உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    ایکسکلوزیو انٹرویو: شاہ رخ بولے، مجھے اپنی حب الوطنی ثابت کرنے کی ضرورت نہیں

    نئی دہلی۔ بالی ووڈ کے سپر اسٹار شاہ رخ خان نے کہا ہے کہ انہیں ہندستانی ہونے پر فخر ہے اوراپنی حب الوطنی ثابت کرنے کی انہیں کوئی ضرورت نہیں ہے۔

    نئی دہلی۔ بالی ووڈ کے سپر اسٹار شاہ رخ خان نے کہا ہے کہ انہیں ہندستانی ہونے پر فخر ہے اوراپنی حب الوطنی ثابت کرنے کی انہیں کوئی ضرورت نہیں ہے۔

    نئی دہلی۔ بالی ووڈ کے سپر اسٹار شاہ رخ خان نے کہا ہے کہ انہیں ہندستانی ہونے پر فخر ہے اوراپنی حب الوطنی ثابت کرنے کی انہیں کوئی ضرورت نہیں ہے۔

    • ETV
    • Last Updated :
    • Share this:
      نئی دہلی۔ بالی ووڈ کے سپر اسٹار شاہ رخ خان نے کہا ہے کہ انہیں ہندستانی ہونے پر فخر ہے اوراپنی حب الوطنی ثابت کرنے کی انہیں کوئی ضرورت نہیں ہے۔ شاہ رخ نے کہا کہ ان کے عدم برداشت والے بیان کو غلط طریقے سے پیش کیا گیا۔ ای ٹی وی نیٹ ورک کے سربراہ جگدیش چندر کو دیئے خصوصی انٹرویو میں شاہ رخ نے عدم برداشت، ای ڈی نوٹس اور وزیر اعظم نریندر مودی سے جڑے کئی سوالات کا کھل کر جواب دیا۔

      سوال: مجھے لگتا ہے کہ آپ اس ملک کی شان ہیں۔ ایسے میں رواداری اور عدم برداشت کو لے کر اس قدر بحث کیوں؟

      جواب: مجھے بھی اس بارے میں کچھ نہیں پتہ۔ میں صاف گوئی اور ایمانداری سے بات کرنے میں یقین رکھتا ہوں۔ ویسے بھی مجھے خود کو سیکولر ثابت کرنے کی ضرورت نہیں ہے۔ سچ تو یہ ہے کہ اگر ہمیں آگے بڑھنا ہے تو کچھ دقیانوسی چیزوں کو پیچھے چھوڑنا ہو گا۔ اس میں صنفی امتیاز، مذہب، نسل پرستی اور علاقائیت شامل ہیں۔

      دراصل جب ہم مصروف ہوتے ہیں تو ہمارے ذہن میں غلط چیزیں نہیں آتی ہیں۔ جو لوگ خالی یا بیکار ہوتے ہیں، ان کے دماغ میں یہ باتیں چلتی رہتی ہیں۔ مجھے لگتا ہے کہ اچھی چیزیں ہمیں اپنے بچوں کو بھی سکھانا چاہئے۔ کچھ لوگوں کا خیال ہے کہ جس صاف گوئی سے میں بات کرتا ہوں وہ غلط ہے۔ اگر کوئی مجھے کہتا ہے کہ وہ میرے مقابلے زیادہ محب وطن ہے تو اس سے بڑا بیوقوف کوئی نہیں ہے۔ بھلا کوئی کیسے یہ طے کر سکتا ہے کہ کسی میں زیادہ حب الوطنی ہے اور کسی میں کم۔

      ہمیں شروع سے ہی سکھایا گیا ہے کہ ہمیں اپنے ملک سے پیار کرنا چاہئے۔ اس کے باوجود کیا کسی کو اپنی حب الوطنی ثابت کرنے کی ضرورت ہے۔ مجھے لگتا ہے کہ پروگراموں میں اکثر کہی گئی میری باتوں کو توڑ مروڑ کر پیش کیا جاتا ہے، جو بالکل غلط ہے۔ ایسے میں ایکٹنگ پلیٹ فارم میں صرف ایکٹنگ اور فلم کے بارے میں بات چیت کرنی چاہئے۔

      سوال: ای ڈی کے نوٹس پر آپ کا کیا کہنا ہے؟ کچھ لوگوں کا کہنا ہے کہ ای ڈی آپ کو نشانہ بنا رہا ہے؟

      جواب: ایسا کچھ نہیں ہے۔ یہ نوٹس انفورسمنٹ ڈائریکٹوریٹ (ای ڈی) نے 2010 میں جاری کیا تھا۔ اب تو 2015 آ گیا۔ یہ حکومت اس وقت تھی ہی نہیں۔ ایسے میں مجھے نشانہ بنانے کی بات کہنا غلط ہے۔ ہر چیز قانونی طریقے سے ہو رہی ہے۔ مجھے ای ڈی نے نوٹس دیا اور میں نے بھی اس کا جواب دیا۔ جو لوگ یہ نہیں جانتے ہیں، وہی ایسی بات کہہ رہے ہیں۔

      سوال: ایسا کہا جاتا ہے کہ ملک میں تین طاقتورترین شخصیتیں ہیں: وزیر اعظم نریندر مودی، امیتابھ بچن اور شاہ رخ خان۔ وزیر اعظم نریندر مودی کے بارے میں آپ کا کیا خیال ہے؟

      جواب: مجھے لگتا ہے کہ نریندر مودی بہترین کام کر رہے ہیں۔ جب ہم ترقی کی بات کرتے ہیں تو گجرات کی ترقی کی تصویر ہمارے دماغ میں آتی ہے۔ میں گجرات کے بارے میں زیادہ نہیں جانتا ہوں، لیکن انہوں نے وہاں بہترین کام کیا ہے۔ موجودہ وقت میں مرکزی حکومت اچھا کام کر رہی ہے اور جلد ہی اس کا اثر پورے ملک میں نظر آنے لگے گا۔
      First published: