ہوم » نیوز » مغربی ہندوستان

چین میں انسانیت سوز مظالم کے خلاف ممبئی میں رضا اکیڈمی کا زبردست احتجاج 

عالمی تنظیم رضا اکیڈمی نے چین کے مظالم کے خلاف ہمیشہ آواز بلند کر کے عالمی دنیا کو بیدار کرنے کی کوشش کی ہے لیکن اب تک کوئی کارروائی نہیں ہوئی ہے۔ کل چین کے خلاف مینارہ مسجد محمد علی روڈ ممبئی کے سامنے رضا اکیڈمی کے کارکنوں نے زبردست احتجاج درج کرایا۔

  • Share this:
چین میں انسانیت سوز مظالم کے خلاف ممبئی میں رضا اکیڈمی کا زبردست احتجاج 
چین میں انسانیت سوز مظالم کے خلاف ممبئی میں رضا اکیڈمی کا زبردست احتجاج 

ممبئی۔ چین میں صدیوں سے آباد ایغور مسلمانوں پر چین کی منتخبہ حکومت کے ذریعے مظالم ڈھائے جا رہے ہیں۔ یہاں تک کہ ان کے مذہبی حقوق کو بھی مسلسل پامال کیا جا رہا ہےجس پر اقوام متحدہ سے لے کر پوری عالمی برادری خاموش ہے۔ چینی مسلمانوں پر دن بہ دن مظالم کے واقعات سو شل میڈیا سے لے کر دیگر ممالک کے چینل بھی دکھاتے ہیں لیکن اس ظالم حکومت کے خلاف آج تک کسی نے بھی عملی اقدامات کی کوشش نہیں کی ہے جس کو لے کر پوری دنیا کے مسلمان تشویش میں مبتلا ہیں۔


اس سلسلے میں عالمی تنظیم رضا اکیڈمی نے چین کے مظالم کے خلاف ہمیشہ آواز بلند کر کے عالمی دنیا کو بیدار کرنے کی کوشش کی ہے لیکن اب تک کوئی کارروائی نہیں ہوئی ہے۔ کل چین کے خلاف مینارہ مسجد محمد علی روڈ ممبئی کے سامنے رضا اکیڈمی کے کارکنوں نے زبردست احتجاج درج کرایا۔ ہاتھوں میں پلے کارڈ تھے جس میں چین مردہ باد ،مسلمانوں کو مذہبی آزادی دو جیسے نعرے درج تھے۔ ساتھ ہی شرکاء احتجاج نے بھی چائنا کے خلاف  خوب نعرے بازی کی۔ مذکورہ احتجاج سے خطاب کرتے ہوئے مذکورہ تنظیم کے چئیرمین قائد ملت الحاج محمد سعید نوری نے کہا کہ چائنا سے مسلسل مسلمانوں پر تشدد کی خبریں آرہی ہیں ان کے مذہبی رسومات کو روکا جا رہا ہے یہاں تک کہ قرآن پاک کی تلاوت،نماز پر پابندی ،نومولود بچوں کا نام محمد رکھنے پر حکومتی سطح پر پابندی عائد ہے بلکہ وہاں کے مسلمانوں کو حرام اشیاء کھانے پر مجبور کیا جا رہاہے۔ یہ جہاں ایک طرف مذہبی استحصال ہے وہیں عالمی قوانین کی خلاف ورزی بھی ہے لہذا، اقوام متحدہ کو چاہیئے کہ وہ چائنا کے مسلمانوں کے حقوق پر فوری طور پر ہنگامی اجلاس طلب کرکے ایک قرار داد پیش کرے تاکہ چینی  مسلمانوں کو ان کے مذہبی عبادات کی مکمل آزادی حاصل ہو ۔


نوری صاحب نے مزید کہا کہ جرمن وزارت خارجہ کی رپورٹ کے مطابق ۲۰۱۶ء؍ کے بعد سے چینی  مسلمان خاص کر ایغور مسلمانوں پر تشدد کے واقعات میں اضافہ ہوا ہے۔ سروے کے مطابق ۱۰؍ لاکھ سے زائد مسلمان آج بھی جیلوں میں قید ہیں جن پر مظالم کے ذریعے جبراً تبدیلی مذھب کیلئے دباؤ ڈالا جاتاہے، عورتوں کا جنسی استحصال کیا جا رہا ہے۔ نئی نسل کو ایک پلاننگ کی تحت کمیونسٹ بنانے کی مذموم کوشش کی جارہی ہے جس پر پوری دنیا کو آواز اٹھانے کی ضرورت ہے۔


ورلڈ جنرل سیکریٹری نوری نے او آئی سی تنظیم کی خاموشی پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ چینی حکومت کے خلاف آج تک اس تنظیم نے کوئی آواز بلند نہیں کی ہے لہذا ایسی تنظیم کو ختم کرکے دوسری ایسی تنظیم تشکیل دی جائے جو مسلمانوں کے حقوق پر کام کر سکے۔ مولانا محمود عالم رشیدی صاحب نے کہا کہ چین ایک طرف اپنے پڑوسی ملکوں کی زمینوں کو غصب کر رہا ہے یہاں تک کہ آئے دن ہمارے ملک کیلئے خطرہ بنا ہوا ہے لہذا حکومت ہند سے ہم پرزور مطالبہ کرتے ہیں کہ وہ وہاں آباد چینی مسلمانوں کے حقوق کی آواز اقوام متحدہ میں بلند کرے اور یہ قرار دارخود پیش کرے کہ چائنا مسلسل اپنے ملک کی صدیوں سے آباد مسلمانوں کی حقوق کو سلب کر رہا ہے وہیں وہ ہر دن پڑوسی ملکوں کے لیے خطرہ بنتا جا رہا ہے لہذا اس پر روک لگائی جائے۔

مولانا ولی اللہ شریفی صاحب نے کہا کہ چین ظلم و تشدد کے ذریعے عالمی قوانین کی مسلسل خلاف ورزی کر رہا ہے۔ وہاں کے مسلمانوں کا مذہبی استحصال کر رہا ہے مگر کوئی بھی ملک چائنا کے خلاف بولنے کو تیار نہیں آخر ایسا کیوں ہے۔ کیا وہ سپر پاور بننے کی دوڑمیں ہے؟ ہم چاہتے ہیں کہ جتنے بھی ملک ہیں سب باہمی اتفاق رائے سے چائنا کو سبق سکھائیں اور وہاں کے آباد مسلمانوں کے حقوق دلانے کی کوشش کریں۔

 
Published by: Nadeem Ahmad
First published: Nov 13, 2020 11:26 AM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading