உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    لکھیم پور کھیری تشدد کے خلاف کسانوں کی حمایت میں مہاراشٹر بند کامیاب 

    Youtube Video

    ممبئی میں بند سے عام شہری زندگی متاثر,سڑکوں پر سناٹا, شہر کے مختلف علاقوں میں بیسٹ کی بسوں پرپتھراؤ,سڑکوں سے بند کی وجہ سے بیسٹ کی بسیں غائب,عام مسافروں کو پریشانیوں کا سامنا,ٹرینوں کی آمدورفت معمولات پر جاری,

    • Share this:
    لکھیم پور کھیری میں کسانوں پر تشدد اور ز یادتی کار سے کسانوں کو روندنے کے واقعہ کی مذمت کے ساتھ مہاراشٹر میں کسانوں کی حمایت میں ایک روزہ مہاراشٹر بند کامیاب رہا مہاراشٹر سمیت ممبئی میں بھی بند کا ملا جلااثر پایا گیا ممبئی کے مختلف علاقوں میں مہا وکاس اگھاڑی سے وابستہ کانگریس۔ این سی پی اور شیوسینا نے دکانیں بند کروائی سڑکوں پر بسوں کی آمدورفت نہ ہونے کی وجہ سے سڑکیں بھی سنسان تھیں جبکہ نصف شب سے بند کو کامیاب بنانے کیلئے بیسٹ کی 8بسوں کو ممبئی کے مختلف علاقوں میں نقصان پہنچایا گیا جس کے بعد بیسٹ انتظامیہ نے بسوں کو بند کر دیا ملنڈڈپو سمیت تمام بیسٹ ڈپو میں مسافروں کو داخلہ کی اجازت نہیں تھی بسوں کی سڑکوں سے عدم موجودگی کی وجہ سے مسافروں کو کافی پریشانیوں کا سامنا کرنا پڑا جبکہ ممبئی کی لائف لائن کہی جانے والی ٹرینیں معمولات پر جاری تھیں لیکن ٹرینوں سے صرف انہیں مسافروں کو سفر کر نے کی اجازت دی گئی ہے جنہوں نے اپنا دونوں ٹیکہ لگایا ہے بیشتر مسافروں کو بیسٹ بند ہونے کی وجہ سے کافی پریشانیوں کا سامنا کرناپڑا۔

    ممبئی میں ایک طرف بیسٹ کی بسیں بند تھیں تو دوسری طرف رکشہ ٹیکسی سڑکوں پر دوڑ رہی تھی یہی وجہ ہے کہ بیسٹ سے سفر کرنے والے مسافروں کو رکشہ ٹیکسی کا سہارا لینا پڑا لیکن اس سے مسافروں کی جیب پر اثر پڑا ہے۔ مہاراشٹر بند کی وجہ سڑکوں پر بھیڑ بھاڑ میں بھی کمی واقع ہوئی کئی لوگوں تو اپنے گھروں میں ہی قید رہنا آفت سمجھی ممبئی کے تمام سبزی بازار اور خوردنوش کی دکانیں بھی بند کی گئی اس کے علاوہ ہوٹلیں اور دیگر کاروباروی نے بھی بند کی حمایت کی تھی اسی وجہ سے ممبئی کی سڑکوں بند سے عام شہری زندگی متاثر ہوگئی۔

    ممبئی کے مختلف علاقوں میں کانگریس۔ این سی پی اور شیوسینا سمیت سماجی تنظیموں نے بھی بند کی حمایت میں سڑکوں پر اتر کر دکانیں بند کروائی اس کی وجہ سے پولیس کا سخت حفاظتی انتظامات بھی تھا۔ ممبئی کے مصروف ترین علاقے ماہم دادر میں بھی بند پر سڑکیں پوری طرح سے سنسان تھیں جنوبی ممبئی کی مصروف ترین تجارتی مرکز کرافورڈ مارکیٹ بھی پوری طرح سے بند تھا مسلم تنظیموں نے بھی بند کی حمایت کی تھی ممبئی امن کمیٹی، جمعیۃ علماء، جماعت اسلامی سمیت دیگر تنظیموں نے مشترکہ طور پر بند کو کامیاب بنانے کیلئے مسلم علاقوں میں دکانیں بند رکھنے کی اپیل کی تھی مسلم اکثریتی علاقے ناگپاڑہ,بھنڈی بازار، پائیدھونی، سمیت تمام علاقوں میں دکانیں بند تھیں جبکہ کرلا، ساکی ناکہ، اندھیری، پریل، لال باغ پر بھی بند کی وجہ سے سڑکوں پر آمدورفت میں کمی تھی۔ ممبئی میں بند نے عام شہریوں کو کافی پریشانیوں میں مبتلا کر دیا کورونا کے بعد اب حالات معمولات پر آنے کی کوشش کر رہے تھے کہ سرکار نے بند کا اعلان کیا یہی وجہ ہے کہ عوام میں بند سے متعلق مختلف تاثر تک پایا گیا کئی۔

    لوگوں کا کہنا ہے کہ سرکار نے جو بند کا انعقاد کیا ہے اس میں عام لوگوں کو کافی پریشانیوں کا سامنا ہے۔ بند کی حما یت میں ہوٹل کاروباری اور ڈبہ والوں نے بھی شام تک اپنا کاروبار بند رکھنے کا اعلان کیا تھا جس پر عمل آوری بھی کی گئی ممبئی میں بند کے دوران ٹرینوں کی آمدورفت میں کوئی رخنہ اندازی نہ ہو اس کیلئے ریلوے اسٹیشنوں کے باہر اور اندر پولیس کی بھاری جمعیت کو تعینات کیا گیا تھا اور مظاہرین کو ریلوے اسٹیشن کے اندر داخلہ پر پابندی تھی یہی وجہ ہے کہ ممبئی شہر میں بند کا اثر رہا لیکن ٹرینیں جاری تھیں۔

    ممبئی کے مختلف جنکشن پر کانگریس۔ این سی پی اور شیوسینا نے لکھیم پور کھیری میں کسانوں کو کار کے نیچے روندنے کے واقعہ کی نہ صرف مذمت کی بلکہ مرکزی سرکار کے خلاف نعرے بازی بھی کی۔ ممبئی پولیس نے اس سلسلے میں سخت حفاظتی انتظامات کئے تھے اور حساس علاقوں میں کرلا، دھاراوی اور سائن میں تو اضافی دستے بھی تعینات کئے گئے تھے ممبئی پولیس نے بند کے دوران تشدد کے واقعات سے نمٹنے کیلئے تیاری بھی کی تھی اور پوری طرح سے مستعد تھی یہی وجہ ہے کہ بند کے دوران تشدد کا واقعہ پیش نہیں آیا لیکن بسوں پر پتھراؤ اور توڑ پوڑ کا واقعہ نے شہر میں ایک مرتبہ پھر دہشت پیدا کر دی۔

    نصف شب اور صبح میں بیسٹ کی 8بسوں کو نقصان پہنچایا گیا اور اس کے شیشے توڑ دئیے گئے بسوں پر پتھراؤ کے بعد سڑکوں سے بیسٹ بسیں غائب ہوگئی ممبئی کے دھاراوی,مانخورد, شیواجی نگر, چار کوپ,اوشیوارہ, دیونار, آن آر بیٹ مال میں بیسوں پر پتھراؤ کر کے انہیں نقصان پہنچایا گیا اس لئے پولیس کا حفظ بھی بیسٹ انتظامیہ نے طلب کیا مالونی میں بھی گزشتہ شب ایک بیسٹ بس کا شیشہ توڑا گیا جس کے بعد پولیس میں این سی درج کر دی گئی۔ بتایا جاتا ہے کہ مالونی بیسٹ ڈپو پر بیسٹ کے کامگار مظاہرہ کر رہے تھے اس وقت بیسٹ کے کامگاروں پر پولیس نے لاٹھی چارج بھی کیا ہے۔ مہا وکاس اگھاڑی کے ساتھ بیسٹ کامگار یونین بھی اس بند میں شامل تھیں جبکہ کسان مزدور پارٹی سمیت سماجوادی پارٹی اور دیگر پارٹیوں نے بھی بند کی مکمل حمایت کی تھی یہی وجہ تھی کہ بند کامیابی سے ہمکنار ہوا۔
    Published by:Sana Naeem
    First published: