உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    علی گڑھ مسلم یونیورسٹی کی اورنگ آباد شاخ کے قیام کیلئے جلد ہی ہوگا پالیسی ساز فیصلہ

    اورنگ آباد : علی گڑھ مسلم یونیورسٹی کی اورنگ آباد شاخ کے قیام کی راہ ہموار ہوتی نظر آرہی ہے۔ قانون ساز کونسل میں ایک سوال کے جواب میں حکومت نے واضح کیا کہ اورنگ آباد میں اے ایم یو کی شاخ کے قیام کی تجویز حکومت کے زیر غور ہے اور جلد ہی اس سلسلے میں فیصلہ کن پالیسی اختیار کی جائے گی۔

    اورنگ آباد : علی گڑھ مسلم یونیورسٹی کی اورنگ آباد شاخ کے قیام کی راہ ہموار ہوتی نظر آرہی ہے۔ قانون ساز کونسل میں ایک سوال کے جواب میں حکومت نے واضح کیا کہ اورنگ آباد میں اے ایم یو کی شاخ کے قیام کی تجویز حکومت کے زیر غور ہے اور جلد ہی اس سلسلے میں فیصلہ کن پالیسی اختیار کی جائے گی۔

    اورنگ آباد : علی گڑھ مسلم یونیورسٹی کی اورنگ آباد شاخ کے قیام کی راہ ہموار ہوتی نظر آرہی ہے۔ قانون ساز کونسل میں ایک سوال کے جواب میں حکومت نے واضح کیا کہ اورنگ آباد میں اے ایم یو کی شاخ کے قیام کی تجویز حکومت کے زیر غور ہے اور جلد ہی اس سلسلے میں فیصلہ کن پالیسی اختیار کی جائے گی۔

    • ETV
    • Last Updated :
    • Share this:

      اورنگ آباد : علی گڑھ مسلم یونیورسٹی کی اورنگ آباد شاخ کے قیام کی راہ ہموار ہوتی نظر آرہی ہے۔ قانون ساز کونسل میں ایک سوال کے جواب میں حکومت نے واضح کیا کہ اورنگ آباد میں اے ایم یو کی شاخ کے قیام کی تجویز حکومت کے زیر غور ہے اور جلد ہی اس سلسلے میں فیصلہ کن پالیسی اختیار کی جائے گی۔


      پچھلے کئی برسوں سے زیر التوا اورنگ آباد ضلع میں علی گڑھ مسلم یونیورسٹی کی شاخ کے قیام کا معاملہ ایک بار پھر سرخیوں میں آگیا ہے ۔ قانون ساز کونسل میں ایک سوال کے جواب میں اقلیتی بہبود کے وزیر ایکناتھ کھڑسے نے تحریری جواب میں کہا کہ اورنگ آباد ضلع میں خلدآباد تعلقہ کے سولی بھنجن علاقے کی دو سو ایکڑ زمین علی گڑھ مسلم یونیورسٹی کی شاخ کے لیے دینے پر حکومت غور کررہی ہے۔ اس تعلق سے جلد ہی فیصلہ کیا جائے گا ۔


      کھڑسے نے یہ بھی واضح کیا کہ اس تعلق سے محکمہ داخلہ ، ریونیو، فائنانس، ٹاؤن پلاننگ، ٹوریزم اور محکمہ جنگلات سے رپورٹیں طلب کی گئی ہیں۔ قانون ساز کونسل میں یہ سوال کانگریس کے لیڈر بھائی جگتاپ اور شرد رن پسے کے علاوہ سنجے دت نے اٹھایا تھا۔


      واضح رہے اورنگ آباد میں اے ایم یو شاخ کے قیام کا مطالبہ کئی برسوں سے کیا جارہا ہے ۔کانگریس این سی پی دور حکومت میں اورنگ آباد شاخ کے لیے اس وقت کی وزیر فوزیہ خان اور عارف نسیم خان نے دو سو ایکڑ زمین کی نشاندہی بھی کردی تھی ، لیکن شیوسینا کے ممبر پارلیمنٹ چندر کانت کھیرے اور کچھ تعلیمی ٹھیکداروں کی ملی بھگت سے یہ معاملہ التوا میں پڑ گیا تھا ۔ لیکن اب حکومت کے جواب سے ایک مرتبہ پھر امید جاگی ہے کہ اورنگ آباد میں علی گڑھ مسلم یونیورسٹی کی شاخ کا خواب شرمندہ تعبیر ہوگا۔


      ادھر رکن پارلیمنٹ مولانااسرارالحق نے صدرجمہوریہ سےراشٹریہ پتی بھون میں ملاقات کربہار کےکشن گنج میں اے ایم یو سنٹر سے متعلق بات چیت کی۔ مولانا اسرارالحق کے ساتھ اے ایم یو کے وی سی بھی موجود تھے ۔

      First published: