உங்கள் மாவட்டத்தைத் தேர்வுசெய்க

    RBI MPC Meeting: جانئے کیا ہوتا ہے ریپو ریٹ اور ریورس ریپو ریٹ، مہنگائی پر کیا ہوتا ہے ان کا اثر

    آج سے ریزرو بینک آف انڈیا کی اہم مانیٹری پالیسی کمیٹی کی میٹنگ شروع ہوگئی ہے۔ 10 فروری کو گورنر شکتی کانت داس کی طرف سے پالیسی کمیٹی کی میٹنگ میں لئے گئے فیصلے کے بارے میں جانکاری دی جائے گی۔ اس میٹنگ میں سب کی نگاہیں ریپو ریٹ اور ریورس ریپو ریٹ پر ہیں۔

    آج سے ریزرو بینک آف انڈیا کی اہم مانیٹری پالیسی کمیٹی کی میٹنگ شروع ہوگئی ہے۔ 10 فروری کو گورنر شکتی کانت داس کی طرف سے پالیسی کمیٹی کی میٹنگ میں لئے گئے فیصلے کے بارے میں جانکاری دی جائے گی۔ اس میٹنگ میں سب کی نگاہیں ریپو ریٹ اور ریورس ریپو ریٹ پر ہیں۔

    آج سے ریزرو بینک آف انڈیا کی اہم مانیٹری پالیسی کمیٹی کی میٹنگ شروع ہوگئی ہے۔ 10 فروری کو گورنر شکتی کانت داس کی طرف سے پالیسی کمیٹی کی میٹنگ میں لئے گئے فیصلے کے بارے میں جانکاری دی جائے گی۔ اس میٹنگ میں سب کی نگاہیں ریپو ریٹ اور ریورس ریپو ریٹ پر ہیں۔

    • Share this:
      آج سے ریزرو بینک آف انڈیا کی اہم مانیٹری پالیسی کمیٹی کی میٹنگ شروع ہوگئی ہے۔ 10 فروری کو گورنر شکتی کانت داس کی طرف سے پالیسی کمیٹی کی میٹنگ میں لئے گئے فیصلے کے بارے میں جانکاری دی جائے گی۔ اس میٹنگ میں سب کی نگاہیں ریپو ریٹ اور ریورس ریپو ریٹ پر ہیں۔ پہلے جانتے ہیں کہ یہ دونوں کیا ہوتے ہیں اور ان کا فائنینشیل سسٹم پر کس طرح کا اثر ہوتا ہے۔ ریپو ریٹ وہ انٹرسٹ ریٹ ہوتا ہے، جس شرح پر کمرشیل بینک ریزرو بینک آف انڈیا سے قرض لیتے ہیں۔ ریورس ریپو ریٹ وہ انٹریسٹ ریٹ ہوتا ہے، جس شرح پر ریزرو بینک، بینکوں سے پیسہ واپس لیتا ہے۔ واضح رہے کہ ریپو ریٹ پر بینک کو لون تو ملتا ہے، لیکن اسے سیکورٹیز جمع کرنی ہوتی ہے۔

      ریزرو بینک آف انڈیا ریپو ریٹ اور ریورس ریپو ریٹ کی مدد سے فائنینشیل سسٹم میں لکویڈیٹی کنٹرول کرتا ہے۔ اس کے علاوہ مہنگائی شرح پر لگام کسنے میں بھی مدد ملتی ہے۔ مہنگائی کو دھیان میں رکھتے ہوئے آر بی آئی ریپیو ریٹ کو بڑھانے یا گھٹانے کا فیصلہ کرتا ہے۔ ریپو ریٹ زیادہ ہونے پر بینکوں کو اونچی شرح پر لون ملتا ہے۔ اس کی وجہ سے اونچی شرح پر لون تقسیم بھی کرتے ہیں۔ اگر ریپو ریٹ کم ہوگا تو بینکوں کو سستی شرح پر ریزرو بینک کا قرض ملے گا۔ بدلے میں وہ سستی شرح پر قرض بھی تقسیم کریں گے۔

      لون سستا ہونے سے اقتصادی سرگرمیاں بڑھ جاتی ہیں

      جب انٹرسٹ ریٹ کم ہوجاتا ہے تو اکنامی میں لیکویڈیٹی بڑھ جاتی ہے۔ اس کے سبب لوگوں کے ہاتھوں میں زیادہ پیسے ہوتے ہیں۔ اس سے خریدنے کی صلاحیت بڑھ جاتی ہے اور مانگ بڑھنے کے سبب مہنگائی بڑھ جاتی ہے۔ ایسے میں جب ریزرو بینک کو مہنگائی کنٹرول کرنا ہوتا ہے تو وہ ریپو ریٹ کو بڑھا دیتا ہے۔ اس سے لیکویڈیٹی گھٹ جاتی ہے اور مہنگائی کنٹرول میں آ جاتی ہے۔ کورونا کے سبب اکنامی پر کافی برا اثر ہوا ہے۔ ایسے میں ریزرو بینک نے ریپو ریٹ گھٹاکر لیکویڈیٹی انفیوزن کا کام کیا۔ اس سے اقتصادی سرگرمیوں میں تیزی آئی، جس سے گروتھ کو سپورٹ ملے گا۔

      ایکسیس لیکویڈیٹی کو واپس کھینچتا ہے آر بی آئی

      ریورس ریپو ریٹ کی مدد سے ریزرو بینک آف انڈیا فائننشیل سسٹم سے لیکویڈیٹی کو واپس کھینچتا ہے۔ جب ریزرو بینک کو لگتا ہے کہ سسٹم میں ایکسیس لیکویڈیٹی ہے تو وہ ریورس ریپو ریٹ بڑھاکر اسے بینکوں کی مدد سے واپس کھینچ لیتا ہے۔ جب مہنگائی شرح بڑھ جاتی ہے تو ریورس ریپو ریٹ بڑھاکر ریزرو بینک لیکویڈیٹی کو کم کرتا ہے۔ اس کی مدد سے انفلیشن کم کرنے کی کوشش کی جاتی ہے۔

      ریپو ریٹ، ریورس ریپو سے زیادہ ہوتا ہے

      ریپو ریٹ ہمیشہ ریورس ریپو ریٹ سے زیادہ ہے۔ ریپو ریٹ کی مدد سے انفلیکشن کو کنٹرول کیا جاتا ہے اور فنڈ فلو کو گھٹایا اور بڑھایا جاتا ہے۔ ریورس ریپو ریٹ کی مدد سے کیش فلو کنٹرول کیا جاتا ہے۔
      Published by:Nisar Ahmad
      First published: