உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    شام میں قتل عام کے خلاف ریلی نکال کر لوگوں نے کیا اپنے غم و غصہ کا اظہار

     شام میں جاری اس قتل عام  کے خلاف احمد آباد کے پٹوا شیری علاقے سے معصوم بچوں نے ایک خاموش ریلی نکال کر شام میں جو کچھ ہو رہا ہے اس کی جم کر مخالفت کی ۔

    شام میں جاری اس قتل عام کے خلاف احمد آباد کے پٹوا شیری علاقے سے معصوم بچوں نے ایک خاموش ریلی نکال کر شام میں جو کچھ ہو رہا ہے اس کی جم کر مخالفت کی ۔

    شام میں جاری اس قتل عام کے خلاف احمد آباد کے پٹوا شیری علاقے سے معصوم بچوں نے ایک خاموش ریلی نکال کر شام میں جو کچھ ہو رہا ہے اس کی جم کر مخالفت کی ۔

    • ETV
    • Last Updated :
    • Share this:

       احمد آباد / کانپور۔ شام میں ہر دن انسانیت کو مارا جا رہا ہے اور معصوم بچوں کا قتل عام کیا جا رہا ہے ۔ شام میں جاری اس قتل عام  کے خلاف احمد آباد کے پٹوا شیری علاقے سے معصوم بچوں نے ایک خاموش ریلی نکال کر شام میں جو کچھ ہو رہا ہے اس کی جم کر مخالفت کی ۔ پٹواشیری سے نکلنے والی ریلی تاریخی تین دروازہ تک نکالی گئی، جہاں پر مقامی لوگوں نے بھی ریلی نکالنے والے معصوم بچوں کا ساتھ دیا اور جم کر اسد حکومت اور امریکہ کے خلاف نعرے بازی کی گئی۔


      اس سلسلے میں پٹواشیری میں سماجی کارکن عمرخان پٹھان نے کہا کہ شام کے معصوم بچوں کے ساتھ  جو کچھ ہو رہا ہے اسے لے کرغم اورغصہ دیکھنےکو مل رہا ہے۔ انہوں نےکہا کہ ہر دن معصوم بچوں کا قتل عام کیا جا رہا ہے۔ شام کی اس حالت کے لئے وہاں کی حکومت ذمہ دار ہے۔


      وہیں، شام میں حکمرانوں کی جانب سے رہائشی علاقوں میں بمباری کئے جانے اور اس میں مرنے اور زخمی ہونے والے ہزاروں مظلوموں اور معصوم بچوں پر ہو رہے ظلم  کے خلاف  کانپور میں بھی محمدی یوتھ گروپ کی جانب سے ایک مظاہرہ کیا گیا۔ اس میں بچوں اور نوجوانوں نے شرکت کی اور دہشت گردی اور اسد حکومت کے خلاف نعرے بازی کی ۔ ساتھ ہی ہندوستان کی حکومت سے مطالبہ کیا  کہ وہ اس معاملے میں دخل دے۔


      First published: