Published by:Sana Naeem
      First published: