ہوم » نیوز » مغربی ہندوستان

حاملہ مسلم دوشیزہ کو انصاف دلانے کیلئے آزاد میدان میں دھرنا

شادی کا جھانسہ دے کرسات ماہ کی حاملہ مسلم دوشیزہ کو دھوکہ دینے کے خلاف آج ممبئی کے آزاد میدان میں دھرنا دیا گیا

  • UNI
  • Last Updated: Jan 28, 2019 02:47 PM IST
  • Share this:
  • author image
    NEWS18-Urdu
حاملہ مسلم دوشیزہ کو انصاف دلانے کیلئے آزاد میدان میں دھرنا
مسلم خواتین کی علامتی تصویر

شادی کا جھانسہ دے کرسات ماہ کی حاملہ مسلم دوشیزہ کو دھوکہ دینے کے خلاف آج یہاں مولانا آزاد وچار منچ نامی غیر سرکاری تنظیم نے ممبئی کے آزاد میدان میں دھرنا دیا اور مطالبہ کیا کہ خاطی ملزم کو فوری طور پر گرفتار کیا جائے اور اس کے خلاف دھوکہ دہی اور عصمت دری کا معاملہ درج کیا جائے ۔


آزاد میدان میں ہونے والے اس دھرنے میں متاثرہ دوشیزہ بھی شامل تھی جنہوں نے بتایا کہ وہ ایک کال سینٹر میں ملازم تھی اور دوران ملازمت اس کی ایک نوجوان سے دوستی ہو گئی جو پیار میں تبدیل ہو گئی اسی درمیان ملزم عاقف خان سے جسمانی تعلقات قائم ہو گئے اور اس نے اس سے شادی کا وعدہ بھی کیا ۔ متاثرہ دوشیزہ نے بتایا کہ شادی کا وعدہ کرنے کے بعد جب وہ سات ماہ کی حاملہ ہوئی تو ملزم اور اس کی والدہ نے اسے اپنانے سے انکار کر دیا اور اس پر یہ دباؤ ڈالنے لگے کہ وہ 7ماہ کا حمل گرا دے لیکن لڑکی اس بات کیلئے تیار نہیں تھی ۔

متاثرہ لڑکی نے بتایا کہ اس سلسلے میں اس نے مقامی کاشی میرا پولیس اسٹیشن میں ملزم اور اس کی والدہ کے خلاف شکایت درج کرائی نیز پولیس نے کافی چکر لگانے کے بعد ایف آئی آر تو درج کر لیا لیکن نہ ہی ملزمین کو گرفتار کیا اور نہ ہی ان کے خلاف کوئی کارروائی کی ۔ خاتون نے بتایا کہ ایف آئی درج ہونے کے بعد الٹا ملزم اسے طرح طرح سے دھمکی دینے لگا اور جب اس نے اس کی بھی شکایت پولیس میں کی تو پولیس افسران نے اسے سرے سے یہ کہہ کر نظر انداز کر دیا کہ ابھی تحقیقات جاری ہے۔

متاثرہ خاتون کو انصاف دلانے کیلئے تاریخی آزاد میدان میں دھرنے پر بیٹھے رکن پارلیمنٹ حسین دلوائی ، ممبئی کانگریس اقلیتی شعبہ کے صدر و میونسپل کونسلر حاجی ببو خان ،مولانا آزاد وچار منچ ممبئی کے صدر صادق لطیف خان ، جنرل سکریٹری یوسف انصاری ، کانگریس ضلع صدر قیوم تمبولی کے علاوہ سیکڑوں کی تعداد میں منچ سے جڑے لوگوں نےپولیس سے انصاف کا مطالبہ کیا ہے ۔


 
First published: Jan 28, 2019 02:22 PM IST