உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    نواب ملک پر شنکجہ! وقف بورڈ زمین گھوٹالے میں ای ڈی نے سات مقامات پر مارا چھاپہ

    نواب ملک پر شنکجہ! وقف بورڈ زمین گھوٹالے میں ای ڈی نے سات مقامات پر مارا چھاپہ

    نواب ملک پر شنکجہ! وقف بورڈ زمین گھوٹالے میں ای ڈی نے سات مقامات پر مارا چھاپہ

    Nawab Malik News : ای ڈی پونے میں سات مقامات پر تلاشی مہم اور چھاپہ ماری کی کارروائی کررہی ہے ۔ نیوز 18 کے نامہ نگار ابھیشیک کے مطابق ریاست میں واقع اورنگ آباد میں بھی ای ڈی کی چھاپہ ماری چل رہی ہے ۔ یہاں بھی ای ڈی نے وقف بورڈ کی زمین میں مبینہ گھوٹالے کے معاملہ میں چھاپہ مارا ہے ۔

    • Share this:
      ممبئی : مہاراشٹر کی مہا وکاس اگھاڑی کی سرکار میں وزیر نواب ملک کے ماتحت آنے والے محکمہ میں ایک مبینہ گھوٹالے کے معاملہ میں انفورسمنٹ ڈائریکٹوریٹ نے جمعرات کو چھاپہ مارا ۔ نیوز لکھے جانے تک ملی جانکاری کے مطابق ای ڈی پونے میں سات مقامات پر تلاشی مہم اور چھاپہ ماری کی کارروائی کررہی ہے ۔ نیوز 18 کے نامہ نگار ابھیشیک کے مطابق ریاست میں واقع اورنگ آباد میں بھی ای ڈی کی چھاپہ ماری چل رہی ہے ۔ یہاں بھی ای ڈی نے وقف بورڈ کی زمین میں مبینہ گھوٹالے کے معاملہ میں چھاپہ مارا ہے ۔

      پونے کی بندگارڈن پولیس کے مطابق جن دو لوگوں کو اس معاملہ میں اگست میں پکڑا گیا تھا وہ بورڈ کے ٹرسٹی تھے ۔ حالانکہ ان کے خلاف ٹرسٹ کے کچھ دیگر افسران نے الزامات لگائے تھے کہ املاک کا ذاتی مفاد کیلئے استعمال کیا جارہا تھا ۔

      یہ کارروائی ایسے وقت میں ہوئی ہے جب نواب ملک لگاتار بی جے پی اور این سی بی پر نشانہ سادھ رہے ہیں ۔ بتادیں کہ نواب ملک گزشتہ کچھ وقت سے ریاست کی سیاست میں سرخیوں میں ہیں ۔ بالی ووڈ سپر اسٹار شاہ رخ خان کے بیٹے آرین خان کو نارکوٹکس کنٹرول بیورو کے ذریعہ حراست میں لئے جانے اور پھر گرفتار کرنے کے بعد وہ این سی بی افسر سمیر وانکھیڑے پر لگاتار حملہ آور ہیں ۔ گزشتہ دنوں انہوں نے ریاست میں اپوزیشن لیڈر دیویندر فڑنویس پر سنگین الزامات لگائے تھے ، جس کے بعد فڑنویس نے بھی ان پر مشتبہ لینڈ ڈیل میں شامل ہونے کا دعوی کیا تھا ۔

      ادھر فڑنویس کی اہلیہ امرتا فڑنویس نے جمعرات کو نواب ملک پر سنگین الزامات لگائے ۔ انہوں نے ٹویٹ کیا کہ نواب ملک نے کچھ تصویروں سمیت ہتک عزت کرنے والے گمراہ کن ٹویٹس شیئر کئے ۔ آئی پی سی کی مختلف دفعات کے تحت کارروائی سمیت ہتک عزت کا نوٹس دیا گیا ہے ۔
      Published by:Imtiyaz Saqibe
      First published: