உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    کرناٹک اسمبلی الیکشن کے بعد نمبر ون پارٹی بنے گی کانگریس: شیوسینا

    ممبئی: کرناٹک میں  بی جے پی اور کناگریس کی انتخابی تشہیر جاری ہے۔ اس درمیان شیوسینا ممبرپارلیمنٹ سنجے راوت کا کہنا ہے کہ کرناٹک میں کانگریس نمبرایک پارٹی کے طور پر ابھرے گی۔

    ممبئی: کرناٹک میں بی جے پی اور کناگریس کی انتخابی تشہیر جاری ہے۔ اس درمیان شیوسینا ممبرپارلیمنٹ سنجے راوت کا کہنا ہے کہ کرناٹک میں کانگریس نمبرایک پارٹی کے طور پر ابھرے گی۔

    ممبئی: کرناٹک میں بی جے پی اور کناگریس کی انتخابی تشہیر جاری ہے۔ اس درمیان شیوسینا ممبرپارلیمنٹ سنجے راوت کا کہنا ہے کہ کرناٹک میں کانگریس نمبرایک پارٹی کے طور پر ابھرے گی۔

    • Share this:
      میسور: کرناٹک میں  بی جے پی اور کناگریس کی انتخابی تشہیر جاری ہے۔ اس درمیان شیوسینا ممبرپارلیمنٹ سنجے راوت کا کہنا ہے کہ کرناٹک میں کانگریس "نمبرایک پارٹی" کے طور پر ابھرے گی۔ انہوں نے ریاست کی انتخابی تشہیرمیں پوری مرکزی انتظامیہ کو جھونکنے کا الزام لگاتے ہوئے بی جے پی کی تنقید بھی کی۔

      سنجے راوت نے کہاکہ مہاراشٹر میں آئندہ قانون ساز کونسل میں بی جے پی ساتھ سمجھوتے کا مطلب یہ نہیں ہے کہ شیو سینا 2019 میں ہونے والے لوک سبھا اور ریاستی اسمبلی الیکشن میں اس کے ساتھ اتحاد کرے گی۔

      راوت نے کہاکہ جہاں بھی اسمبلی الیکشن ہوتے ہیں، وہاں مرکز کا پورا کنبہ اور بی جے پی کے زیراقتدار ریاستوں کے وزرائے اعلیٰ تشہیر کے لئے پہنچ جاتے ہیں۔ ایسے میں ملک اور ریاست کے انتظامی امور کو درمیان میں چھوڑ دیاجاتا ہے۔ ملک کی عوام ان تمام چیزوں کو دیکھ رہی ہے۔

      انہوں نے اترپردیش کے وزیراعلیٰ یوگی آدتیہ ناتھ کی سخت تنقید کرتے ہوئے کہاکہ یوگی نے کتنی سنجیدگی سے اپنے فرض کو لیاہے، یہ سب نظر آرہا ہے۔ ایک طرف ان کی پوری ریاست دھول اور زبردست آندھی کا قہر جھیل رہی ہے۔ وہیں دوسری طرف وزیراعلیٰ کرناٹک میں انتخابی تشہیر کرتے نظرآرہے ہیں۔

      شیو سینا لیڈر نے سوال کیا کہ کیا بی جے پی مرکزی قیاست کو ریاست کے اپنے ہی لوگوں پر بھروسہ نہیں ہے؟ وزیراعظم مودی کو درجنوں انتخابی ریلیوں کو خطاب کرنے کی کیا ضرورت ہے، جبکہ دہلی میں انتظامیہ کے لئے ان کی ضرورت ہے۔

      واضح رہے کہ شیو سینا مہاراشٹر اور مرکز کی حکومت میں بی جے پی کی شراکت دار ہے۔ اس کے باوجود وہ کئی مدعو ں کو لے کر بی جے پی کے خلاف کھڑی رہی ہے۔ شیوسینالیڈر نے امید کااظہار کرتے ہوئے کہا کہ 2019 میں مہاراشٹر اسمبلی الیکشن میں ان کی پارٹی اکثریت حاصل کرے گی اور اگلا وزیراعلیٰ ان کی پارٹی کا ہی ہوگا۔

       

       
      First published: