ہوم » نیوز » مغربی ہندوستان

کرناٹک کے جڑواں شہر میں سنی دارالقضاء اور شرعی کونسل کا قیام

ہبلی میں قائم ہوئے سنی دارالقضاء اور شرعی کونسل کا بنیادی مقصد مسلمانوں کے نجی مسائل کو حل کرنا، شرعی طور پر رہنمائی فراہم کرنا ہے ۔ ساتھ ہی ساتھ شرعی قوانین کے متعلق بیداری پیدا کرنا ہے ۔

  • Share this:
کرناٹک کے جڑواں شہر میں سنی دارالقضاء اور شرعی کونسل کا قیام
کرناٹک کے جڑواں شہر میں سنی دارالقضاء اور شرعی کونسل کا قیام

کرناٹک کے جڑواں شہر ہبلی ۔ دھارواڈ میں سنی دارالقضا اور شرعی کونسل کا قیام عمل میں آیا ہے ۔ پیر سید مقبول شاہ کشمیری رحمت اللہ علیہ کے عرس مبارک کے موقع پر دھارواڈ ضلع کے نمائندہ علما کرام نے سنی دارالقضاء اور شرعی کونسل کے قیام کا اعلان کیا ۔ اس سلسلے میں مولانا مفتی قاضی ابراہیم مقبولی مصباحی کی صدارت میں ایک اہم اجلاس منعقد ہوا ۔ اس اجلاس میں تمام علمائے اہل سنت کی تائید سے ہبلی کے شہر قاضی مولانا ظہیر الدین کی حمایت سے استاد العلما مولانا مفتی نثار احمد مصباحی کو سنی دارالقضاء کا  پہلا مفتی صدر منتخب کیا گیا ۔


واضح رہے کہ دھارواڈ اور ہبلی ریاست کرناٹک کے جڑواں شہر ہیں ۔ تعلیمی، تجارتی، سماجی اور سیاسی طور پر ریاست میں کافی اہم مقام رکھتے ہیں ۔ ہبلی میں منعقدہ اجلاس میں علما کرام نے کہا کہ دھارواڈ ضلع میں مسلمانوں کی کثیر تعداد آباد ہے ۔ بزرگان دین کی اس سرزمین میں مساجد ، درگاہیں ، خانقاہیں بڑی تعداد میں موجود ہیں۔ اس پورے ضلع میں سنی دارالقضا کی ضرورت شدت کے ساتھ محسوس کی جارہی تھی ۔ ضلع کے نمائندہ علما کرام، ملی تنظیموں، مساجد کے متولیوں کی کوششوں سے دارالقضاء اور شرعی کونسل کا  قیام عمل میں آیا ہے ۔ اس دارالقضاء اور شرعی کونسل کا مرکزی دفتر ہبلی شہر میں ہوگا ۔ پورے ضلع کے مسلمان ان شرعی اداروں کی خدمات سے استفادہ کرسکتے ہیں ۔




ہبلی کے شہر قاضی مولانا ظہیر الدین نے مسلمانوں سے اپیل کی کہ وہ اپنے نجی اور عائلی مسائل کے حل کیلئے دارالقضاء سے رجوع ہوں ۔ موجودہ حالات میں مسلمان نکاح ، طلاق ، فسخ نکاح ، وراثت اور دیگر مسائل کے حل کیلئے کورٹ ، کچہری کے چکر کاٹتے رہتے ہیں ۔ یہاں مسائل کے حل اور انصاف کیلئے برسوں انتظار کرنا پڑتا ہے ۔ ملک کا آئین دارالقضاء کے ذریعہ عائلی مسائل کے حل کی اجازت دیتا ہے ۔ لہذا مسلمان اپنے مسائل کو قرآن اور شریعت کے مطابق حل کرنے کیلئے پہل کریں ۔

مولانا ظہیر الدین قاضی نے کہا کہ دھارواڈ ضلع میں بہت سالوں قبل ہی اس دارالقضاء کا قیام ہونا تھا۔ لیکن اب یہ کمی پوری ہوچکی ہے، اور ضلع کے تمام علماء اہل سنت اس دارالقضاء کی تائید کرتے ہیں ۔ تورگل کے سرقاضی مولانا سید احمد رضا نے کہا کہ کئی سارے لوگوں کی جانب سے بار بار دارالقضاء کے قیام کی مانگ کی جاتی رہی ہے ۔ اب یہ کام انجام پایا ہے ۔ پورے دھارواڈ ضلع کے مسلمانوں کیلئے یہ ایک خوش آئند بات ہے ۔ مولانا سید نثار احمد قادری نے کہا کہ اس دارالقضا کی سب سے اہم بات یہ ہے کہ استاد العلما مولانا نثار احمد مصباحی اس کے صدر مفتی منتخب ہوئے ہیں ۔ انہوں نے 30 سال تک مدنی میاں عربک کالج میں درس و تدریس کی خدمات انجام دی ہیں۔  علماء کی ایک بڑی تعداد کو ان کا شاگرد ہونے کا شرف حاصل ہے۔

ہبلی میں قائم ہوئے سنی دارالقضاء اور شرعی کونسل کا بنیادی مقصد مسلمانوں کے نجی مسائل کو حل کرنا، شرعی طور پر رہنمائی فراہم کرنا ہے ۔ ساتھ ہی ساتھ شرعی قوانین کے متعلق بیداری پیدا کرنا ہے ۔ غلط فہمیوں کو دور کرنا ،  معاملات زندگی میں شرعی قوانین کی اہمیت ، حکمت ، فضیلت سے عوام کو واقف کروانا بھی ان اداروں کا مقصد ہے ۔ شریعت اور مسلم پرسنل لا میں ہونے والی مداخلت کو روکنے کیلئے بھی سنی دارالقضاء اور شرعی کونسل کے ذریعہ اقدامات کئے جائیں گے۔
Published by: Imtiyaz Saqibe
First published: Oct 06, 2020 11:43 PM IST