ہوم » نیوز » مغربی ہندوستان

دیویندر فڑنویس سے ملاقات کے بعد سنجے راوت نے کہا : ہم دشمن نہیں ، وزیر اعظم مودی ہمارے بھی لیڈر ہیں

دیویندر فڑنویس (Devendra Fadnavis) سے ملاقات کے بعد سنجے راوت (Sanjay Raut) نے کہا کہ فڑنویس ہمارے دشمن نہیں ہیں ، ہم نے ان کے ساتھ کام کیا ہے ۔

  • Share this:
دیویندر فڑنویس سے ملاقات کے بعد سنجے راوت نے کہا : ہم دشمن نہیں ، وزیر اعظم مودی ہمارے بھی لیڈر ہیں
دیویندر فڑنویس سے ملاقات کے بعد سنجے راوت نے کہا : ہم دشمن نہیں ، وزیر اعظم مودی ہمارے بھی لیڈر ہیں

مہاراشٹر کے سابق وزیر اعلی دیویندر فڑنویس اور شیوسینا ممبر پارلیمنٹ سنجے راوت کے درمیان ہفتہ کو ہوئی ملاقات کے بعد مہاراشٹر کے سیاسی گلیاروں میں بحث چھڑ گئی ہے ۔ وہیں اب سنجے راوت نے فڑنویس کے ساتھ ہوئی ان کی ملاقات کو لے کر اپنا رد عمل ظاہر کیا ہے ۔ ان کا کہنا ہے کہ یہ پہلے سے طے ملاقات تھی ۔ شیوسینا کے ترجمان سامنا کو لے کر انہوں نے فڑنویس سے ملاقات کی تھی ۔ اس کے بعد انہوں نے کہا کہ نریندر مودی وزیر اعظم ہیں ، ایسے میں وہ ادھو ٹھاکرے کے لیڈر ہیں ۔ وہ ہمارے بھی لیڈر ہیں ۔


دیویندر فڑنویس سے ملاقات کو لے کر اپنا رد عمل ظاہر کرتے ہوئے سنجے راوت نے کہا کہ فڑنویس ہمارے دشمن نہیں ہیں ، ہم نے ان کے ساتھ کام کیا ہے ۔ ان سے میری ملاقات سامنا کو لے کر ہوئی ۔ اس ملاقات کے بارے میں ادھو ٹھاکرے کو جانکاری ہے ۔ ہمارے نظریات میں فرق ہے ، لیکن ہم ایک دوسرے کے دشمن نہیں ہیں ۔ این ڈی اے سے اکالی دل کے الگ ہونے پر سنجے راوت نے کہا کہ یہ بی جے پی کیلئے ایک بڑا جھٹکا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ شیو سینا اور اکالی دل کے بغیر این ڈی اے نامکمل ہے ۔ یہ دونوں اس کے مضبوط ستون تھے ۔


سنجے راوت نے کہا کہ شیو سینا کو مجبوری میں این ڈی ا سے باہر نکلنا پڑا تھا ۔ اب اکالی دل نے بھی ایسا ہی کیا ۔ این ڈی اے کو اب نئے ساتھی مل گئے ہیں ۔ میں انہیں نیک خواہشات پیش کرتا ہوں ۔ جس اتحاد میں شیو سینا اور اکالی دل نہیں ہے ، میں اس کو این ڈی اے نہیں مانتا ۔ خیال رہے کہ سنجے راوت نے ایک ہوٹل میں فڑیونس سے ملاقات کی تھی ۔ راوت گزشتہ سال اسمبلی انتخابات کے بعد اقتدار کی تقسیم کے فارمولہ کو لے کر بی جے پی مخالف رخ کیلئے سرخیوں میں رہے تھے ۔


ادھر مہاراشٹر بی جے پی کے ترجمان کیشو اپادھیائے نے کہا کہ اس ملاقات کا کوئی سیاسی معنی نہیں ہے ۔ شیوسینا اور بی جے پی نے گزشتہ سال اسمبلی الیکشن مل کر لڑا تھا ، لیکن الیکشن کے بعد اقتدار میں شراکت داری کو لے کر ادھو ٹھاکرے کی زیر قیادت پارٹی نے بی جے پی کا ساتھ چھوڑ دیا تھا اور این سی پی و کانگریس کے ساتھ مل کر مہاراشٹر میں حکومت بنالی تھی ۔
Published by: Imtiyaz Saqibe
First published: Sep 27, 2020 01:33 PM IST
corona virus btn
corona virus btn
Loading