ہوم » نیوز » امراوتی

طلاق ثلاثہ آرڈیننس کے خلاف مجلس اتحاد المسلمین نے بامبے ہائی کورٹ میں داخل کی عرضی

اسدالدین اویسی کی صدارت والی ایم آئی ایم نے تین طلاق پرمرکزی حکومت کے ذریعہ لائے گئے آرڈیننس کےخلاف ہے۔  

  • Share this:
طلاق ثلاثہ آرڈیننس کے خلاف مجلس اتحاد المسلمین نے بامبے ہائی کورٹ میں داخل کی عرضی
علامتی تصویر

اسدالدین اویسی کی صدارت والی آل انڈیا مجلس اتحاد المسلمین (اے آئی ایم آئی ایم) نے تین طلاق پر مرکزی حکومت کے ذریعہ لائے گئے آرڈیننس کے خلاف بامبے ہائی کورٹ میں عرضی داخل کی ہے۔ اس آرڈیننس کے خلاف مجلس اتحاد المسلمین کے لیڈروارث پٹھان نے عرضی دائرکرکے آرڈیننس کی مدت پرسوال اٹھائے ہیں۔


اس سے قبل طلاق ثلاثہ معاملے میں مرکزی حکومت کے ذریعہ لائے گئے آرڈیننس  کے خلاف سپریم کورٹ میں کیرالہ کی سنی مسلم تنظیم کیرالہ جمعیۃ علما نے عرضی داخل کی تھی۔ اس عرضی میں بھی آرڈیننس کی مدت پرسوال اٹھا ئے گئے تھے۔ تنظیم کا کہنا ہے کہ یہ آرڈیننس غلط طریقے سے لایا گیا ہے۔


عرضی گزارنے کہا تھا کہ یہ آرڈیننس صرف ایک مذہب کے ایک فرقے کے ماننے والے لوگوں کو ہدف بناکرلایا گیا ہے۔ اس کی وجہ سے معاشرے کا امن اوراتحاد متاثرہوگا۔ سپریم کورٹ نے اس معاملے میں سماعت کی تاریخ طے نہیں کی ہے۔


یہ بھی پڑھیں:    تین طلاق کا مسئلہ سیاسی موضوع نہیں، مسلم خواتین کےاعزازوتحفظ کا مسئلہ ہے: روی شنکرپرساد

 

مرکزی حکومت کے آرڈیننس کے تحت فوری تین طلاق (طلاق بدعت) کو جرم کے زمرے میں رکھا گیا ہے۔ اپنی بیوی کو ایک بارمیں تین طلاق بول کرطلاق دینے والے مسلم مرد کو تین سال کی جیل کی سزا ہوسکتی ہے۔

یہ بھی پڑھیں:   تین طلاق پرمودی حکومت کا آرڈیننس شریعت میں راست مداخلت: عارف نسیم خان

 

اس آرڈیننس میں مسلم خاتون کو بھتہ اوربچوں کی پرورش کے لئے خرچ کو لے کربھی تجویز ہے۔ اس کے تحت زبانی، ٹیلیفونک یا تحریری کسی بھی شکل میں ایک بار میں تین طلاق کوغیرقانونی قراردیا گیا ہے۔

یہ بھی پڑھیں:     طلاق کے معاملہ میں سلفی مسلک سب سے درست، پرسنل لا بورڈ اہلحدیثوں سے رجوع کرے: مولانا وحیدالدین خان

یہ بھی پڑھیں:      طلاق ثلاثہ بل مسلمانوں کومنظورنہیں، وہ شریعت پرعمل کریں گے: مولانا ارشد مدنی

 

یہ بھی پڑھیں:     تین طلاق دینے پر اب ہو گی سزا، مرکزی کابینہ نے آرڈیننس کو دی منظوری

 

 
First published: Sep 26, 2018 07:10 PM IST