ہوم » نیوز » مغربی ہندوستان

حج و عمرہ پر سروس ٹیکس: عازمین کو دینی پڑ رہی بارہ تیرہ ہزار روپئے کی زائد رقم

احمد آباد۔ حکومت ہر شعبے سے اور ہر شخص سے سروس ٹیکس وصول کرنے کے لئے نئے نئے طریقے وضع کرکے ان پر تھوپ رہی ہے اور اب تو مذہبی امور میں بھی اسے لاگو کرنے کی کو شش کی جا رہی ہے ۔

  • ETV
  • Last Updated: May 18, 2016 03:23 PM IST
  • Share this:
  • author image
    NEWS18-Urdu
حج و عمرہ پر سروس ٹیکس: عازمین کو دینی پڑ رہی بارہ تیرہ ہزار روپئے کی زائد رقم
احمد آباد۔ حکومت ہر شعبے سے اور ہر شخص سے سروس ٹیکس وصول کرنے کے لئے نئے نئے طریقے وضع کرکے ان پر تھوپ رہی ہے اور اب تو مذہبی امور میں بھی اسے لاگو کرنے کی کو شش کی جا رہی ہے ۔

احمد آباد۔ حکومت  ہر شعبے سے اور ہر شخص سے سروس ٹیکس وصول کرنے کے لئے  نئے نئے طریقے وضع کرکے ان پر تھوپ رہی ہے اور اب تو مذہبی امور میں بھی اسے لاگو کرنے کی کو شش کی جا رہی ہے ۔


اسی کی ایک کڑی پرائیویٹ  ٹور آپریٹرس  سے حج  و  عمرہ کے لئے  ٹیکس سروس وصول  کیا جانا ہے ۔ اب ٹور آپریٹرس اس ٹیکس کو عازمین سے وصول کر رہے ہیں۔


 ٹیکس سروس وصولی معاملے پر احمدآباد میں کاکی والا ٹورس اینڈ ٹریولس کے مالک وسیم احمد کاکی والا نے سخت ناراضگی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ  حج کمیٹی پر یہ ٹیکس نہیں لگایا گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ وہاں پر بھی حج تو ایک ہی جیسا ہوتا ہے چاہےعازمین حج کمیٹی سے جائیں یا وہ ٹور آپریٹروں کی معرفت جائیں۔


waseem ahmad, kakiwala


انہوں نے کہا کہ اس لئے سروس ٹیکس لگایا جانا اچھی بات نہیں ہے۔ وسیم احمد نے کہا کہ اس کی رقم حاجیوں کی جیب سے جاتی ہے اورانہیں پیکیج کی رقم میں بارہ تیرہ ہزار روپئے مزید دینے پڑتے ہیں جو حاجی پر ایک  بوجھ ہے ۔ اس لئے گذارش ہے حکومت سے کہ  سروس ٹیکس کے فیصلہ کو واپس لیا جائے ۔

First published: May 18, 2016 03:23 PM IST