ہوم » نیوز » مغربی ہندوستان

گجرات میں 10 سال سے کمرے میں بند تین بھائی بہن کو بچایا گیا ، ہوگئی تھی ایسی حالت

گجرات کے راجکوٹ میں تین بھائی بہنوں کے خود کو تقریبا 10 سالوں تک کمرے میں بند رکھنے کا دل دہلادینے والا معاملہ سامنے آیا ہے ۔

  • Share this:
گجرات میں 10 سال سے کمرے میں بند تین بھائی بہن کو بچایا گیا ، ہوگئی تھی ایسی حالت
گجرات میں 10 سال سے کمرے میں بند تین بھائی بہن کو بچایا گیا ، ہوگئی تھی ایسی حالت ۔ علامتی تصویر ۔

احمد آباد : گجرات کے راجکوٹ میں تین بھائی بہنوں کے خود کو تقریبا 10 سالوں تک کمرے میں بند رکھنے کا دل دہلادینے والا معاملہ سامنے آیا ہے ۔ ایک غیر سرکاری تنظیم ( این جی او) نے تینوں کو ان کے والد کی مدد سے بچایا ہے ۔ تینوں کی عمر 30 سے 42 سال کے درمیان ہے ۔


بے گھروں کی فلاح و بہبود کیلئے کام کرنے والی غیرسرکاری تنظیم ساتھی سیوا گروپ کی افسر جالپا پٹیل نے بتایا کہ جب اتوار شام کو ان کی تنظیم کے اراکین نے کمرے کا دروازہ توڑا تو انہوں نے پایا کہ اس میں بالکل بھی روشنی نہیں تھی اور اس میں سے باسی کھانے اور انسانی غلاظت کی بدبو آرہی تھی ۔ نیز کمرے میں چاروں جانب اخبارات بکھرے پڑے تھے ۔


پٹیل نے کہا کہ بھائیوں امریش اور بھاویش اور ان کی بہن میگھنا نے تقریبا 10 سال پہلے خود کو کمرے میں بند کرلیا تھا ۔ ان کے والد نے یہ جانکاری دی ۔ انہوں نے کہا کہ تینوں کی حالت انتہائی خراب تھی اور ان کے بال اور داڑھی کسی بھیک مانگنے والے کی طرح بڑھے ہوئے تھے ۔ وہ اتنے کمزور تھے کہ کھڑے بھی نہیں ہوپارہے تھے ۔


پٹیل کے مطابق تینوں کے والد نے بتایا کہ تقریبا 10 سال پہلے ماں کا انتقال ہونے کے بعد سے وہ اس طرح کی حالت میں رہ رہے تھے ۔ انہوں نے کہا کہ ہوسکتا ہے کہ ان کی حالت وہی ہو ( ذہنی طور پر بیمار) ، جو ان کے والد بتا رہے ہیں ، لیکن انہیں علاج کی فوری اشد ضرورت ہے ۔ این جی او کے اراکین نے تینوں کو باہر نکالا ، انہیں صاف ستھرا کیا اور ان کے بال کاٹے اور داڑھی بنائی ۔

پٹیل نے بتایا کہ ان کی تنظیم تینوں کو ایسی جگہ پر بھیجنے کا منصوبہ بنارہی ہے ، جہاں انہیں بہتر کھانا اور علاج مل سکے ۔ ان کے والد ایک ریٹائرڈ سرکاری ملازم ہیں ۔ انہوں نے بتایا کہ ان کے بچے تعلیم یافتہ ہیں ۔ تینوں کے والد نے کہا کہ میرا بڑا بیٹا امریش 42 سال کا ہے ۔ اس کے پاس بی اے ، ایل ایل بی کی ڈگری ہے اور وہ وکالت کررہا تھا ۔

انہون نے بتایا کہ میری بیٹی میگھنا ( 39 ) نے نفسیات میں پوسٹ گریجویٹ کی ڈگری حاصل کی ہے ۔ میرے سب سے چھوٹے بیٹے نے اکنامک میں گریجویشن کیا ہے اور وہ ایک اچھا کرکٹر بھی تھا ۔
Published by: Imtiyaz Saqibe
First published: Dec 28, 2020 09:52 PM IST