ہوم » نیوز » مغربی ہندوستان

اڑتا پنجاب تنازع : ہائی کورٹ نے سینسر بورڈ کو پھر لگائی پھٹکار ، کہا : آپ کا کام سرٹیفکیٹ دینا ہے ، سینسر کرنا نہیں

ممبئی : پنجاب میں پھیلے نشے کے نیٹ ورک پر مبنی فلم اڑتا پنجاب پر جاری تنازع کو لے کر جمعہ کو بھی بامبے ہائی کورٹ میں سماعت ہوئی۔

  • Pradesh18
  • Last Updated: Jun 10, 2016 02:10 PM IST
  • Share this:
  • author image
    NEWS18-Urdu
اڑتا پنجاب تنازع : ہائی کورٹ نے سینسر بورڈ کو پھر لگائی پھٹکار ، کہا : آپ کا کام سرٹیفکیٹ دینا ہے ، سینسر کرنا نہیں
ممبئی : پنجاب میں پھیلے نشے کے نیٹ ورک پر مبنی فلم اڑتا پنجاب پر جاری تنازع کو لے کر جمعہ کو بھی بامبے ہائی کورٹ میں سماعت ہوئی۔

ممبئی : پنجاب میں پھیلے نشے کے نیٹ ورک پر مبنی فلم اڑتا پنجاب پر جاری تنازع کو لے کر جمعہ کو بھی بامبے ہائی کورٹ میں سماعت ہوئی۔ ہائی کورٹ نے مرکزی فلم سرٹیفیکیشن بورڈ کی سرزنش کرتے ہوئے واضح طو رپر کہا کہ آپ کا کام سرٹیفکیٹ دینا ہے ، سینسر کرنا نہیں ۔ ہائی کورٹ نے سی بی ایف سی کے وکیل سے کہا کہ کیا آپ جانتے ہیں کہ اس تنازع کی وجہ سے فلم کو بغیر وجہ کی پبلسٹی مل رہی ہے۔

خیال رہے کہ سی بی ایف سی نے فلم اڑتا پنجاب میں فحش الفاظ کے استعمال کا حوالہ دیتے ہوئے فلم کی ریلیز پر پابندی لگا دی ہے، جس کے خلاف فلم سازوں نے عدالت کا دروازہ کھٹکھٹایا ہے۔ سینسر بورڈ نے فلم کے نام اور متعدد مناظر پر اعتراض کرتے ہوئے انہیں ہٹانے کے لیے کہا ہے، جس سے فلم کے پروڈیوسر اور ڈائریکٹر ناراض ہیں۔

سینسر بورڈ کے وکیل کے اعتراض پر ہائی کورٹ نے کہا کہ فلمیں صرف ایسے مواد سے نہیں چلتیں، ان میں ایک کہانی بھی ہونی چاہئے۔ آپ کیوں پریشان ہیں؟ کورٹ نے کہا کہ ملٹی پلیکس کے ناظرین کافی بالغ النظر ہیں، خواہ یہ ٹی وی ہو یا فلم، لوگوں کو یہ دیکھنے دیجئے ۔ سب کی اپنی چوائس ہے۔ ہائی کورٹ نے یہ بھی کہا کہ اگر فلم سے سارے سین ہی کاٹ دیے جائیں گے تو فلم کا کیا ہوگا؟

واضح رہے کہ سی بی ایف سی اس فلم کے نام سے پنجاب لفظ کے ساتھ ساتھ 89 مناظر کو ہٹانا چاہتا ہے، جبکہ فلم ساز اس کے حق میں نہیں ہیں۔ فلم میں شاہد کپور، عالیہ بھٹ، کرینہ کپور خان اور دلجيت جیسے اداکار ہیں۔ اس میں پنجاب میں نشے کے مسئلے کو اجاگر کیا گیا ہے کہ کس طرح نوجوان اس کی زد میں آتے ہیں۔

First published: Jun 10, 2016 02:10 PM IST